اسلام آباد: وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے دفاعی امور ملک احمد خان نے کہا ہے کہ پارلیمنٹ پاکستان کا اعلیٰ ادارہ ہے۔

انہوں نے نجی ٹیلی ویژن سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ مفاد عامہ کے تمام فیصلے پارلیمنٹ کے فورم پر ہونے چاہئیں۔

انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ بھی اس ملک کا ایک اہم ادارہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ پارلیمنٹ قانون سازی کی ذمہ دار ہے۔

پنجاب میں انتخابات پر تبصرہ کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ یہی قانون خیبرپختونخوا میں بھی لاگو ہونا چاہیے اور پی ٹی آئی کی جانب سے اسمبلیاں تحلیل کرنے کے بعد 90 دن میں انتخابات کرائے جائیں۔ انہوں نے کہا کہ قانون سب کے لیے برابر ہے۔ انہوں نے کہا کہ صرف پنجاب میں انتخابات کے انعقاد کا کوئی جواز نہیں ہے۔

سوموٹو سے متعلق سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ کو الیکشن نہ کرانے پر کے پی کے کے خلاف سوموٹو لینا چاہیے۔

پاکستان مسلم لیگ (ن) کے رہنماؤں کے خلاف عدلیہ کے سابقہ ​​فیصلوں کے بارے میں ایک سوال کے جواب میں ملک احمد خان نے کہا کہ ثاقب نثار کے فیصلوں کی وجہ سے نواز شریف اور شہباز شریف حکومت کو مشکل وقت کا سامنا کرنا پڑا۔

عمران خان کی سیاست کے بارے میں ان کا کہنا تھا کہ پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے رہنما ان کی حکومت گرانے کے لیے ’امریکی سازش‘ کا لفظ استعمال کرتے رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ IK کو اختیارات سے ہٹانے کے لیے کوئی بیرونی طاقت یا امریکی سازش نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ عمران خان کو عدم اعتماد کے ووٹ کے ذریعے ہٹایا گیا۔ انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی رہنما نے قومی اداروں کے سربراہوں کے خلاف بھی جھوٹے بیانات کا استعمال کیا۔ انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کے رہنما ذاتی مفادات کے حصول کے لیے قومی اداروں پر حملے میں ملوث پائے گئے۔

انہوں نے کہا کہ عمران کے تمام سیاسی حربے ناکام ہو گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ عمران خان کمزور پالیسیوں اور منفی پروپیگنڈے کی وجہ سے ناکام لیڈر بن چکے ہیں۔

انتخابات سے متعلق ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ پاکستان میں ایک ساتھ انتخابات ہونے چاہئیں۔

انہوں نے کہا کہ الیکشن کمیشن قومی اسمبلی کی آئینی مدت پوری ہونے کے بعد شفاف انتخابات کرا سکتا ہے۔



>Source link>

>>Join our Facebook Group be part of community. <<

By hassani

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *