اقوام متحدہ: پاکستان نے اس ہفتے اقوام متحدہ کی قرارداد کی منظوری میں کلیدی کردار ادا کیا جس میں انسانی حقوق اور قانون کی حکمرانی کو دہشت گردی کے خلاف جنگ کی بنیادی بنیاد کے طور پر شامل کیا گیا ہے۔

193 رکنی اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی نے اس ہفتے نیویارک میں اقوام متحدہ کی عالمی انسداد دہشت گردی کی حکمت عملی (GCTS) کے اپنے 8ویں دو سالہ جائزے کے عمل کا اختتام ایک قرارداد کی منظوری کے ساتھ کیا جو دہشت گردی کو شکست دینے کے لیے عالمی حکمت عملی کے چار ستونوں پر روشنی ڈالتی ہے۔

انسانی حقوق اور قانون کی حکمرانی کے احترام کا مطالبہ کرنے کے علاوہ، قرارداد میں دہشت گردی کے پھیلاؤ کے لیے سازگار حالات سے نمٹنے، اس کی روک تھام اور اس سے نمٹنے اور ریاستوں کی استعداد کار بڑھانے اور ایسا کرنے کے لیے اقوام متحدہ کے نظام کے کردار کو مضبوط بنانے کا بھی مطالبہ کیا گیا ہے۔

جنرل اسمبلی نے رکن ممالک کی تہذیبوں کے درمیان مکالمے اور بین المذاہب اور بین الثقافتی افہام و تفہیم اور انسداد دہشت گردی کے تعاون کے اہم عناصر کے طور پر احترام کے پروگرام تیار کرنے کی بھی حوصلہ افزائی کی۔

ویک اینڈ کے دوران جاری ہونے والی اقوام متحدہ کی رپورٹ کے مطابق پاکستان کے نمائندے نے اجتماع کو بتایا کہ ان کا ملک دہشت گردی کے خلاف جنگ میں سب سے آگے رہا ہے اور اس نے 80 ہزار سے زائد جانوں کا نذرانہ پیش کیا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ “ہمارے پڑوس میں بگاڑنے والے ہمیں نشانہ بناتے رہتے ہیں۔”

پاکستانی نمائندے نے اقوام متحدہ بالخصوص سلامتی کونسل پر زور دیا کہ وہ طویل، غیر حل شدہ تنازعات اور غیر ملکی قبضے کی صورت حال کو حل کرے۔

انہوں نے کہا کہ “غیر ملکی قبضے کے تحت لوگوں پر ظلم و ستم کا جواز فراہم کرنے کے لیے خود ارادیت اور قومی آزادی کی جدوجہد کو دہشت گردی کے طور پر پیش کرنے کی مہم جاری ہے۔”

پاکستان نے عالمی ادارے پر زور دیا کہ وہ دہشت گردی کی واضح تعریف کرے اور اسے قومی آزادی اور خود ارادیت کے لیے جائز جدوجہد سے الگ کرے۔ اس نے اس بات پر افسوس کا اظہار کیا کہ متن میں اسلامو فوبیا اور نسل پرستی کے حوالے شامل کرنے کی تجاویز “سائیڈ لائن” تھیں، جس نے متن کو حتمی شکل دینے میں “چیری چننے کے طریقہ کار” کے بارے میں سنگین سوالات اٹھائے تھے۔

پاکستانی نمائندے نے کہا کہ ’’اشتعال انگیزی اور نفرت کی کارروائیوں کی مذمت کرنے میں ناکامی یہ واضح پیغام دیتی ہے کہ مسلمانوں کے خلاف دہشت گردی کو برداشت کیا جائے گا۔‘‘

اقوام متحدہ کی رپورٹ میں بھارتی نمائندے کا بیان بھی شامل ہے، حالانکہ بھارت نے قرارداد کے مسودے سے اتفاق نہیں کیا، جسے پاکستان سمیت شریک سہولت کاروں کی طرف سے گردش میں لایا گیا۔

ڈان، جون 26، 2023 میں شائع ہوا۔



>Source link>

>>Join our Facebook Group be part of community. <<

By hassani

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *