اسلام آباد: پاکستان اور سوئٹزرلینڈ نے ہفتے کے روز ایک مفاہمت کی یادداشت پر دستخط کیے جس کا مقصد پاکستان میں قدرتی آفات کی روک تھام اور ان سے نمٹنے کو بہتر بنانا ہے۔

وزیراعظم شہباز شریف کی موجودگی میں نتھیاگلی میں منعقدہ ایک پروگرام میں سوئس وزیر خارجہ اگنازیو کیسس اور نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی کے چیئرمین لیفٹیننٹ جنرل انعام حیدر ملک نے ایم او یو پر دستخط کیے۔

ایم او یو میں ڈیزاسٹر رسک مینجمنٹ میں دو طرفہ تعاون کا تصور کیا گیا جس میں تیاری، ردعمل اور بحالی کا مقصد لوگوں اور قومی معیشت پر پڑنے والے منفی اثرات کو کم کرنا ہے۔

سوئس وزیر خارجہ اور ان کے وفد کا خیرمقدم کرتے ہوئے وزیراعظم نے اس بات کا اعادہ کیا کہ پاکستان سوئٹزرلینڈ کے ساتھ اپنے تعلقات کو انتہائی اہمیت دیتا ہے۔

وزیر اعظم شہباز سوئس وزیر اور این ڈی ایم اے کے سربراہ کے درمیان ایم او یو پر دستخط کرتے ہوئے

وزیراعظم نے گزشتہ سال کے تباہ کن سیلاب کے بعد پاکستان کی مدد کرنے پر سوئس حکومت کا شکریہ ادا کیا۔ انہوں نے سوئس کمپنیوں کو پاکستان میں سرمایہ کاری کرنے کی دعوت بھی دی خصوصاً قابل تجدید توانائی اور آئی ٹی کے شعبوں میں۔

دونوں فریقوں نے سیاحت کے فروغ سمیت ماحولیاتی سیاحت اور متعلقہ بنیادی ڈھانچے کی ترقی میں تعاون پر بھی اتفاق کیا۔

برن میں سوئس وزارت خارجہ کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ موسمیاتی تبدیلی پورے جنوبی ایشیائی خطے کے لیے ایک اہم چیلنج ہے، انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان کو سمندر کی سطح میں اضافہ، مون سون کی تیز بارشوں اور گلیشیئرز کے تیزی سے پگھلنے کا سامنا ہے۔

مفاہمت نامے کا مقصد بڑھتے ہوئے تعاون کو فروغ دینا تھا، خاص طور پر قدرتی آفات کے خطرے کے انتظام میں وسائل، علم اور تجربے کو جمع کرکے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ وزیر کے دورے نے 2022 میں صدی کے بدترین سیلاب کے بعد سوئٹزرلینڈ کی یکجہتی کو اجاگر کیا۔

سوئس وفد نے وزیر برائے موسمیاتی تبدیلی شیری رحمٰن کی طرف سے پاکستان کے موسمیاتی خطرات کے بارے میں ایک تفصیلی پریزنٹیشن میں بھی شرکت کی اور ملک کو بحالی اور لچک کے جال میں دھکیلنے والے موسمیاتی بحرانوں کے تیزی سے آغاز کے بارے میں بتایا۔

محترمہ رحمٰن نے وضاحت کی کہ موافقت کی لاگت بہت زیادہ تھی لیکن پاکستان جتنا ہو سکتا ہے دوبارہ تعمیر کر رہا ہے۔ انہوں نے پاکستان کا فلیگ شپ پروگرام پیش کیا جس میں لیونگ انڈس انیشی ایٹو اور ڈیلٹا بلیو کاربن پروجیکٹ شامل ہیں۔

سوئس بیان میں کہا گیا ہے کہ ’’خطے کی جغرافیائی سیاسی صورتحال کے پیش نظر پاکستان کو کئی بحرانوں کا سامنا ہے جن میں مہاجرین کی آمد بھی شامل ہے۔

اسلام آباد کے دورے نے ان اور دیگر مسائل جیسے کہ موسمیاتی چیلنجز، انفراسٹرکچر میں سرمایہ کاری، مذہبی اقلیتوں کا احترام، سیاحتی خدمات کی ترقی اور سائنسی تعاون کو حل کرنے کا موقع فراہم کیا۔

سوئس قانون ساز

سوئس پارلیمنٹ کے ارکان الزبتھ شنائیڈر شنائٹر، کرسچن واسرفالن اور گریٹا ایلیریا گائسن پر مشتمل سوئس وفد نے پاکستانی پارلیمنٹیرینز بشمول سینیٹر صابر شاہ، سینیٹر پروفیسر ڈاکٹر مہر تاج روغانی، ایم این اے رومینہ خورشید عالم، پارلیمانی سیکرٹری قانون اور دیگر سے ملاقات کی۔ جسٹس مہناز اکبر عزیز اور پارلیمانی سیکرٹری مواصلات شاہدہ اختر علی۔

دورہ کرنے والے وفد کو بچوں کے حقوق پر پارلیمانی کاکس اور خواتین کے پارلیمانی کاکس جیسے اقدامات کے بارے میں بریفنگ دی گئی۔

پاکستانی فریق نے سویڈن میں قرآن پاک کی بے حرمتی کے حالیہ واقعے پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے اسلام کے امن کے مذہب کے اصولوں پر روشنی ڈالی۔

افغانستان کی صورتحال، مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی جانب سے انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں اور اقلیتوں کے حقوق پر بھی بات چیت ہوئی۔

ڈان، جولائی 9، 2023 میں شائع ہوا۔



>Source link>

>>Join our Facebook Group be part of community. <<

By hassani

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *