صوابی: پاکستان تحریک انصاف کے ذرائع نے بتایا کہ سابق سپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر کے اہل خانہ برطانیہ پہنچ گئے۔ ڈان کی یہاں اتوار کو

ان کا کہنا تھا کہ برطانیہ کا سفر کرنے کا فیصلہ ملک کی موجودہ نازک صورتحال اور پی ٹی آئی کے چیئرمین عمران خان کی گرفتاری کے بعد 9 مئی کو ہونے والے فسادات کے بعد سے پی ٹی آئی کے رہنماؤں اور کارکنوں کو نشانہ بنانے کی وجہ سے کیا گیا ہے۔

ذرائع نے بتایا کہ “یہ فیصلہ خاندان کے پاس رکھا گیا تھا اور مسٹر قیصر کے بھائی، سابق ایم پی اے عاقب اللہ خان اور دیگر نے لیا تھا۔”

یہ واضح نہیں ہے کہ مسٹر قیصر کے اہل خانہ فلائٹ میں کہاں سے سوار ہوئے تھے، تاہم کسی بھی پریشانی سے بچنے کے لیے پاکستان چھوڑنے کا منصوبہ خفیہ رکھا گیا تھا، ذرائع نے بتایا کہ سابق قومی اسمبلی کے اسپیکر عدالتی مقدمات کا سامنا کرنے کے لیے ملک میں ہی رہیں گے۔ عمران خان کو ایسے وقت میں غیر متزلزل حمایت فراہم کریں جب متعدد سابق پارلیمنٹیرینز نے پی ٹی آئی کو خیرباد کہہ دیا تھا۔

ذرائع نے بتایا کہ یہ فیصلہ محکمہ ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن کے اہلکاروں کی جانب سے حال ہی میں مرغوز میں مسٹر قیصر کی رہائش گاہ پر چھاپہ مار کر دو گاڑیاں چھیننے کے بعد لیا گیا، جنہیں بعد میں واپس کر دیا گیا۔

مسٹر قیصر نے اس چھاپے کو سرحدی اور بنیادی انسانی حقوق اور پختون روایات کے تقدس کی خلاف ورزی قرار دیتے ہوئے اس کی مذمت کی تھی۔ انہوں نے ملک میں حقیقی جمہوریت، قانون کی حکمرانی اور آئین کی بالادستی تک جدوجہد جاری رکھنے کا عزم کیا۔

گولی مار کر ہلاک: ایک سابق پولیس کانسٹیبل اس وقت ہلاک ہو گیا جب اتوار کو یار حسین گاؤں کے علاقے میں اسلام آباد-پشاور موٹروے کی سروس روڈ پر نامعلوم حملہ آوروں نے اس کی گاڑی پر فائرنگ کر دی۔

حکام نے بتایا کہ علی مرتضیٰ کو پولیس سروس سے برطرف کر دیا گیا ہے تاہم انہوں نے اس فیصلے کے خلاف صوبائی سروس ٹربیونل میں درخواست دائر کی تھی۔

موقع کا دورہ کرنے والے ایک اہلکار نے بتایا کہ حملے میں مرتضیٰ موقع پر ہی ہلاک ہو گئے۔ انہوں نے کہا کہ حملہ آور واردات کے فوراً بعد فرار ہو گئے۔

متوفی کا تعلق رزار کے گاؤں سرد چینہ سے تھا۔

یار حسین پولیس نے نامعلوم حملہ آوروں کے خلاف ایف آئی آر درج کر لی۔

ڈان، جون 26، 2023 میں شائع ہوا۔



>Source link>

>>Join our Facebook Group be part of community. <<

By hassani

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *