کراچی؛ مالی سال 23 کے پہلے 11 مہینوں میں مرکزی حکومت کے گھریلو قرض میں 6 ٹریلین روپے کا اضافہ ہوا ہے۔

اسٹیٹ بینک آف پاکستان (ایس بی پی) کی جانب سے بدھ کو جاری کردہ اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ پی ایم ایل این کی قیادت والی حکومت اپنے زیادہ اخراجات اور کم آمدنی کے درمیان فرق کو ختم کرنے کے لیے قرض لینے پر بہت زیادہ انحصار کرتی ہے۔

اسٹیٹ بینک کے اعداد و شمار کے مطابق، مرکزی حکومت کا گھریلو قرض مئی میں 31.085 ٹریلین روپے سے بڑھ کر 37.054 ٹریلین ہو گیا، جس میں 19.2 فیصد یا 5.969 ٹریلر کا اضافہ ظاہر ہوتا ہے۔

وسیع قرضوں کی وجہ سے قرض کی خدمت میں غیر معمولی اضافے نے مالی سال 24 کے بجٹ میں سنگین عدم توازن پیدا کر دیا ہے۔ حکومت قرض کی خدمت پر تقریباً 7.302 ٹریلین روپے خرچ کرے گی، جو کہ رواں مالی سال کے لیے 14.460 ٹریلین روپے کے کل بجٹ کے نصف سے زیادہ ہے۔

سبکدوش ہونے والے مالی سال میں حکومت نے 3.95tr روپے مختص کیے تھے جسے بعد میں 5.520tr روپے کردیا گیا۔

مزید تفصیلات سے پتہ چلتا ہے کہ حکومت نے صرف مئی میں نصف ٹریلین (505 ارب روپے) کا قرضہ لیا۔ مالیاتی حلقوں میں خیال کیا جا رہا ہے کہ جون کا اعداد و شمار (ابھی تک جاری نہیں کیا گیا) مالی سال کا اختتامی مہینہ ہونے کی وجہ سے تصفیہ کی ضرورت بہت زیادہ ہو گی۔

اسٹیٹ بینک کے اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ مالی سال 23 کے 11 مہینوں کے دوران مرکزی حکومت کے بیرونی قرضوں میں 30.8 فیصد اضافہ ہوا۔ روپے کے لحاظ سے 11 مہینوں کے دوران بیرونی قرضہ 5.161 ٹریلین روپے بڑھ کر 21.908 ٹریلین ہو گیا۔

رواں مالی سال کے دوران غیر ملکی قرضوں کی فراہمی مالی سال 23 سے زیادہ ہوگی۔ بجٹ دستاویز کے مطابق ملک مالی سال 23 کے بجٹ کے 510.972 ارب روپے کے مقابلے میں 872.219 ارب روپے خرچ کرے گا۔ بعد میں اسے 725.3 بلین روپے تک بڑھا دیا گیا۔

مالی سال 23 کے 11 مہینوں کے دوران مرکزی حکومت کا کل قرض 11.13 ٹر یا 23.3 فیصد بڑھ کر 58.962 ٹر روپے ہو گیا۔ پاکستان انویسٹمنٹ بانڈز (PIBs) کی نیلامی کے ذریعے سب سے زیادہ 4.592 ٹریلین روپے ادھار لیے گئے۔ مئی تک پی آئی بیز کا سٹاک 22.279 ٹریلین روپے تک پہنچ گیا۔

PIBs کے ذریعے بھاری قرضے لینے سے ظاہر ہوتا ہے کہ بینک اپنی رقم کو خطرے سے پاک اعلیٰ پیداوار والے سرکاری کاغذات میں پارک کر رہے تھے جس کے نتیجے میں نجی شعبے کی پیش قدمی میں سبکدوش ہونے والے مالی سال میں کمی آئی۔ یہ معاشی سرگرمیوں میں سست روی کی علامت ہے۔

حکومت کو توقع ہے کہ معیشت 0.29 فیصد تک بڑھے گی، لیکن بہت سے آزاد معاشی ماہرین نے مالی سال 23 میں سکڑاؤ کی پیش گوئی کی ہے۔

ڈان، جولائی 6، 2023 میں شائع ہوا۔



>Source link>

>>Join our Facebook Group be part of community. <<

By hassani

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *