• کاکڑ نے بی اے پی، سینیٹ کی نشست چھوڑ دی۔
• مینگل ناخوش، کہتے ہیں کہ عبوری وزیر اعظم کی تقرری سے ان کی بی این پی اور مسلم لیگ ن کے درمیان خلیج بڑھ گئی
• شہباز نے کاکڑ کو نگراں سیٹ اپ کی قیادت کے لیے ‘سب سے موزوں’ شخص قرار دیا۔

کوئٹہ: اس کے ایک دن بعد نگران وزیراعظم کے طور پر نامزدگیانوارالحق کاکڑ نے اتوار کو سینیٹ کے ساتھ ساتھ بلوچستان عوامی پارٹی (بی اے پی) سے بھی مستعفی ہونے کا اعلان کیا، جس کی بنیاد انہوں نے 2018 میں رکھی تھی۔

دوسری جانب بلوچستان میں مسلم لیگ (ن) کے اہم اتحادی بلوچستان نیشنل پارٹی کے سربراہ اختر مینگل نے سابق وزیراعظم نواز شریف کو لکھے گئے خط میں اتحادیوں سے مشاورت کے بغیر مسٹر کاکڑ کی تعیناتی پر برہمی کا اظہار کیا۔

اپنے ‘X’ ہینڈل (جو پہلے ٹویٹر کے نام سے جانا جاتا تھا) پر پوسٹ کردہ ایک بیان میں، مسٹر کاکڑ نے کہا: “نگراں وزیر اعظم کے طور پر مجھے سونپی گئی بنیادی ذمہ داری کی وجہ سے، میں نے بلوچستان عوامی پارٹی (BAP) کی اپنی رکنیت سے دستبردار ہونے کا فیصلہ کیا ہے۔ اور اپنے سینیٹ کے عہدے سے دستبردار ہوجاؤ۔

کے مطابق جیو نیوز، مسٹر کاکڑ نے اپنے عہدے سے استعفیٰ دیا کیونکہ وہ ایک غیر جانبدار عبوری وزیر اعظم بننا چاہتے ہیں۔ میڈیا آؤٹ لیٹ نے ان کے حوالے سے کہا کہ چونکہ آزادانہ اور منصفانہ انتخابات کرانا ان کی ذمہ داری ہے، جس کے لیے انہیں الیکشن کمیشن سے تعاون کرنا ہوگا، اس لیے انہوں نے مستعفی ہونے کا فیصلہ کیا ہے۔

اس سے قبل سبکدوش ہونے والے وزیراعظم شہباز شریف کی جانب سے جاری ہونے والے ایک بیان میں اس اعتماد کا اظہار کیا گیا تھا کہ مسٹر کاکڑ منصفانہ انتخابات کو یقینی بنائیں گے۔ وزیر اعظم کے دفتر سے جاری ہونے والے بیان میں کہا گیا ہے کہ “تمام جماعتوں کی طرف سے کاکڑ کے نام پر کیا گیا اعتماد ان کے مناسب انتخاب کو ثابت کرتا ہے کیونکہ آئندہ نگراں وزیر اعظم ایک پڑھے لکھے شخص اور محب وطن ہیں”۔

وزیر اعظم شہباز کے مطابق انوار الحق کاکڑ کے نام کا فیصلہ ایک آئینی عمل کے تحت کیا گیا کیونکہ وہ عبوری سیٹ اپ کے سربراہ کے لیے ’سب سے موزوں شخص‘ تھے۔

‘خلیج چوڑی ہوئی’

مسلم لیگ (ن) کے سپریم لیڈر کو لکھے گئے اپنے خط میں اختر مینگل نے کاکڑ کی بطور نگراں وزیراعظم تقرری پر شدید تحفظات کا اظہار کیا اور کہا کہ اس فیصلے سے بی این پی-ایم اور مسلم لیگ (ن) کے درمیان فاصلے مزید بڑھ گئے ہیں۔

انہوں نے اپنی حریف پارٹی سے تعلق رکھنے والے سیاستدان کی تقرری پر ناراضگی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ایک شخص کی بطور نگران وزیراعظم نامزدگی نے نہ صرف ہمارے لیے سیاست کے دروازے بند کر دیے ہیں بلکہ اس قسم کے فیصلوں سے بی این پی اور مسلم لیگ ن کے درمیان دوریاں مزید بڑھ گئی ہیں۔ بطور نگران وزیر اعظم۔

مسٹر مینگل نے سیاستدانوں کی جانب سے مسائل کو سیاسی طریقے سے حل کرنے کی بجائے ہر مسئلے کے حل کے لیے اسٹیبلشمنٹ سے رجوع کرنے کے اقدامات پر افسوس کا اظہار کیا۔ انہوں نے 22 جولائی کو مسٹر شریف کو لکھے گئے خط کا حوالہ دیا، جس میں امید ظاہر کی گئی تھی کہ “اب تک مسائل کم ہو جائیں گے، لیکن اس کے بجائے بڑھ گئے”۔

“میاں صاحبجو کچھ ہم پر پڑا ہے وہ ہماری قسمت میں ہو سکتا ہے، لیکن حیرت کی بات یہ ہے کہ آپ لوگوں نے مشکلات جھیل کر بھی کوئی سبق نہیں سیکھا۔ ہمیں جنرل ایوب سے لے کر جنرل مشرف تک کے مظالم یاد ہیں۔ لیکن آپ کی پارٹی مشرف کی سازشوں اور غیر آئینی اقدامات کو بھول جاتی ہے۔ [ex-COAS] باجوہ بہت جلدی۔”

انہوں نے کہا: “ایک بار پھر، آپ اتحادیوں کو شامل کیے بغیر اندھیرے میں قانون سازی کر کے جمہوری اداروں کو کمزور کر رہے ہیں، اور اس طرح غیر جمہوری طاقتوں کو مضبوط کر رہے ہیں۔”

اختر مینگل، جو بلوچستان کے وزیر اعلیٰ بھی رہ چکے ہیں، نے کہا: “انسانی حقوق کے خلاف قانون سازی مستقبل میں آپ کے خلاف ہو سکتی ہے، [we know] کیونکہ ہم بلوچستان کے رہنے والوں کو پہلے دن سے انسان نہیں سمجھا جاتا۔

انہوں نے کہا کہ اتحادیوں کو اعتماد میں لیے بغیر فیصلے کرنے سے بڑے اور چھوٹے صوبوں کے درمیان بداعتمادی ہی بڑھے گی۔ خط میں مزید کہا گیا کہ ‘قانون اپنے مفادات کے تحفظ اور اپنی آئندہ حکومت کے لیے راہ ہموار کرنے کے لیے بنایا اور توڑا جاتا ہے، لیکن اس کے برعکس بلوچستان کے لوگوں کا اپنے پیاروں کے لیے رونا قانون کے خلاف ہے۔’

انہوں نے کہا کہ بی این پی ایم نے سوچا اس بار شاید ان تلخ تجربات کے بعد مسلم لیگ ن کو احساس ہو گیا ہو گا۔ [its mistakes] اب لیکن اس نے ہمیں پہلے کی طرح دوبارہ ناکام کر دیا ہے”

انہوں نے کہا کہ میری خواہش ہے کہ پاکستان اسٹڈیز کی نصابی کتب میں ’’گزشتہ 76 سالوں کی حقیقی تاریخ‘‘ موجود ہوتی تو شاید ہم تاریخ سے سبق سیکھتے لیکن اب ہم اور آپ تاریخ کے سامنے جوابدہ ہیں اور کرتے رہیں گے۔

خط کے آخر میں اختر مینگل نے واضح کیا کہ مسٹر کاکڑ کی بطور عبوری وزیر اعظم نامزدگی نہ صرف ان کی سیاست کا خاتمہ کر گئی بلکہ مسٹر شریف کے فیصلوں نے بھی “دونوں کے درمیان مزید فاصلے پیدا کر دیے”۔

اسلام آباد میں ذکی عباس نے بھی اس رپورٹ میں تعاون کیا۔

ڈان، 14 اگست، 2023 میں شائع ہوا۔



>Source link>

>>Join our Facebook Group be part of community. <<

By hassani

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *