Ex-PTI MNAs evicted from Parliament Lodges | The Express Tribune

اسلام آباد:

کیپٹل ڈویلپمنٹ اتھارٹی (سی ڈی اے) نے پارلیمنٹ لاجز کی سرکاری رہائش گاہیں خالی کرانے کے لیے آپریشن کا پہلا مرحلہ مکمل کر لیا ہے سابق اراکین قومی اسمبلی (ایم این اے) جنہیں الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) نے ڈی نوٹیفائی کیا تھا۔

آپریشن کے دوران لاجز میں موجود پاکستان تحریک انصاف کے چار سابق ایم این ایز فرخ حبیب، ظہور احمد قریشی، شاہد خٹک اور شبیر احمد قریشی کے دفتری کمروں کے تالے توڑ کر ان کا سامان نکال لیا گیا جبکہ آٹھ پی ٹی آئی کے سابق اراکین اسمبلی نے رضاکارانہ طور پر کمروں کی چابیاں سی ڈی اے کے حوالے کر دیں۔

سابق خاتون رکن اسمبلی شاندانہ گلزار نے مجسٹریٹ کو آگاہ کیا کہ وہ پیر تک سرکاری رہائش گاہ خالی کر دیں گی جس کے بعد سی ڈی اے دوبارہ آپریشن شروع کرے گا۔

جمعہ کو سٹی مجسٹریٹ غلام مرتضیٰ چانڈیو کی زیر نگرانی آپریشن میں ضلعی انتظامیہ، سی ڈی اے انفورسمنٹ ڈیپارٹمنٹ کے عملے، پولیس اور تھانہ کی خواتین پولیس اہلکاروں نے حصہ لیا۔

دوپہر 2 بجے کی ڈیڈ لائن گزرنے کے بعد بھی سرکاری رہائش گاہیں خالی نہ ہوئیں تو مذکورہ ٹیم نے پارلیمنٹ لاجز کے بلاک سی میں حبیب اور قریشی کے کمروں کے تالے توڑ کر ان کا سامان نکال لیا۔

سی ڈی اے حکام نے بتایا کہ آٹھ سابق اراکین اسمبلی نے رضاکارانہ طور پر کمرے خالی کر کے چابیاں سی ڈی اے کے حوالے کر دیں۔

پی ٹی آئی کے بعض سابق ارکان کی درخواست پر آپریشن پیر تک ملتوی کر دیا گیا۔

سی ڈی اے کا کہنا ہے کہ قومی اسمبلی سیکرٹریٹ کی ہدایات پر ڈی نوٹیفائیڈ سابق اراکین کو 24 جنوری کو نوٹس جاری کیے گئے تھے۔

ان سابق ارکان کو سات دن کی مہلت دی گئی تھی جس کی مدت ختم ہونے کے بعد مزید دو دن کے لیے سی ڈی اے کے متعلقہ عملے نے سابق ارکان اسمبلی کو فیملی سویٹس خالی کرنے کا بار بار کہا۔

اس کے بعد سی ڈی اے کو آپریشن کرنا پڑا۔

اس حوالے سے ضلعی انتظامیہ کے ایک سینئر افسر نے ایکسپریس ٹریبیون کو بتایا کہ مجسٹریٹ کی نگرانی میں تالے توڑ کر کمروں میں موجود سامان کی انوینٹری لسٹ بنائی گئی ہے تاکہ کل یہ لوگ الزام نہ لگا سکیں۔ انتظامیہ، سی ڈی اے یا پولیس کہ ان کا کوئی قیمتی سامان – سونا یا ملکی غیر ملکی کرنسی – غائب ہو گئی تھی۔

آپریشن کے دوران تمام مناظر کی ویڈیوز بھی ریکارڈ کی گئی تھیں، پارلیمنٹ لاجز میں مستقل طور پر تعینات عملے کو بھی اسی وجہ سے ہر وقت وہاں رکھا جاتا تھا۔





Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *