کراچی: نیشنل بزنس گروپ پاکستان کے چیئرمین اور پاکستان بزنس مین اینڈ انٹلیکچولز فورم کے صدر میاں زاہد حسین نے کہا ہے کہ آئی ایم ایف پروگرام کی معطلی کو دس ماہ گزر چکے ہیں، ہمارے زرمبادلہ کے ذخائر کم ترین سطح کو چھو رہے ہیں اور درآمدات بھی روکی جا رہی ہیں۔ زرمبادلہ کی کمی کی وجہ سے

اب جب کہ آئی ایم ایف پروگرام کی بحالی کی تمام امیدیں دم توڑتی نظر آ رہی ہیں، حکومت کو چاہیے کہ وہ اپنے ‘پلان بی’ پر عوام اور تاجر برادری کو اعتماد میں لے تاکہ ملک کو ڈیفالٹ سے بچایا جا سکے اور معیشت کو بحال کیا جا سکے۔ خطاب کیا جائے، انہوں نے مطالبہ کیا

انہوں نے کہا کہ آئی ایم ایف کا موجودہ ای ایف ایف پروگرام ایک ہفتے میں ختم ہو رہا ہے اور اب قسط کے امکانات کم ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ وزیر اعظم میاں شہباز شریف کی آئی ایم ایف کے ایم ڈی سے ملاقات کے نتیجے میں اگر معطل شدہ قرضہ دیا جاتا ہے تو بین الاقوامی ادارے اور پاکستان دونوں کو ایسا کرنے کے لیے خصوصی اقدامات کرنے ہوں گے۔

میاں زاہد حسین نے کہا کہ آئی ایم ایف کو اپنی کچھ شرائط سے دستبردار ہونا پڑے گا اور پاکستان کو بھی وفاقی بجٹ میں تبدیلیاں کرنا ہوں گی۔

انہوں نے کہا کہ وزیر خزانہ اسحاق ڈار پہلے ہی کہہ چکے ہیں کہ آئی ایم ایف پاکستان کے معاملے کو جیو پولیٹیکل طور پر دیکھ رہا ہے جو کسی حد تک درست معلوم ہوتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ وزیراعظم کے علاوہ وزیر خزانہ اسحاق ڈار بھی پروگرام کی بحالی کے لیے امریکہ اور اہم ممالک کے سفیروں سے ملاقاتیں کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ حکومت نے آئی ایم ایف کی بیشتر شرائط پوری کر دی ہیں تاہم چھ ارب ڈالر کی مالی ضروریات کے مقابلے میں 4 ارب ڈالر کا انتظام کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وزیر خزانہ نے یہ بھی واضح کیا ہے کہ آئی ایم ایف کے لیے قومی مفادات کو قربان نہیں کیا جا سکتا، ایسی صورت میں آئی ایم ایف کا غیر لچکدار رویہ پروگرام کو بحال کرنا ناممکن بنا دیتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ آئی ایم ایف کی وجہ سے پاکستان نے شرح سود بڑھا کر 21 فیصد کر دی ہے، پیٹرولیم لیوی 50 روپے فی لیٹر کر دی گئی ہے، روپے کی قدر میں بھی کمی کی گئی ہے۔ لیکن قرض دہندہ اب بھی مطمئن نہیں ہے۔

آئی ایم ایف نے بھی موجودہ بجٹ کو اپنے پروگرام کی بنیادی شرائط کے خلاف جانے والا قرار دیا ہے جس میں ٹیکس بیس میں اضافہ اور ناکام سرکاری اداروں میں اصلاحات شامل ہیں۔

معیشت کو پہنچنے والے نقصان کی ایک وجہ یہ بھی ہے کہ حکومت توانائی کے شعبے سمیت کسی بھی شعبے میں اصلاحات نافذ کرنے اور نقصانات کو کم کرنے کے بجائے ٹیرف بڑھا دیتی ہے جس سے عوام اور معیشت متاثر ہوتی ہے۔ پاور سیکٹر میں خسارہ کم کرنے کے بجائے اس کی قیمت میں بار بار اضافہ کیا جا رہا ہے لیکن صورتحال بہتر ہونے کے بجائے مزید خراب ہوتی جا رہی ہے۔

کاپی رائٹ بزنس ریکارڈر، 2023



>Source link>

>>Join our Facebook Group be part of community. <<

By hassani

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *