لاہور: پاور سیکٹر کا گردشی قرضہ مئی کے آخر تک 2.65 ٹریلین روپے تک پہنچ گیا جو پچھلے مالی سال کے آغاز میں 2.25 ٹریلین روپے تھا – 11 ماہ میں 393 ارب روپے یا 18 فیصد کا چھلانگ۔

یہ مالی سال 22 کے اعداد و شمار کے بالکل برعکس تھا، جب قرضے میں 27 ارب روپے کی کمی ہوئی، جو سال کے آغاز میں 2.28 ٹریلین روپے سے بند ہونے تک 2.25 ٹریلین روپے تک پہنچ گئی، وزارت توانائی کے پاور ڈویژن کے اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے۔

ایک دستاویز کے مطابق، پاور سیکٹر کو کل ادائیگیاں 1.35 ٹریلین رہی، اس کے بعد جنریشن کمپنیوں (جینکوس) کو 101 بلین روپے اور پاکستان ہولڈنگ لمیٹڈ (پی ایچ ایل) کے قرض کے طور پر مالی سال 2021-22 میں 800 بلین روپے تھے۔

تاہم، مالی سال 2023 میں پاور پروڈیوسرز کو ادائیگیوں میں بڑے پیمانے پر اضافہ دیکھنے میں آیا، کیونکہ یہ 1.77 ٹریلین روپے تک پہنچ گیا، جب کہ جینکوز کو ادائیگیاں بڑھ کر 110 بلین روپے تک پہنچ گئیں۔ تاہم پی ایچ ایل کا قرضہ 765 ارب روپے تک گر گیا۔

مالی سال 22 میں، بجٹ شدہ لیکن غیر جاری کردہ سبسڈیز میں 12 ارب روپے کی کمی کی گئی تھی، لیکن 2022-23 کے پہلے 11 مہینوں (جولائی سے مئی) میں انہیں بڑھا کر 72 ارب روپے کر دیا گیا تھا۔ اسی طرح، مالی سال 2022 میں غیر بجٹ یا غیر دعویٰ کردہ سبسڈیز میں 133 ارب روپے کی کمی کی گئی تھی لیکن جولائی تا مئی میں 34 ارب روپے کا اضافہ کیا گیا تھا۔

2021-22 میں تاخیر سے ادائیگی پر آزاد پاور پروڈیوسرز (آئی پی پیز) کے سود کے چارجز بڑھ کر 105 بلین روپے ہو گئے لیکن مئی کے آخر تک کم ہو کر 87 بلین روپے رہ گئے۔

پی ایچ ایل کے ذریعہ آئی پی پیز کے دعووں پر ادا کردہ مارک اپ، جو 2021-22 میں 29 بلین روپے تک بڑھ گیا، مزید بڑھ کر 58 بلین روپے تک پہنچ گیا۔ زیر التواء جنریشن لاگت – سہ ماہی ٹیرف ایڈجسٹمنٹ (QTA) اور فیول چارج ایڈجسٹمنٹ (FCA) – 11 ماہ کی مدت میں Rs 414bn سے کم ہو کر Rs171bn ہو گئی۔

کے الیکٹرک کے زیر التواء واجبات 107 ارب روپے سے کم ہو کر 57 ارب روپے ہو گئے، اور پاور ڈسٹری بیوشن کمپنیوں (ڈسکوز) کا نا اہلی کی وجہ سے ہونے والا نقصان 133 ارب روپے سے کم ہو کر 125 ارب روپے ہو گیا۔

ڈان، 5 جولائی، 2023 میں شائع ہوا۔



>Source link>

>>Join our Facebook Group be part of community. <<

By hassani

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *