Govt submits complete record of Toshakhana articles to LHC

لاہور: وفاقی حکومت نے منگل کو توشہ خانہ کے آرٹیکلز کا مکمل ریکارڈ سیل بند شکل میں لاہور ہائی کورٹ میں پیش کردیا۔

عدالت نے قیام پاکستان کے بعد سے سیاسی حکمرانوں اور بیوروکریٹس کی جانب سے غیر ملکی معززین سے ملنے والے توشہ خانہ کے تحائف کی مکمل تفصیلات طلب کرتے ہوئے درخواست کی مزید سماعت 23 فروری تک ملتوی کرتے ہوئے توشہ خانہ کے سربراہ کو بیان حلفی جمع کرانے کی ہدایت کی۔

قبل ازیں کیبنٹ ڈویژن کا سیکشن افسر عدالت میں پیش ہوا اور توشہ خانہ کا سربمہر ریکارڈ پیش کیا۔

ایک لا آفیسر نے عدالت کو بتایا کہ وفاقی کابینہ اپنے اگلے اجلاس میں توشہ خانہ کا ریکارڈ پبلک کرنے کا فیصلہ کرے گی۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ ریکارڈ کی درجہ بندی کی گئی تھی۔ تاہم، عدالت اگر مناسب سمجھے تو اسے عام کر سکتی ہے۔

عدالت نے کہا کہ وہ اس وقت تک سیل شدہ ریکارڈ کو نہیں کھولے گا جب تک کہ توشہ خانہ کے سربراہ کی طرف سے ایک حلف نامہ جمع نہ کرایا جائے جس میں بتایا جائے کہ تفصیلات کی درجہ بندی کیسے کی گئی۔

گزشتہ سماعت پر، کابینہ ڈویژن کی جانب سے دائر کی گئی ایک رپورٹ میں انکشاف کیا گیا تھا کہ وزیراعظم کے دفتر نے 26 نومبر 2015 کو اعلان کیا تھا کہ توشہ خانہ کے تحائف سے متعلق معلومات کی درجہ بندی کی گئی تھی اور ایسی معلومات کے افشاء سے ملکی مفادات کو نقصان پہنچ سکتا ہے۔ بین الاقوامی تعلقات میں پاکستان

درخواست گزار منیر احمد نے اپنے وکیل کے ذریعے کہا کہ عوام کو ہر عوامی لین دین کی تفصیلات جاننے اور عوامی اہمیت کے تمام معاملات میں معلومات حاصل کرنے کا حق ہے۔ درخواست گزار نے عدالت سے استدعا کی کہ مدعا علیہان کو حکم دیا جائے کہ وہ حکمرانوں اور بیوروکریٹس کو تحفے میں دیے گئے اثاثوں کی تفصیلات منظر عام پر لائیں اور ان افراد کے نام بھی فراہم کریں جنہوں نے ادائیگی کرکے اثاثے حاصل کیے ہیں۔

کاپی رائٹ بزنس ریکارڈر، 2023



Source link

Join our Facebook page
https://www.facebook.com/groups/www.pakistanaffairs.pk

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *