’’میرے پاکستانیو، جب میرے یہ الفاظ آپ تک پہنچیں گے تو میں پہلے ہی ایک غیر قانونی کیس میں بند ہو جاؤں گا۔ اس کے بعد آپ سب سمجھ لیں کہ بنیادی حقوق، قانون اور جمہوریت دفن ہو چکے ہیں۔

شاید یہ ممکن ہے کہ مجھے آپ سے دوبارہ بات کرنے کا موقع نہ ملے۔ اس لیے میں دو تین چیزوں کے بارے میں بات کرنا چاہتا ہوں۔

پاکستانی عوام مجھے 50 سال سے جانتی ہے۔ میں 50 سال سے عوام کی نظروں میں ہوں، میں کبھی پاکستان کے آئین کے خلاف نہیں گیا اور میں نے کبھی قانون نہیں توڑا۔ جب سے میں سیاست میں ہوں، میں نے ہمیشہ یہی کوشش کی ہے۔ [all] میری جدوجہد پرامن اور آئین کے دائرے میں رہے گی۔

آج جو کچھ کیا جا رہا ہے اس کی وجہ یہ نہیں کہ میں نے کوئی قانون توڑا ہے بلکہ صرف اس لیے ہے کہ میں اس سے پیچھے ہٹوں حقیقی آزادی تحریک

یہ اس لیے کیا جا رہا ہے کہ میں بدمعاشوں کی اس کرپٹ چال کو قبول کروں جو ہم پر مسلط کی گئی ہے۔ وہ چاہتے ہیں کہ میں انہیں قبول کروں۔

میں آج سب سے اپیل کرتا ہوں کہ آپ سب کو باہر نکلنا ہوگا۔ آزادی تھالی میں نہیں دی جاتی، اس کے لیے آپ کو محنت اور جدوجہد کرنی پڑتی ہے۔



>Source link>

>>Join our Facebook Group be part of community. <<

By hassani

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *