Indian Wells: Djokovic seeks special permission | The Express Tribune

لندن:

سربیا کا نوواک جوکووچان کے بھائی جورڈجے نے جمعہ کو بتایا کہ، دنیا کے سب سے ہائی پروفائل غیر ویکسین ایتھلیٹس میں سے ایک، نے انڈین ویلز اور میامی اوپن میں کھیلنے کے لیے ریاستہائے متحدہ میں داخل ہونے کی خصوصی اجازت کے لیے درخواست دی ہے۔

انڈین ویلز میں 9 مارچ سے شروع ہونے والے مین ڈرا ایکشن سے پہلے غیر ملکی ہوائی مسافروں کے لیے امریکی ویکسین کی ضرورت ختم ہونے کی توقع نہیں ہے۔ میامی اوپن 22 مارچ سے 2 اپریل تک جاری رہے گا۔

عالمی نمبر ایک جوکووچ کا نام اس ہفتے انڈین ویلز کے لیے داخلے کی فہرست میں شامل کیا گیا تھا، جہاں وہ پانچ بار کے چیمپئن ہیں۔

\”نوواک کو خصوصی اجازت حاصل کرنی ہوگی کیونکہ امریکہ اب بھی غیر ویکسین والے افراد کے داخلے سے انکار کر رہا ہے، جو کہ صرف ناقابل یقین ہے کیونکہ پوری دنیا کھلی ہوئی ہے اور کھیلوں کے مقابلوں میں ویکسین شدہ اور غیر ویکسین والے ایتھلیٹس ایک جیسے ہوتے ہیں\”۔

\”نوواک نے تمام مطلوبہ دستاویزات اور درخواست جمع کرائی ہے، اور ڈائریکٹرز انڈین ویلز اور میامی ٹورنامنٹس نے عوامی طور پر کہا ہے کہ ان ٹورنامنٹس میں نوواک کی ضرورت ہے اور وہ چاہتے ہیں کہ وہ آئیں۔

\”فیصلہ ہونے سے پہلے صرف چند دن باقی ہیں اور ہمارے پاس جو کچھ کرنا باقی ہے وہ مثبت نتائج کی امید ہے۔\”

پچھلے مہینے، انڈین ویلز ٹورنامنٹ کے ڈائریکٹر ٹومی ہاس نے کہا تھا کہ اگر جوکووچ کو اس سال ریاستہائے متحدہ میں ہونے والے انڈین ویلز اور دیگر ٹورنامنٹس میں حصہ لینے کی اجازت نہیں دی گئی تو یہ \”بدنام\” ہوگی۔

جوکووچ پچھلے سال کے مقابلے سے باہر ہو گئے تھے۔ آسٹریلین اوپن اور اس کی ویکسین کی حیثیت کی وجہ سے ملک سے جلاوطن کر دیا گیا تھا۔ اس نے اس سال ٹورنامنٹ میں دوبارہ انٹری حاصل کی اور اسے 22 ویں گرینڈ سلیم ٹائٹل کا ریکارڈ بنانے کے لیے جیت لیا۔

35 سالہ اس سے پہلے کہہ چکے ہیں کہ وہ کوویڈ 19 ویکسین لینے کے بجائے گرینڈ سلیمز سے محروم رہیں گے۔





Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *