ECP ‘apathy, inaction’ irks president | The Express Tribune

اسلام آباد:

صدر مملکت عارف علوی نے جمعہ کے روز چیف الیکشن کمشنر (سی ای سی) سکندر سلطان راجہ کو خیبرپختونخوا اور پنجاب میں انتخابات کی تاریخوں پر مشاورت کے لیے 20 فروری کو \’فوری اجلاس\’ میں مدعو کیا۔

یہ اجلاس الیکشنز ایکٹ 2017 کے سیکشن 57(1) کے مطابق ایوان صدر میں ہوگا، جس میں کہا گیا ہے کہ صدر کو یہ ذمہ داری سونپی گئی ہے کہ وہ الیکشن کمیشن پاکستان (ECP) سے مشاورت کے بعد انتخابات کی تاریخ کا اعلان کریں۔

صدر نے سی ای سی کو لکھا کہ 8 فروری کو ای سی پی کو لکھے گئے ان کے پچھلے خط کے بعد سے کچھ اہم پیش رفت ہوئی ہے، جس میں لاہور ہائی کورٹ (ایل ایچ سی) کا حکم بھی شامل ہے جس میں کمیشن کو پنجاب میں بلاتاخیر انتخابات کی تاریخ کا اعلان کرنے کی ہدایت کی گئی ہے اور حالیہ مشاہدات سپریم کورٹ ہوئی تھی۔

انہوں نے انتخابی نگران کی جانب سے \”بے حسی اور بے عملی\” پر اپنی ناراضگی کا اظہار کیا، جس نے ابھی تک ان کے پہلے خط کا جواب نہیں دیا تھا۔

صدر نے لکھا کہ وہ \”بے چینی سے انتظار کر رہے تھے کہ ای سی پی آگے بڑھنے اور اس کے مطابق عمل کرنے کے لیے اپنے آئینی فرائض کا احساس کرے گا، لیکن وہ اس اہم معاملے پر انتخابی نگران کے متعصبانہ رویے سے انتہائی مایوس ہوئے\”۔

علوی نے ایک بار پھر ای سی پی کو یاد دلایا کہ وہ آئین کے تحفظ، تحفظ اور دفاع کی اپنی آئینی ذمہ داری سے آگاہ ہیں، وہ اس معاملے پر سی ای سی کو ایک ہنگامی اجلاس کے لیے مدعو کر رہے ہیں۔

جواب میں ای سی پی کے ترجمان نے کہا کہ یہ ایک آئینی ادارہ ہے اور آئین، قانون اور اپنے مینڈیٹ کے مطابق اپنے فرائض سرانجام دے رہا ہے۔

ترجمان نے ایک بیان میں مزید کہا کہ ای سی پی کسی سے \”ہدایات\” نہیں لے رہا ہے۔

بیان میں مزید کہا گیا کہ ای سی پی نے شفافیت، غیر جانبداری کے ساتھ کام کیا اور بغیر کسی دھمکی یا دباؤ کا شکار ہوئے۔

اس میں کہا گیا ہے کہ سی ای سی کی طرف سے تشکیل کردہ بنچوں نے اب تک متعدد درخواستوں کا فیصلہ کیا ہے۔

ای سی پی کی کامیابیوں پر روشنی ڈالتے ہوئے، بیان میں پڑھا گیا کہ انتخابی نگران نے سینیٹ کی 48 نشستوں کے لیے کامیابی سے انتخابات کرائے جو ان پر موجود قانون سازوں کی مدت پوری ہونے کے بعد خالی ہوئی تھیں۔

اس نے مزید نشاندہی کی کہ ای سی پی نے بالترتیب 5، 19 اور 40 سینیٹ، قومی اسمبلی اور صوبائی اسمبلی کی نشستوں پر ضمنی انتخابات کا انعقاد پرامن طریقے سے کرایا۔

اس نے مزید کہا کہ اب وہ این اے کی 65 نشستوں پر ضمنی انتخابات کی تیاری کر رہی ہے۔

کمیشن نے 2021-22 کے لیے ملک بھر میں کنٹونمنٹ بورڈ کے انتخابات کے پرامن انعقاد کا کریڈٹ لیا۔

اس میں مزید کہا گیا کہ اس نے نہ صرف کے پی میں تمام سطحوں پر بلدیاتی انتخابات کرانے میں کامیابی حاصل کی ہے بلکہ ووٹرز اور پولنگ عملے کو سیکیورٹی کی فراہمی کو بھی یقینی بنایا ہے۔

اس میں مزید کہا گیا کہ کے پی ایل جی کے انتخابات میں شفافیت کو تمام اسٹیک ہولڈرز نے سراہا ہے۔

ای سی پی نے کہا کہ وہ شدید مشکلات کے باوجود گزشتہ سال سندھ اور بلوچستان میں بلدیاتی انتخابات کرانے میں کامیاب ہوا تھا۔

اس نے جاری رکھا کہ وہ اگلے عام انتخابات کے لیے نئی حلقہ بندیوں کے مشکل کام کو کامیابی کے ساتھ انجام دینے میں کامیاب ہو گیا ہے۔

کمیشن نے نشاندہی کی کہ نئی ووٹر لسٹوں کی تیاری ایک مشکل کام ہے۔

تاہم، ای سی پی نے ملک بھر میں سروے کیا اور 7 اکتوبر 2022 کو نئی ووٹرز لسٹیں شائع کیں۔

اس میں بتایا گیا کہ اگلے عام انتخابات کے لیے ووٹر لسٹوں کو اپ ڈیٹ کر دیا گیا ہے۔ اس نے مزید کہا کہ وہ اہل ووٹروں کے نام لے کر گئے تھے۔

اس ماہ کے شروع میں، صدر نے انتخابی نگران پر زور دیا تھا کہ وہ کے پی اور پنجاب میں انتخابات کی تاریخوں کا \”فوری اعلان\” کرے، اور متنبہ کیا کہ آئین کسی تاخیر کی اجازت نہیں دیتا کیونکہ یہ \”جمہوریت کو طویل مدتی دھچکے\” کا سبب بنیں گے۔

صدر علوی نے صوبائی اسمبلی اور عام انتخابات دونوں کے بارے میں \”خطرناک قیاس آرائی پر مبنی پروپیگنڈے\” کو ختم کرنے کی ضرورت پر بھی زور دیا۔

پنجاب اور کے پی کی اسمبلیاں بالترتیب 14 جنوری اور 18 جنوری کو تحلیل کردی گئیں، جب پی ٹی آئی کے چیئرمین اور معزول وزیراعظم عمران خان نے اعلان کیا تھا کہ دونوں صوبوں میں ان کی حکومتیں اپنی اسمبلیاں تحلیل کر دیں گی تاکہ ملک نئے انتخابات کی طرف بڑھ سکے۔

10 فروری کو لاہور ہائی کورٹ نے ای سی پی کو حکم دیا تھا کہ وہ پنجاب میں انتخابات کی تاریخ کا اعلان کسی تاخیر کے بغیر کرے۔

اسی طرح 16 فروری کو عدالت عظمیٰ کے ایک ڈویژن بنچ نے پنجاب اسمبلی کے انتخابات کا معاملہ چیف جسٹس آف پاکستان عمر عطا بندیال کو بھیجا تھا کہ وہ از خود دائرہ اختیار کا مطالبہ کریں، انتباہ دیا کہ آئین کی خلاف ورزی کا بڑا خطرہ ہے۔

گزشتہ سال اپریل میں عدم اعتماد کی قرارداد کے ذریعے وزیر اعظم کے عہدے سے ہٹائے جانے کے بعد سے پی ٹی آئی چیئرمین قبل از وقت انتخابات کا مطالبہ کر رہے ہیں۔

ان کا کہنا ہے کہ صرف جمہوری طور پر منتخب حکومت ہی ملک کو مالی بحران سے نکالنے کے لیے درکار سخت فیصلے کر سکتی ہے۔





Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *