کراچی: نیشنل بزنس گروپ پاکستان کے چیئرمین اور پاکستان بزنس مین اینڈ انٹلیکچولز فور م کے صدر میاں زاہد حسین نے کہا کہ خطے میں مون سون اور سیلاب کا سیزن شروع ہو چکا ہے اور بھارت نے ہمیشہ کی طرح پاکستان کو پانی چھوڑ دیا ہے جب کہ گزشتہ سال پاکستان کو بھاری نقصان اٹھانا پڑا۔ بڑے پیمانے پر سیلاب کی وجہ سے 30 ارب ڈالر۔

انہوں نے اس بات پر افسوس کا اظہار کیا کہ عالمی برادری کی جانب سے پاکستان کے لیے گزشتہ سال سیلاب کے نقصانات سے نمٹنے کے لیے کیے گئے امدادی وعدوں پر عمل درآمد بھی آئی ایم ایف پروگرام کے بعد نسبتاً آسان ہو جائے گا۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ اگر موجودہ پروگرام کا سہ ماہی جائزہ کامیابی سے مکمل ہو جاتا ہے تو آئی ایم ایف سے اگلی قسط لینا ممکن ہو جائے گا، جس کے بغیر ملک چلانا ناممکن ہے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ موجودہ حکومت اور آنے والی نگراں حکومتیں اس موقع سے فائدہ اٹھاتے ہوئے بنیادی اصلاحات پر عمل درآمد شروع کریں۔ بصورت دیگر، ہمیں بے عملی کی بھاری قیمت ادا کرنی پڑے گی۔

انہوں نے کہا کہ آئی ایم ایف کی جانب سے قرض کی منظوری اور 1.2 ارب ڈالر کی پہلی قسط کا اجراء عوام اور تاجروں کے لیے مہلت ثابت ہوا ہے۔

انہوں نے کہا کہ قرض دینے والے کے فیصلے سے جاری غیر یقینی صورتحال میں کمی آئے گی اور ڈالر کی ذخیرہ اندوزی بند ہو جائے گی جس سے معیشت مستحکم ہو گی، روپے کی قدر میں اضافہ ہو گا اور سرمایہ کاروں کا اعتماد بڑھے گا۔

میاں زاہد نے کہا کہ آئی ایم ایف معاہدے کے نتیجے میں پیٹرولیم مصنوعات، بجلی اور گیس کی قیمتوں میں اضافے سے کاروبار کرنے کی لاگت بڑھے گی، لیکن یہ دیوالیہ ہونے سے بہتر ہے، اس لیے ہم اس کی حمایت کرتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان کو اگلے تین سال تک ہر سال تقریباً 25 ارب ڈالر کے قرضے واپس کرنے ہیں جس کے لیے پاکستان کے لیے مزید قرضے حاصل کرنا بہت ضروری ہے۔ انہوں نے کہا کہ آئی ایم ایف کے ساتھ معاہدے کے بعد پاکستان دیگر بین الاقوامی اداروں سے مزید سستے قرضے حاصل کر سکے گا۔

کاپی رائٹ بزنس ریکارڈر، 2023



>Source link>

>>Join our Facebook Group be part of community. <<

By hassani

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *