کراچی: نیشنل بزنس گروپ پاکستان کے چیئرمین اور پاکستان بزنس مین اینڈ انٹلیکچولز فورم کے صدر میاں زاہد حسین نے کہا ہے کہ معاشی ترقی لوگوں کی حالت بہتر بنانے اور انہیں روزگار فراہم کرنے کا ذریعہ ہے اور ہمیں اپنے نوجوانوں کی صلاحیتوں کو بروئے کار لانا ہوگا۔ خواتین

معیشت کو اس وقت مشکل صورتحال کا سامنا ہے، آئی ایم ایف کا پروگرام رک گیا ہے اور اس کے ختم ہونے میں چند دن باقی ہیں اور پاکستان کو آئندہ چند ماہ میں 20 سے 25 ارب ڈالر کے قرضے واپس کرنے ہیں یا یہ قرضے لینے ہیں۔ دوبارہ شیڈول

وزیر اعظم شہباز شریف کی جانب سے اقتصادی بحالی کے منصوبے کے اعلان کا خیر مقدم کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ عوام اور تاجر برادری پریشان ہیں، پیداواری صورتحال تشویشناک ہے، بینک درآمدات کے لیے زرمبادلہ فراہم نہیں کر رہے اور سرمایہ کاروں کا اعتماد مسلسل گر رہا ہے۔

سب سے زیادہ غیر یقینی صورتحال پیداواری شعبے میں ہے، اس لیے ایسے منصوبے کا آغاز وقت کی ضرورت ہے، لیکن اس کے ابتدائی نتائج ظاہر کرنے میں کم از کم ایک سال کا وقت لگے گا۔

میاں زاہد حسین نے کہا کہ اس منصوبے کے ساتھ ساتھ ہمیں کاروباری لاگت کو بھی کم کرنے کی ضرورت ہے تاکہ برآمدات بڑھ سکیں۔

انہوں نے کہا کہ ایف اکنامک ریکوری پلان پراجیکٹ کے نفاذ سے 100 بلین ڈالر کی غیر ملکی سرمایہ کاری کو راغب کرنے کی توقع ہے اور یہ منصوبہ پاکستان کے لیے گیم چینجر ثابت ہو سکتا ہے۔

میاں زاہد حسین نے کہا کہ منصوبے کے اعلان کے وقت آرمی چیف، چاروں صوبائی وزرائے اعلیٰ، سینئر وفاقی و صوبائی وزراء اور اعلیٰ افسران کی موجودگی ظاہر کرتی ہے کہ اسے تمام شراکت داروں اور فوج کی مکمل حمایت حاصل ہے جو کہ بہت حوصلہ افزا ہے۔ .

انہوں نے کہا کہ فیصلوں پر عملدرآمد کے لیے وزیراعظم کی سربراہی میں خصوصی سرمایہ کاری سہولت کونسل قائم کی گئی ہے تاکہ زوال پذیر معیشت کو فروغ دینے کے لیے سرمایہ کاری کے منصوبوں کو باآسانی پایہ تکمیل تک پہنچایا جا سکے۔

انہوں نے کہا کہ منصوبے کے مطابق دفاعی پیداوار، زراعت، لائیو سٹاک، معدنیات اور توانائی کے شعبوں کی ترقی پر خصوصی توجہ دی جائے گی اور دوست ممالک سے سرمایہ کاری کو راغب کیا جائے گا۔ انہوں نے مزید کہا کہ براہ راست غیر ملکی سرمایہ کاری کو بھی راغب کیا جائے گا، اور مختلف قانونی اور انتظامی مسائل کی وجہ سے سرمایہ کاری کے منصوبے معطل نہیں ہوں گے۔

انہوں نے کہا کہ ترقیاتی منصوبوں کی رفتار تیز کرنے اور سرمایہ کاروں کو سہولت فراہم کرنے کے لیے کونسل کے تحت ایک ایگزیکٹو کمیٹی بھی بنائی جائے گی تاکہ کونسل کے فیصلوں پر موثر عملدرآمد ہو سکے اور سرمایہ کاروں کو مختلف دفاتر میں وقت ضائع نہ کرنا پڑے۔ منصوبے کے مطابق مرکز اور صوبوں کے درمیان رابطے اور رابطوں کو بڑھایا جائے گا تاکہ سرمایہ کاری کے منصوبوں پر عمل درآمد کی رفتار کو بغیر کسی رکاوٹ کے بڑھایا جا سکے۔

آرمی چیف نے اس منصوبے کی کامیابی میں مکمل تعاون کی یقین دہانی بھی کرائی ہے جو کہ ملکی ترقی اور خوشحالی کو یقینی بنانے میں بنیادی حیثیت رکھتا ہے۔

کاپی رائٹ بزنس ریکارڈر، 2023



>Source link>

>>Join our Facebook Group be part of community. <<

By hassani

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *