SBP expedites proceedings against exporters for realisation of e-forms

لاہور: اسٹیٹ بینک آف پاکستان (SBP) نے ای فارمز کی وصولی کے لیے برآمد کنندگان کے خلاف کارروائی تیز کر دی ہے اور انہیں اس کی جلد کارکردگی کے لیے مجبور کر دیا ہے، جس سے بعد میں آنے والوں میں تشویش پائی جاتی ہے۔

زیادہ تر نوٹسز میں اس بات کی نشاندہی کی گئی ہے کہ برآمد کنندگان نے ای فارمز میں اس بات کی ضمانت دی تھی کہ وہ شپمنٹ/برآمد کی تاریخ سے چھ ماہ کے اندر بینکوں کے ذریعے آمدنی کی پوری رقم واپس بھیج دیں گے۔

چونکہ وہ مقررہ مدت کے اندر فروخت کی کارروائی کی پوری رقم واپس بھیجنے میں ناکام رہے ہیں اور اس میں تاخیر کرکے فارن ایکسچینج ریگولیشن ایکٹ 1974 کی دفعات کی خلاف ورزی کی ہے۔

واضح رہے کہ وفاقی حکومت اشیا کی برآمد پر پابندی عائد کرنے کی مجاز ہے جب تک کہ مقررہ مدت کے اندر فروخت کی کارروائی کی واپسی کے لیے کوئی اعلامیہ پیش نہ کیا جائے سوائے اس کے جہاں فروخت میں تاخیر ہو یا سامان کی ادائیگی مقررہ طریقے سے کی جائے۔

ایکسپورٹ کمیونٹی کے ذرائع کے مطابق، انہیں اسٹیٹ بینک کی جانب سے نوٹسز موصول ہو رہے ہیں تاکہ وہ قانون کی خلاف ورزی کے حوالے سے اپنے موقف کی وضاحت کریں۔ یہ بات قابل غور ہے کہ اسٹیٹ بینک ان حالات کے بارے میں مکمل وضاحت کے حوالے سے ذمہ داری کو بھی یقینی بناتا ہے جن کے نتیجے میں عدم ادراک ہوتا ہے۔ کم وصولی کی صورت میں، برآمد کنندگان درآمدی ملک کے چیمبر آف کامرس کی طرف سے مکمل دستاویزی اکاؤنٹ سیل سرٹیفکیٹ پیش کرنے کے بھی پابند ہیں۔

اسٹیٹ بینک ہر اس دن کے لیے جس کے دوران خلاف ورزی یا ڈیفالٹ جاری رہتا ہے، جرمانہ عائد کرنے کا مجاز ہے جو اس میں شامل رقم یا مالیت سے پانچ گنا زیادہ نہ ہو یا پانچ ہزار روپے جو کہ 2,000 روپے تک بڑھ سکتے ہیں۔

زمینی راستے سے ایران کو دیسی سامان برآمد کرنے والے کچھ برآمد کنندگان نے بتایا کہ انہیں فروخت کے عمل کی وصولی میں پریشانی کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے کیونکہ ایرانی خریدار نقد ادائیگیوں کے چیک جاری کر رہے تھے جو ایران کے مقامی بینکوں کو پیش کرنے پر بے عزتی کی جاتی ہے۔

ان کے مطابق، فارن ایکسچینج مینوئل میں یہ فراہم کیا گیا ہے کہ غیر ملکی خریدار کی جانب سے نادہندہ ہونے کی صورت میں برآمدی رقم کی وصولی کے لیے قانونی کارروائی ایس بی پی بینکنگ سروس کارپوریشن کے ساتھ مشاورت سے کی جائے گی، لیکن ایسی کوئی قانونی مدد فراہم نہیں کی جاتی۔ کارپوریشن کی طرف سے اور برآمد کنندگان کو اکیلے ہی اس مسئلے کو سنبھالنا ہے۔

کاپی رائٹ بزنس ریکارڈر، 2023



>Source link>

>>Join our Facebook page From top right corner. <<

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *