ریسکیو 1122 نے پیر کی سہ پہر کو جاری کردہ ایک بیان میں کہا کہ گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران پنجاب میں بارش سے متعلقہ واقعات میں کم از کم 20 افراد ہلاک ہوئے۔

صوبائی ایمرجنسی سروس کے ترجمان فاروق احمد کی طرف سے جاری کردہ بیان میں ہلاکتوں کی وجہ بجلی کا کرنٹ لگنے، ڈوبنے اور آسمانی بجلی گرنے سے بتائی گئی۔

اس نے مزید کہا کہ نارووال میں پانچ اور شیخوپورہ میں دو افراد آسمانی بجلی گرنے سے جاں بحق ہوئے۔ دریں اثناء صوبے میں 7 افراد ڈوب کر جاں بحق اور 6 افراد کرنٹ لگنے سے ہلاک ہوئے۔

بیان کے مطابق لاہور میں دیوار اور چھت گرنے کے واقعات میں 10، چنیوٹ میں تین اور شیخوپورہ میں ایک شخص زخمی ہوا۔ اس دوران آسمانی بجلی گرنے سے سات افراد زخمی ہو گئے۔

بیان میں مزید کہا گیا کہ کرنٹ لگنے کے 61 کیسز کو صوبے کے ہسپتالوں میں ریفر کیا گیا اور ان میں سے 54 کو فوری طبی امداد فراہم کی گئی۔

دریں اثنا، صحافی اور مصنف رضا احمد رومی نے سیلاب زدہ سڑکوں کی تصاویر شیئر کیں، جو ان کے بقول لاہور کے گارڈن ٹاؤن کی تھیں۔

تصاویر میں لوگوں کو سڑکوں پر گھٹنوں تک پانی سے گزرتے ہوئے دکھایا گیا ہے۔

رومی نے صورت حال پر تبصرہ کیا، “شہری ترقی کے ناکام ماڈل، سوچے سمجھے بنیادی ڈھانچے اور غیر فعال میونسپل گورننس کی واضح نشانیاں۔”

اسی طرح ڈیجیٹل رائٹس ایکٹیوسٹ نگہت داد نے بھی لاہور کے کیپٹن مبین شہید انڈر پاس کی ایک ویڈیو شیئر کی جس میں ایک گاڑی چھت تک پانی میں ڈوبی ہوئی دکھائی دے رہی ہے۔

“کیا کسی کو معلوم ہے کہ لاہور میں ہمارے پاس کتنے انڈر پاسز ہیں اور مون سون اور اربن فلڈنگ کے بارے میں لوکل گورنمنٹ کا ورک پلان کیا ہے؟” والد نے پوچھا.

بارش کی صورتحال کے پیش نظر لاہور میں ٹریفک پولیس نے شہر کے نشیبی علاقوں میں مصروف سڑکوں اور راستوں پر اضافی وارڈنز تعینات کر دیئے۔ سٹی ٹریفک آفیسر (سی ٹی او) مستنصر فیروز کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ فورک لفٹر بھی مختلف مقامات پر تعینات کیے گئے تھے۔

سی ٹی او نے لوگوں سے کہا کہ بارش کے دوران احتیاط برتیں، احتیاط سے گاڑی چلائیں، بجلی کی تنصیبات اور کھمبوں سے دور رہیں اور غیر ضروری سفر سے گریز کریں۔

اطلاع دی نگراں وزیراعلیٰ پنجاب سید محسن نقوی نے صوبائی انتظامیہ، پراونشل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی، ریسکیو 1122 اور واٹر اینڈ سینی ٹیشن ایجنسی کو موسلا دھار بارش کے پیش نظر آئندہ 24 گھنٹے الرٹ رہنے کی ہدایت کی ہے۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ وزیر نے متعلقہ افسران کو فیلڈ میں رہنے کو کہا اور کہا کہ “ڈرینج کے کام میں لاپرواہی برداشت نہیں کی جائے گی”۔

انہوں نے کہا کہ ضروری مشینری کے استعمال کے ساتھ بارش کے پانی کی نکاسی کو مقررہ وقت میں یقینی بنایا جائے اور ٹریفک کی بلا تعطل روانی کو یقینی بنانے کے لیے خصوصی انتظامات کیے جائیں۔

وزیر خارجہ بلاول بھٹو زرداری نے پنجاب میں آسمانی بجلی گرنے سے ہلاکتوں پر دکھ کا اظہار کیا ہے۔



>Source link>

>>Join our Facebook Group be part of community. <<

By hassani

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *