Pakistan court issues arrest warrant for ex-PM Imran Khan

پاکستان کی ایک عدالت نے سابق وزیر اعظم عمران خان کے وارنٹ گرفتاری جاری کیے ہیں کیونکہ سابق کرکٹ اسٹار نے اپنے حامیوں سے مسلسل سیاسی بحران کے درمیان احتجاج جاری رکھنے کی اپیل کی تھی۔

دارالحکومت اسلام آباد کی عدالت نے سابق وزیر اعظم کی گرفتاری کا حکم دیتے ہوئے کہا کہ خان نے سرکاری تحائف فروخت کرنے اور اپنے اثاثے چھپانے کے الزام میں سماعت کو چھوڑ دیا ہے۔

جج ظفر اقبال کا یہ حکم پاکستان میں سیاسی ڈرامے کے ایک ایسے دن آیا جب منگل کو تین دیگر عدالتوں نے خان کو دہشت گردی، حریف سیاستدان کے خلاف قتل کی کوشش اور بدعنوانی کے الزامات سے متعلق الگ الگ الزامات میں گرفتاری سے استثنیٰ دیا تھا۔

سخت سیکیورٹی اور ہزاروں حامیوں نے 70 سالہ خان کا استقبال کیا، جب وہ نومبر میں ایک احتجاجی ریلی کے دوران ٹانگ میں گولی لگنے کے بعد سے پہلی بار اسلام آباد میں نظر آئے۔

اس حملے میں خان کے حامیوں میں سے ایک ہلاک اور ایک درجن دیگر زخمی ہوئے، جس کی ملک بھر میں مذمت کی گئی۔

خان کئی مہینوں سے مظاہروں کی قیادت کر رہے ہیں جس میں اب وزیر اعظم شہباز شریف کی حکومت کو ہٹانے کے لیے قبل از وقت انتخابات کا مطالبہ کیا جا رہا ہے، جن کا کہنا ہے کہ انتخابات اس سال کے آخر میں ہوں گے جب پارلیمنٹ اپنی پانچ سالہ مدت پوری کرے گی۔

خان کی پاکستان تحریک انصاف پارٹی کے ایک سینئر رہنما، فواد چوہدری نے کہا کہ \”عمران خان اور ہزاروں لوگوں کی سلامتی کے لیے ایک سنگین خطرہ تھا\” جب وہ دارالحکومت کے گرد گھوم رہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ خان کو \”جعلی مقدمات\” میں ایک عدالت سے دوسری عدالت میں پیش کیا جا رہا ہے۔

خان کو اپریل میں قانون سازوں کی جانب سے عدم اعتماد کے ووٹ کے ذریعے وزارت عظمیٰ سے ہٹا دیا گیا تھا۔ انہوں نے الزام لگایا ہے کہ نواز شریف نے ثبوت فراہم کیے بغیر انہیں اقتدار سے ہٹانے کے لیے امریکا کے ساتھ سازش کی تھی۔

خان کے لیے قانونی مسائل بڑھتے جا رہے ہیں۔ اکتوبر میں، ایک الیکشن ٹربیونل نے خان کو بطور وزیر اعظم سرکاری تحائف فروخت کرنے اور اثاثے چھپانے کے الزام میں عوامی عہدہ رکھنے سے نااہل قرار دے دیا۔

پاکستان کی پارلیمنٹ کے ایوان زیریں، قومی اسمبلی میں ان کی نشست چھین لی گئی۔

خان نے اپنی نااہلی کو چیلنج کیا ہے اور غلط کام سے انکار کیا ہے۔

تازہ ترین پیش رفت اسلام آباد پولیس کے ایک دن بعد سامنے آئی ہے جب کہ انہوں نے ایک ریٹائرڈ آرمی جنرل اور خان کے اتحادی امجد شعیب کو قومی اداروں کے خلاف عوام اور سرکاری ملازمین کو اکسانے کے الزام میں گرفتار کیا تھا۔

شعیب کو اس وقت گرفتار کیا گیا جب وہ ہفتے کے روز ایک پاکستانی نیوز چینل پر خان کے حامیوں کو خاص طور پر ملک کے دور دراز علاقوں میں جیلوں میں رکھنے پر حکام پر تنقید کرتے ہوئے نظر آئے۔

دریں اثنا، پاکستان ایک بیل آؤٹ کو بحال کرنے کے لیے بین الاقوامی مالیاتی فنڈ کے ساتھ بات چیت کر رہا ہے جس پر اصل میں 2019 میں دستخط کیے گئے تھے جب خان صاحب اقتدار میں تھے۔

منگل کو موڈیز انویسٹرس سروس نے پاکستان کی ریٹنگ کم کر دی۔ اس اقدام کو ایک انتباہ کے طور پر دیکھا جا رہا ہے کہ پاکستان کے اپنے غیر ملکی قرضوں میں نادہندہ ہونے کا زیادہ امکان ہے۔

موڈیز کا اندازہ پاکستان کی تیزی سے کمزور لیکویڈیٹی اور بیرونی پوزیشن کی وجہ سے ہوا جو پہلے سے طے شدہ خطرات کو Caa3 درجہ بندی کے ساتھ ہم آہنگ سطح تک بڑھاتا ہے۔



>Source link>

>>Join our Facebook page From top right corner. <<

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *