‘Oh my God, it’s really happening’

۲۴ فروری ۲۰۲۲ کو یورپی بحران کا ایک نشانہ روشن ہوئے، جب روس یوکرین کو اپنے قبضے میں لے کر اپنی حکومت کو کافی سزا دینے کے لئے تیار ہو گیا۔ ایستونیا اور اس کے بالٹیٰ دوسرے ممالک کے رہنما کو فوری طور پر فون کی کال آئی تھی، انہوں نے اس کے بارے میں انگیزے سے بتایا کہ یہ حقیقت ہے کہ جنگ شروع ہو چکی ہے۔ یورپی انجن اور نیٹو کے سربراہوں نے بھی اپنے خاص تجربوں کے بارے میں اپنی باتیں شیئر کی، انہوں نے کہا کہ یورپی سے بارہ میں خود کو انتظام سے پیش کیا گیا، اور ان کے خلاف یوکرین کے صدر ولادیمیر زیلنسکے نے اپنے فیس بک پر پیغام ارسال کیا کہ جنگ شروع ہو چکی ہے، اور لوگوں کو سکون رکھنے کی تنظیم دی گئی۔ یورپی کے رہنما اور سربراہوں نے ایک دوسرے کے ساتھ کال کی اور فوری طور پر اقدامات لے لئے، اور یوکرین کے بارے میں ایک سے زیادہ سنشن پیکجز کا اعلان کیا گیا۔ یوکرین کے بارے میں ایک سے زیادہ سنشن پیکجز کا اعلان کرنے کے بعد یورپی ممالک کے درمیان ایک دوسرے کے ساتھ بڑے تنازعات ہوئے، ان کے درمیان ملنے والی فرق یوکرین کے بارے میں روس کے خلاف کیا گیا اور ایسا کیا گیا کہ یوکرین کے بارے میں ایک سے زیادہ سنشن پیکجز کا اعلان کیا گیا۔ یوکرین کے صدر ولادیمیر زیلنسکے نے نیز اپنے فیس بک پر پیغام ارسال کیا کہ لوگوں کو سکون رکھنے کی تنظیم دی گئی۔ یورپی ممالک کے رہنما اور سربراہوں نے ایک دوسرے کے ساتھ کال کی اور فوری طور پر اقدامات لے لئے، اور یوکرین کے بارے میں ایک سے زیادہ سنشن پیکجز کا اعلان کیا گیا۔ یورپی کے سربراہوں نے یوکرین کے بارے میں ایک سے زیادہ سنشن پیکجز کا اعلان کرنے کے بعد ان کے درمیان ملنے والی فرق ظاہر ہوئی، جو کہ مختلف ممالک کے درمیان روس کے خلاف کیا گیا اور ایسا کیا گیا کہ یوکرین کے بارے میں ایک سے زیادہ سنشن پیکجز کا اعلان کیا گیا



Source link

Join our Facebook page
https://www.facebook.com/groups/www.pakistanaffairs.pk

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *