پاکستان سٹاک ایکسچینج (PSX) میں جمعہ کو رینج باؤنڈ سیشن دیکھنے میں آیا اور KSE-100 انڈیکس میں 0.21 فیصد اضافہ ہوا جس کی وجہ الٹا اور نیچے کے دباؤ کے امتزاج ہے۔

معاشی اور سیاسی عدم استحکام نے انڈیکس پر فروخت کا دباؤ بڑھایا اور اسے بلند و بالا منافع پوسٹ کرنے سے روک دیا۔ سرمایہ کار بڑی حد تک سائیڈ لائن پر رہے جس کے نتیجے میں پتلی مقداریں آئیں۔

کے ایس ای 100 انڈیکس 86.22 پوائنٹس یا 0.21 فیصد اضافے سے تجارتی سیشن 41,352.99 پر بند ہوا۔

ہنگامہ خیز تجارتی سیشن میں KSE-100 0.15% آف لوڈ کرتا ہے۔

کاروبار کا آغاز ملے جلے نوٹ پر ہوا اور مارکیٹ پہلے سیشن کے دوران اتار چڑھاؤ کا شکار رہی۔ دوسرے سیشن کا آغاز قلیل مدتی اضافے کے ساتھ ہوا اور مارکیٹ دن کے بیشتر حصے میں تنگ رینج میں تجارت کرتی رہی اور معمولی فائدہ کے ساتھ بند ہوئی۔

کیمیکل اور فرٹیلائزر کے شعبوں میں دن کا اختتام سبز رنگ میں ہوا جبکہ کیمیکل اور آئل کی جگہ سرخ رنگ میں بند ہوئی۔ دوسری جانب آٹو موبائل اور بینکنگ سیکٹر ملے جلے بند ہوئے۔

عارف حبیب لمیٹڈ کی ایک رپورٹ نے اس بات پر زور دیا کہ ہفتہ PSX میں ایک اور ملے جلے سیشن کے ساتھ اختتام پذیر ہوا۔

اس نے کہا، “ملک کی نازک سیاسی اور اقتصادی حالت کے نتیجے میں، بینچ مارک KSE-100 انڈیکس کا ایک حد تک محدود سیشن تھا۔” “سرمایہ کاروں نے تجارتی سیشن کے دوران محتاط رہنے کا انتخاب کیا، کیونکہ ضمنی سرگرمی دیکھی گئی۔”

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ حجم فلیٹ تھے، جبکہ سیمنٹ ڈسپیچ نمبرز میں خاطر خواہ اضافے کے بعد سیمنٹ کا شعبہ نمایاں رہا۔

کیپیٹل اسٹیک کی ایک رپورٹ نے روشنی ڈالی کہ PSX نے جمعہ کے روز ایک اور غیر مستحکم سیشن ختم کیا۔

“انڈیکس دونوں زونز کے درمیان ٹریڈ ہوئے جبکہ حجم آخری بند سے گرا،” اس نے کہا۔

بینچ مارک KSE-100 انڈیکس کو منفی زون کی طرف دھکیلنے والے شعبوں میں بینکنگ (56.29 پوائنٹس)، خوراک اور ذاتی نگہداشت کی مصنوعات (26.62 پوائنٹس) اور ٹیکسٹائل کمپوزٹ (10.00 پوائنٹس) شامل ہیں۔

آل شیئر انڈیکس کا حجم جمعرات کو 99.95 ملین سے کم ہو کر 99.55 ملین پر آگیا، جبکہ ٹریڈ ہونے والے حصص کی مالیت گزشتہ سیشن میں 2.9 بلین روپے سے بڑھ کر 3.3 بلین روپے تک پہنچ گئی۔

پاکستان انٹرنیشنل بلک ٹرمینل 10.4 ملین حصص کے ساتھ والیوم لیڈر رہا، اس کے بعد ورلڈ کال ٹیلی کام 9.4 ملین حصص اور ڈی جی خان سیمنٹ 8.1 ملین شیئرز کے ساتھ دوسرے نمبر پر رہا۔

جمعہ کو 296 کمپنیوں کے حصص کا کاروبار ہوا جن میں سے 146 کے بھاؤ میں اضافہ، 120 میں کمی اور 30 ​​کے بھاؤ میں کوئی تبدیلی نہیں ہوئی۔



>Source link>

>>Join our Facebook Group be part of community. <<

By hassani

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *