ATC judge displeased by IK’s approach to court decorum

اسلام آباد: انسداد دہشت گردی کی عدالت کے جج نے جمعہ کو پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین اور سابق وزیراعظم عمران خان کا نام لیے بغیر اہم ریمارکس دیے کہ وہ 2 ہزار افراد کے ساتھ عدالت میں پیش ہوئے۔

اے ٹی سی کے جج راجہ ناصر عباس نے توشہ خانہ کیس میں الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) کی جانب سے نااہلی کے بعد ہونے والے مظاہروں کے بعد پی ٹی آئی رہنما اسد عمر اور دیگر کے خلاف درج کیس کی سماعت کی۔

جج نے ریمارکس دیے کہ انہوں نے اپنی پارٹی کا نام ”انصاف“ رکھا لیکن انہوں نے ”زندہ باد“ اور ”مرد آباد“ کے نعرے لگائے۔ جج نے کہا کہ وہ (عمران خان) برطانیہ کی مثال دیتے ہیں لیکن خود عدالتوں کا احترام نہیں کرتے۔ جج نے کہا کہ وہ (عمران خان) اپنے ساتھ تقریباً 2500 غنڈے لے کر آئے تھے۔ جج نے ریمارکس دیئے کہ اس کے پاس اس معاملے سے متعلق تمام سی سی ٹی وی فوٹیج موجود ہیں۔

انہوں نے مزید ریمارکس دیئے کہ وہ (عمران خان) انہیں مزید ایک سال تک مصروف رکھیں گے کیونکہ پی ٹی آئی کے سربراہ عدالت پہنچنے پر پہلے سے زیادہ کیسز لے کر واپس آئے ہیں۔ عدالت نے راجن پور پولیس کو بھی ریکارڈ کے ساتھ پیش ہونے کے لیے طلب کیا کیونکہ وہ عدالت کے حکم کے باوجود عمر کو پیش کرنے میں ناکام رہی تھی۔ جج نے ریمارکس دیئے کہ اگر عمر کے وکیل بابر اعوان آج (جمعہ) کو ان کے خلاف درج مقدمے سے دہشت گردی کے الزامات کو خارج کرنے کے لیے دلائل دیتے تو کیس سے دہشت گردی کی دفعہ ہٹانے کی درخواست پر عدالت کو حکم جاری کیا جاتا۔

اعوان نے عدالت کو بتایا کہ وہ آئندہ سماعت پر مقدمے سے دہشت گردی کی دفعہ ہٹانے کی درخواست پر اپنے دلائل پیش کریں گے۔

جج نے ریمارکس دیئے کہ کیا عمر راجن پور سے آئے ہیں؟ عدالت کو بتایا گیا کہ عمر راجن پور سے نہیں پہنچے۔

کاپی رائٹ بزنس ریکارڈر، 2023



>Source link>

>>Join our Facebook page From top right corner. <<

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *