گلگت بلتستان کی سپریم اپیلیٹ کورٹ (SAC) نے بدھ کے روز مختلف طریقہ کار کی بے ضابطگیوں کا حوالہ دیتے ہوئے نئے وزیراعلیٰ کے انتخاب میں تاخیر کی۔

ایک روز قبل گلگت بلتستان کی چیف کورٹ نے سابق وزیراعلیٰ خالد خورشید کو ریجن کی بار کونسل سے جعلی ڈگری کی بنیاد پر لائسنس حاصل کرنے کے الزام میں نااہل قرار دے دیا تھا۔

اس کے بعد پی ٹی آئی نے راجہ اعظم کو پارٹی کا امیدوار نامزد کیا تھا جبکہ پیپلز پارٹی نے امجد ایڈووکیٹ، ن لیگ نے انجینئر انور اور جمعیت علمائے اسلام نے رحمت خالق کو نامزد کیا تھا۔ امیدواروں کے کاغذات نامزدگی جمع کرانے کی آخری تاریخ دوپہر تھی جبکہ انتخاب آج سہ پہر 3 بجے ہونا تھا۔

تاہم سپریم کورٹ سے جاری ہونے والی پریس ریلیز میں کہا گیا ہے کہ جی بی ایس اے سی کے چیف جج جسٹس سردار محمد شمیم ​​خان نے الیکشن ملتوی کرنے کا حکم دیا۔

انہوں نے سپیکر جی بی اسمبلی نذیر احمد کو بھی حکم دیا کہ وہ الیکشن کے لیے کم از کم تین دن کا وقت دے کر کل عدالت میں نیا الیکشن شیڈول پیش کریں اور ہدایت کی کہ اسمبلی ممبران کو انتخابی شیڈول کے بارے میں پریس، ٹی وی یا تفصیلی نوٹس کے ذریعے آگاہ کیا جائے۔

پریس ریلیز میں کہا گیا کہ سماعت کی صدارت کرتے ہوئے جسٹس خان نے احمد سے پوچھا کہ آج کے انتخابی شیڈول کا اعلان اتنی جلدی میں کیوں کیا گیا، خاص طور پر جب اسپیکر کے خلاف تحریک عدم اعتماد پیش کی گئی تھی۔

عدالت نے گلگت بلتستان اسمبلی رول (3) آف پروسیجر اینڈ کنڈکٹ آف بزنس 2017 کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ انتخابی شیڈول کی تشہیر ٹیلی ویژن، اخبارات، ریڈیو اور گزٹ پبلیکیشنز کے ذریعے کرنا ضروری ہے۔

اس نے یہ بھی نوٹ کیا کہ ممبران اسمبلی کو ڈاک کے ذریعے انتخاب کے بارے میں مطلع کرنا ضروری تھا۔

>Source link>

>>Join our Facebook Group be part of community. <<

By hassani

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *