چیف جسٹس آف پاکستان (سی جے پی) عمر عطا بندیال نے پیر کو کہا کہ انہیں توقع ہے کہ سپریم کورٹ (ایس سی) میں معاملہ زیر سماعت ہونے کے دوران فوجی عدالتوں میں کسی عام شہری پر مقدمہ نہیں چلایا جائے گا۔

چیف جسٹس نے کہا کہ فوج کی تحویل میں موجود تمام 102 افراد کو ان کے اہل خانہ سے ملنے کی اجازت دی جائے۔

اس سے قبل، سات رکنی سپریم کورٹ جو شہریوں کے فوجی ٹرائل کو چیلنج کرنے والی درخواستوں کے ایک سیٹ کی سماعت کر رہی تھی، جسٹس منصور علی شاہ کے کیس کی سماعت سے خود کو الگ کرنے کے بعد دوسری بار تحلیل کر دی گئی۔

سماعت کے دوران اٹارنی جنرل فار پاکستان (اے جی پی) منصور عثمان اعوان نے جسٹس شاہ کی بینچ میں شمولیت پر حکومت کے اعتراضات کو ریلے کرتے ہوئے کہا کہ درخواست گزاروں میں سے ایکسابق چیف جسٹس جواد ایس خواجہ کا تعلق ان سے تھا۔

‘بنچ آپ کی مرضی سے نہیں بنے گا،’ چیف جسٹس نے برہمی کا اظہار کیا۔ انہوں نے اے جی پی سے پوچھا کہ وہ جسٹس شاہ پر اعتراض کس بنیاد پر کر رہے ہیں۔

اٹارنی جنرل نے جواب دیا کہ جسٹس شاہ کا مفادات کا ٹکراؤ ہے۔

اس کے بعد جج شاہ نے بھی کیس کی سماعت سے خود کو الگ کر لیا۔

سماعت دوبارہ شروع ہونے پر چیف جسٹس نے چھ رکنی بینچ تشکیل دیا جس میں جسٹس اعجاز الاحسن، جسٹس منیب اختر، جسٹس یحییٰ آفریدی، جسٹس سید مظاہر علی اکبر نقوی اور جسٹس عائشہ ملک شامل تھے۔

اصل میں اس کیس کی سماعت کے لیے نو بنچ کی بنچ تشکیل دی گئی تھی۔ تاہم پہلی سماعت پر جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے کہا تھا کہ انہوں نے اس پر غور نہیں کیا۔ سپریم کورٹ بنچ “ایک بنچ” جسٹس سردار طارق مسعود نے بھی اعتراضات اٹھائے تھے۔

بعد ازاں سماعت دوبارہ شروع ہونے پر چیف جسٹس نے سات رکنی بنچ تشکیل دیا۔

پچھلی سماعت کے دوران اے جی پی نے عدالت عظمیٰ کو بتایا کہ ملک بھر میں 102 افراد فوجی حراست میں ہیں، ان میں سے کوئی بھی عورت یا نابالغ نہیں، اور ابھی تک فوجی عدالتوں میں خواتین اور نابالغوں کا مقدمہ چلانے کا کوئی فیصلہ نہیں کیا گیا ہے۔

اے جی پی اعوان نے مزید کہا کہ کوئی صحافی یا وکیل فوجی حراست میں نہیں ہے۔

چیف جسٹس نے عندیہ دیا کہ منگل تک جو کہ عید کی وجہ سے کام کا آخری دن ہے، فوری کارروائی کے نتائج کا اعلان کر دیں۔ عدالت چاہتی تھی کہ سماعت کا نتیجہ “سادہ ہے اور فوری نہیں”۔



>Source link>

>>Join our Facebook Group be part of community. <<

By hassani

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *