Releasing refunds is not wrong, says Shabbar Zaidi

فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) کے سابق چیئرمین شبر زیدی نے کہا ہے کہ ٹیکس ریفنڈز کا اس بات سے کوئی تعلق نہیں کہ ایف بی آر کا چیئرمین کون ہے اور یہ فیلڈ افسر ہینڈل کرتا ہے۔

سے خطاب کر رہے ہیں۔ بزنس ریکارڈرانہوں نے کہا کہ ریفنڈز جاری کرنے میں کوئی حرج نہیں ہے۔

ان کا یہ بیان ان کے ریمارکس کے جواب میں آیا ہے۔ وزیر خزانہ اسحاق ڈار جمعہ کو جس میں انہوں نے کہا: \”زیدی کو تاجروں کے اربوں روپے کے ریفنڈ جاری کرنے پر جیل میں ہونا چاہیے۔\”

اس سے قبل ایک ٹی وی شو میں زیدی نے ڈار کی فنانس ٹیم پر تنقید کی تھی اور انہیں قرضہ پروگرام کی اگلی قسط کے لیے پاکستان اور بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کے درمیان تعطل کا ذمہ دار ٹھہرایا تھا۔

ٹیکس ماہرین اور تاجروں نے بھی بتایا بزنس ریکارڈر ٹیکس کی واپسی وہ رقم ہے جو کاروباری حضرات اپنے ریٹرن سے زیادہ جمع کراتے ہیں \”لہذا وہ اسے جلد یا بدیر وصول کرنے کے حقدار ہیں۔\”

کراچی ٹیکس بار ایسوسی ایشن (KTBA) کے سابق صدر ذیشان مرچنٹ نے کہا، \”کاروباروں کو ٹیکس ریفنڈز کی تقسیم بالکل غلط نہیں ہے۔\” اگر یہ غلط ہے تو ایف بی آر کی پوری پالیسی بک غلط ہے۔

مرچنٹ نے کہا، \”یہ ریفنڈز ہر مرحلے پر اضافی روکے جانے/ادائیگیوں کے نتائج ہیں۔

دریں اثنا، مرچنٹ نے مزید کہا کہ رقم کی واپسی کا دعویٰ ایک تاجر سے شروع ہوتا ہے، جو کمشنر کو رقم کی واپسی کے لیے درخواست دیتا ہے۔ کمشنر فیلڈ آفیسر سے تصدیق کے لیے پوچھتا ہے جس کے بعد ایک آرڈر جاری کیا جاتا ہے اور ایف بی آر کے مرکزی دفتر سے تاجر کو رقم کی واپسی اور تقسیم کی جاتی ہے اور تفصیلات ایف بی آر کے مرکزی ڈیٹا بیس میں درست طریقے سے درج کی جاتی ہیں۔

پاکستان اپیرل فورم کے چیئرمین جاوید بلوانی نے کہا کہ ٹیکس ریفنڈز جلد از جلد جاری کیے جائیں بصورت دیگر کاروبار کو لیکویڈیٹی کے مسائل اور کاروبار کرنے کی لاگت میں اضافے کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ کاروبار قرض لے کر اپنے لیکویڈیٹی مسائل کو حل کرتے ہیں، جس سے مالیاتی لاگت میں اضافہ ہوتا ہے۔



>Source link>

>>Join our Facebook page From top right corner. <<

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *