اسلام آباد: پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے وائس چیئرمین شاہ محمود قریشی کی رہائی اس وجہ سے موخر کر دی گئی ہے کہ وہ ‘بے ہنگم’ مظاہروں میں شامل ہونے سے باز رہنے کا حلف فراہم کرنے میں بظاہر ہچکچاہٹ کا شکار ہیں۔

اسلام آباد ہائی کورٹ کے جسٹس میاں گل حسن اورنگزیب نے شاہ محمود قریشی اور پی ٹی آئی رہنما شہریار آفریدی کی اہلیہ کی نظر بندی کے حکم کو کالعدم قرار دے دیا۔ جج نے احتیاط اور تشدد سے دوری پر زور دیتے ہوئے ان سے ایک حلف نامہ بھی طلب کیا۔

مسٹر قریشی کی بیٹی نے یہ درخواست دائر کی تھی کہ مینٹیننس آف پبلک آرڈر (ایم پی او) کے تحت ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ کی طرف سے جاری کردہ اپنے والد کے خلاف نظر بندی کے حکم کو کالعدم قرار دیا جائے۔

وکیل نے عدالت کے روبرو دلائل دیتے ہوئے کہا کہ قریشی 65 سالہ شخص ہیں اور اپنے کئی دہائیوں کے سیاسی کیریئر میں انہوں نے کبھی بھی عوام کو حکومت یا کسی ادارے کے خلاف نہیں اکسایا۔

وکیل نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ پی ٹی آئی رہنما نے ایک ویڈیو پیغام میں پارٹی کارکنوں کو تخریب کاری کی سرگرمیوں میں ملوث ہونے سے باز رہنے کا مشورہ دیا تھا۔

اسلام آباد ہائی کورٹ نے علی محمد خان اور ملیکہ بخاری کی دوبارہ گرفتاری کے لیے اے جی اور آئی جی اسلام آباد کو نوٹس جاری کر دیے

تاہم، جب عدالت کو بتایا گیا کہ مسٹر قریشی کوئی واضح حلف نامہ دینے سے گریزاں ہیں، تو وکیل دفاع نے حلف نامہ داخل کرنے کے لیے اضافی وقت کی درخواست کی۔

اسی عدالت نے اٹارنی جنرل اور اسلام آباد پولیس کے انسپکٹر جنرل کو نوٹسز جاری کیے جس میں عدالت کی جانب سے نظر بندی کے احکامات کو کالعدم قرار دینے کے بعد پی ٹی آئی رہنماؤں علی محمد خان اور ملیکہ بخاری کی دوبارہ گرفتاری کے لیے دونوں حکام کے خلاف توہین عدالت کی کارروائی کی درخواست کی گئی تھی۔

عدالت کو بتایا گیا کہ اسلام آباد ہائی کورٹ کے ان کی رہائی کے فیصلے کے باوجود دونوں رہنما اڈیالہ جیل میں نظر بند ہیں۔

ڈاکٹر مزاری کی نظربندی

جسٹس اورنگزیب نے ڈاکٹر شیریں مزاری کی دوبارہ گرفتاری پر پولیس حکام کے خلاف توہین عدالت کی درخواست کی بھی سماعت کی۔

اے جی پی منصور عثمان اعوان عدالت میں پیش ہوئے۔ جسٹس اورنگزیب نے نشاندہی کی کہ عدالت نے ڈاکٹر مزاری کی رہائی کا حکم دیا تھا لیکن ایسا لگتا ہے کہ ریاست عدالتی حکم پر عمل کرنے سے گریزاں ہے۔

اے جی پی نے اعتراف کیا کہ ڈاکٹر مزاری کو دوبارہ گرفتار نہیں کیا جانا چاہیے تھا۔

عدالت نے انہیں اس معاملے کو مجاز فورم کے سامنے رکھنے کی ہدایت کی۔

20 مئی 2023 کو ڈان میں شائع ہوا۔



>Source link>

>>Join our Facebook Group be part of community. <<

By hassani

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *