کراچی: نیشنل بزنس گروپ پاکستان کے چیئرمین اور پاکستان بزنس مین اینڈ انٹلیکچولز فور م کے صدر میاں زاہد حسین نے کہا ہے کہ نظرثانی شدہ بجٹ اور 215 ارب روپے کے نئے ٹیکسز کے نفاذ کے بعد آئی ایم ایف کے پاس قرضہ بند کرنے کا کوئی جواز نہیں ہے۔

انہوں نے کہا کہ اگر آئی ایم ایف نے قرضہ نہ دیا تو ملک کے دیوالیہ ہونے کا خدشہ بڑھ جائے گا کیونکہ دیگر ادارے اور بینک آئی ایم ایف کے قرض کے بعد ہی پاکستان کو قرضہ دیں گے۔

میاں زاہد حسین نے کہا کہ آئی ایم ایف کے مطالبات کے مطابق بجٹ میں بنیادی تبدیلیاں کی گئی ہیں اور حکومت کو توقع ہے کہ چند روز میں بین الاقوامی ادارے سے مثبت فیصلہ آئے گا۔

تاجر برادری سے گفتگو کرتے ہوئے بزرگ تاجر رہنما نے کہا کہ ان حالات میں ایک ناکام سیاسی جماعت کے مرکزی قائدین کی جانب سے منفی بیان بازی قابل مذمت ہے۔ تاجر رہنما نے کہا کہ آئی ایم ایف کا پروگرام تین دن میں ختم ہو رہا ہے تاہم اگر یہ ادارہ چاہے تو اس تاریخ کو بڑھا سکتا ہے کیونکہ حکومت نے ٹیکسوں میں 215 ارب روپے کا اضافہ کیا ہے اور اخراجات میں 85 ارب روپے کی کمی کی ہے۔

اس کے علاوہ بیرون ملک مقیم پاکستانیوں سے ملنے والی ایک لاکھ ڈالر کی مجوزہ معافی واپس لے لی گئی ہے، درآمدات پر سے پابندی ختم کر دی گئی ہے اور بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام کی فنڈنگ ​​میں 16 ارب روپے کا اضافہ کر دیا گیا ہے۔

میاں زاہد حسین نے مزید کہا کہ حکومت نے پٹرولیم لیوی 50 روپے سے بڑھا کر 60 روپے کرنے کا اعلان کیا ہے اس پر فوری عمل درآمد نہیں ہو سکتا جبکہ درآمدات پر سے پابندی اٹھانے کے اثرات چند روز بعد نظر آئیں گے کیونکہ ہمارا نظام خامیوں سے بھرا ہوا ہے۔ عمل سست ہے، جبکہ چھٹیاں بھی آ رہی ہیں۔

اس وقت 4 بلین ڈالر کا کارگو بندرگاہوں پر پڑا ہے جبکہ مرکزی بینک کے پاس صرف 3.54 بلین ڈالر ہیں۔ اس صورتحال سے نمٹنے کے لیے حکومت اسلامی ترقیاتی بینک سمیت مختلف ذرائع سے فوری قرضے حاصل کرنے کی کوشش کر رہی ہے کیونکہ آئی ایم ایف کے قرضے میں تاخیر ہو سکتی ہے یا موجودہ پروگرام ختم ہونے کی صورت میں ہمیں نئے پروگرام کا انتظار کرنا پڑ سکتا ہے۔

کاپی رائٹ بزنس ریکارڈر، 2023



>Source link>

>>Join our Facebook Group be part of community. <<

By hassani

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *