اتوار کو یہ بات سامنے آئی کہ عیدالاضحیٰ پر جانوروں کی قربانی کرنے پر احمدی برادری کے خلاف پنجاب بھر میں کم از کم پانچ فرسٹ انفارمیشن رپورٹس (ایف آئی آر) درج کی گئی ہیں۔

جس کی شکایات، کاپیاں ڈان ڈاٹ کام دیکھا ہے، کے تحت رجسٹرڈ کیا گیا ہے۔ دفعہ 298-C پاکستان پینل کوڈ (PPC) کا۔

PPC کا سیکشن 298-C احمدی گروپ کے کسی فرد کے لیے سزا کی وضاحت کرتا ہے جو خود کو مسلمان کہتا ہے یا اپنے عقیدے کی تبلیغ یا تبلیغ کرتا ہے۔

ٹوبہ ٹیک سنگھ کے صدر گوجرہ تھانے میں دو جبکہ ننکانہ صاحب کے صدر شاہکوٹ تھانے، فیصل آباد کے تھانہ روشن والا اور لاہور کے بادامی باغ تھانے میں ایک ایک مقدمہ درج کیا گیا ہے۔

یہ سپریم کورٹ کے 2022 کے فیصلے کے باوجود سامنے آیا ہے، جس میں کہا گیا تھا کہ غیر مسلموں کو ان کی عبادت گاہ کی حدود میں اپنے مذہب پر عمل کرنے سے روکنا آئین کے خلاف ہے۔

ٹوبہ ٹیک سنگھ میں درج دو ایف آئی آر میں سے ایک نے الزام لگایا کہ عید کے دوسرے دن، شکایت کنندہ اور دیگر نے احمدی شہریوں کو جانوروں کی قربانی کی تیاری کرتے ہوئے دیکھا اور انہیں “جرم” کرنے سے روکنے کی کوشش کی۔

شکایت کنندہ نے کہا کہ وہ یہ کہتے ہوئے آگے بڑھے کہ اس عمل سے مسلمانوں کے جذبات کو ٹھیس پہنچی۔ اس میں زیر بحث افراد کے خلاف سخت کارروائی کرنے اور جانور کی قربانی کے لیے استعمال ہونے والے گوشت، کھال اور اوزار برآمد کرنے کا بھی مطالبہ کیا گیا۔

اسی طرح کی ایف آئی آر بھی اسی تھانے میں درج کی گئی تھی۔ اس نے الزام لگایا کہ عید کے دوسرے دن دو احمدی شہری جانوروں کی قربانی کر رہے تھے۔

ننکانہ صاحب میں درج ایف آئی آر عیدالاضحی کے پہلے روز ایک اسسٹنٹ سب انسپکٹر کی شکایت پر درج کی گئی۔ شکایت کنندہ نے الزام لگایا کہ اسے کسی کا فون آیا کہ گاؤں میں احمدی برادری کے لوگ جانور قربان کر رہے ہیں، جس کی وجہ سے اس نے جا کر تفتیش کی اور دعویٰ کیا کہ اس نے احمدی برادری کو جانوروں کی قربانی کرتے ہوئے پایا۔

عید کے تیسرے دن تحریک لبیک پاکستان (ٹی ایل پی) کے کارکن کی شکایت پر فیصل آباد میں درج کی گئی ایف آئی آر میں دعویٰ کیا گیا کہ اس نے احمدی برادری کے ایک رکن کو جانوروں کی قربانی کرتے ہوئے دیکھا اور اس کے بعد پولیس ہیلپ لائن پر کال کی۔ جب اہلکار آئے تو پوچھ گچھ کرنے والا شخص موقع سے فرار ہو گیا، شکایت کنندہ نے الزام لگایا کہ ان کے خلاف کارروائی کی جائے۔

لاہور میں درج پانچویں ایف آئی آر میں کہا گیا ہے کہ اس کے پڑوس میں احمدی برادری کے کئی افراد جانوروں کی قربانی کر رہے تھے۔

>Source link>

>>Join our Facebook Group be part of community. <<

By hassani

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *