Two terrorists involved in Karachi attack identified | The Express Tribune

کراچی:

سیکورٹی فورسز نے دہشت گردوں میں سے دو کی شناخت کر لی ہے۔ حملہ جمعہ کی شام کراچی پولیس آفس (KPO) میں ایکسپریس نیوز ہفتہ کو رپورٹ کیا.

سیکورٹی فورسز کی جوابی کارروائی میں مارے گئے تین عسکریت پسندوں میں سے دو دہشت گردوں کا تعلق خیبرپختونخوا (کے پی) سے تھا۔

سیکیورٹی آپریشن کے دوران خود کو دھماکے سے اڑانے والے دہشت گرد کی شناخت کفایت اللہ ولد میراز علی خان اور وانڈہ امیر لکی مروت کے رہائشی کے نام سے ہوئی ہے۔

دوسرے دہشت گرد کی شناخت ذلا نور ولد وزیر حسن کے نام سے ہوئی جس کا تعلق شمالی وزیرستان سے تھا۔

کراچی پولیس حملہ پر حملہ کرنے والے دو مُلازم کی شناخت کرنا۔ آپ کے مقابلے میں مارےگ ایک دہشگرد کی شناخت عورت کے نام سے ہوئی تھی، دوسرے کی شناخت کفایت اللہ کے نام سے ہوئی، کفایت اللہ لکی مروت کا زندہ تھا۔ pic.twitter.com/eiRS4Yu4ie

— شعیب صدیقی (@siddiqui090) 18 فروری 2023

اطلاعات کے مطابق حملے کے دوران پولیس آفس کی عمارت کو کافی نقصان پہنچا۔ کئی دیواروں پر گولیوں کا نشان ہے جبکہ کھڑکیاں اور دروازے تباہ ہو چکے ہیں۔

کراچی پولیس چیف کے دفتر کے سامنے لفٹ سے ملحقہ سیڑھیوں پر خودکش حملہ آور نے خود کو دھماکے سے اڑا لیا جس سے چوتھی منزل پر واقع دفتر کو شدید نقصان پہنچا۔

دھماکے کے نتیجے میں لفٹ بھی ناکارہ ہو گئی ہے جبکہ دفتر کا اہم ریکارڈ اور سامان جگہ جگہ بکھرا ہوا ہے۔ دھماکے کے نتیجے میں دیواروں کا پلاسٹر اور ٹائلیں بھی اکھڑ گئیں۔

پڑھیں وزیر اعظم شہباز کی کراچی دہشت گردانہ حملے کی مذمت، \’اجتماعی کارروائی\’ کا مطالبہ

کراچی پولیس نے اس حملے کی ایک ویڈیو بھی شیئر کی ہے جس میں ڈی آئی جی ایسٹ مقدس حیدر اور ان کے گن مین تیمور کو دہشت گردوں سے لڑتے ہوئے دکھایا گیا ہے۔

حملہ

ایک روز قبل دہشت گرد خودکش جیکٹس پہنے اور خودکار ہتھیار اور دستی بم لے کر آئے تھے۔ حملہ کیا کراچی پولیس آفس دو پولیس اہلکار اور سندھ رینجرز کا ایک اہلکار سمیت چار افراد شہید جبکہ 16 زخمی ہوئے۔

حملہ جس کی ذمہ داری تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) نے قبول کی ہے، جمعہ کی شام سات بجے سے ساڑھے سات بجے کے درمیان شروع ہوا۔ حملہ آور پہلے KPO کے قریب ایک مقامی مسجد میں اندھا دھند فائرنگ کی آڑ میں داخل ہوئے۔

واقعے کی اطلاع ملتے ہی پولیس، رینجرز اور اسپیشل سیکیورٹی یونٹ کے اہلکار اور دیگر اداروں کے افسران اور تربیت یافتہ کمانڈوز موقع پر پہنچ گئے۔ شارع فیصل کو ٹریفک کے لیے بند کر دیا گیا جب کہ علاقے میں بجلی کی سپلائی بھی منقطع ہو گئی۔

ابتدائی کارروائی کے دوران خودکش جیکٹ پہنے ایک دہشت گرد نے عمارت کی چوتھی منزل پر خود کو دھماکے سے اڑا لیا۔ جس کے بعد پولیس اور رینجرز کے کمانڈوز نے عمارت کی بالائی منزلوں کی تلاشی شروع کردی۔

اس دوران علاقہ کمپاؤنڈ کے اندر سے شدید فائرنگ اور زور دار دھماکوں سے گونج اٹھا۔ آخر کار، دہشت گرد عمارت کی چھت پر پہنچ گئے جہاں انہوں نے شکار کیا یہاں تک کہ وہ رینجرز اور پولیس کمانڈوز کے ہاتھوں ایک سخت فائرنگ کے تبادلے میں مارے گئے۔

سندھ حکومت کے ترجمان مرتضیٰ وہاب صدیقی نے بتایا کہ حملے میں چار افراد ہلاک ہوئے جن میں دو پولیس اہلکار، ایک رینجر اور ایک سینٹری ورکر شامل ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ آپریشن تینوں دہشت گردوں کی ہلاکت کے ساتھ اختتام پذیر ہو گیا ہے۔





Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *