اسلام آباد: جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے نوٹ کیا کہ اگر رجسٹرار، جج یا یہاں تک کہ چیف جسٹس مقدمات کے تعین کے حوالے سے پہلے سے طے شدہ، معقول اور منصفانہ معیار پر عمل کیے بغیر، جلد سماعت کے لیے مخصوص مقدمات کا انتخاب کرتے ہیں، تو اس کی آزادی کا اصول ہے۔ عدلیہ کو نقصان پہنچ سکتا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ اس عدالت کی آزادی، سالمیت اور وقار کو برقرار رکھنے کے لیے قانون کی حکمرانی، بینچوں کی تشکیل میں شفافیت اور انصاف اور مقدمات کی یکسوئی کو قائم کیا جانا چاہیے۔

جسٹس قاضی فائز عیسیٰ اور جسٹس یحییٰ آفریدی پر مشتمل دو رکنی بینچ کے سامنے مقرر محمد امتیاز کی درخواست کی سماعت کرتے ہوئے بنچ نے نوٹ کیا کہ یہ اور دیگر گیارہ کیسز جسٹس قاضی فائز عیسیٰ اور جسٹس پر مشتمل ریگولر بنچ II کے سامنے طے کیے گئے تھے۔ منگل 28 فروری 2023 کو سید حسن اظہر رضوی اور جسٹس یحییٰ آفریدی کی سربراہی میں تین رکنی بنچ نے سماعت کی۔

تاہم ان دونوں بنچوں کی تشکیل نو کی گئی۔ جسٹس سید حسن اظہر رضوی کو جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کی سربراہی میں بنچ سے ہٹا کر ان کی جگہ جسٹس یحییٰ آفریدی اور جسٹس سید مظاہر علی اکبر نقوی جو جسٹس یحییٰ آفریدی سے جونیئر ہیں، کو جسٹس یحییٰ آفریدی کی جگہ بنچ کا سربراہ بنایا گیا ہے۔ .

جسٹس فائز نے اس ہفتے کے وسط اور رجسٹرار بنچوں کی اچانک تشکیل نو کی وجہ جاننے کے لیے رجسٹرار عشرت ال کو طلب کیا اور ان سے متعلقہ ریکارڈ لانے کو کہا۔ بنچ کے سامنے ان کی پیشی پر ان سے پوچھا گیا کہ مذکورہ تبدیلیوں کی کیا ضرورت ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ‘چیف جسٹس نے اپنے اسٹاف آفیسر ارشاد کے ذریعے رابطہ کیا کہ بنچز کو تبدیل کیا جائے اور مجھے اس سلسلے میں ایک نوٹ تیار کرنا چاہیے۔ عشرت نے بنچ سے کہا۔ میں نے ایک نوٹ تیار کر کے عزت مآب چیف جسٹس کی باضابطہ منظوری کے لیے پیش کر دیا۔

اس سلسلے میں ہمیں دکھائی جانے والی واحد دستاویز کا عنوان ہے ‘کورٹ روسٹر برائے منگل 28 فروری 2023’ جس کی تاریخ 27 فروری 2023 ہے جس میں دوبارہ تشکیل شدہ بنچز درج ہیں اور نیچے درج ذیل الفاظ درج ہیں، ‘براہ کرم منظوری کے لیے جمع کرایا گیا ہے۔’

جسٹس فائز نے اپنے فیصلے میں نوٹ کیا کہ رولز رجسٹرار یا چیف جسٹس کو جج یا ججز کو بینچ میں تبدیل کرنے یا ان کی تعداد کم کرنے کا کوئی اختیار نہیں دیتے۔

لاتعداد فیصلوں میں اس عدالت نے طاقت کے من مانی استعمال کی مذمت کی ہے۔ سات آلات جو صوابدیدی طاقت کے ڈھانچے میں سب سے زیادہ کارآمد ہیں وہ ہیں کھلے منصوبے، کھلے پالیسی بیانات، کھلے اصول، کھلے نتائج، کھلی وجوہات، کھلی نظیریں اور منصفانہ غیر رسمی طریقہ کار۔ کسی نہ کسی طرح، ہمارے سیاق و سباق میں، صوابدیدی اختیارات کی وسیع الفاظ میں منظوری یا صوابدیدی کے تحفظات، اس کے استعمال کو منظم کرنے کے لیے قواعد وضع کیے بغیر، طاقت میں اضافہ کے طور پر لیا گیا ہے اور یہ پہلی مثال میں یہ تاثر دیتا ہے لیکن جہاں حکام اسے منطقی بنانے اور اسے قواعد، یا پالیسی بیانات یا نظیروں کے ذریعے منظم کرنے میں ناکام، عدالتوں کو ضرورت سے زیادہ کثرت سے مداخلت کرنی پڑتی ہے، اس کے علاوہ اس طرح کے اختیارات کا استعمال بعض اوقات صوابدیدی اور دلفریب نظر آتا ہے۔’ اگر یہ عدالت دوسروں کو ایسے معیارات پر رکھتی ہے تو کیا اس سے خود کو بری کرنے کا کوئی جواز ہو سکتا ہے؟

صابر اقبال بمقابلہ کنٹونمنٹ بورڈ، پشاور، 16 میں اس عدالت نے واضح طور پر مشاہدہ کیا کہ، ‘عدالتیں صوابدیدی اختیارات کی ان مشقوں کو منسوخ کر دیں گی جن میں اس مقصد اور اس مقصد کے لیے استعمال کیے جانے والے ذرائع کے درمیان کوئی معقول تعلق نہیں ہے… .’ اگر یہ عدالت دوسروں پر عائد کردہ ہدایات پر عمل کرنے میں ناکام رہتی ہے تو یہ عدالت اپنی ساکھ اور عوامی اعتماد کھو دیتی ہے۔

فیصلے میں کہا گیا ہے کہ یہ بتانا بے جا نہیں ہوگا کہ اس عدالت کے مختلف بنچوں اور ججوں نے بھی وقتاً فوقتاً اس بات کو اجاگر کیا ہے اور اس طرح کی صوابدید کو تشکیل دینے اور شفاف طریقے سے کام کرنے پر زور دیا ہے۔

سپریم کورٹ آف پاکستان کی کیس مینجمنٹ کمیٹی اس بات پر رائے قائم کرنے کے لیے قائم کی گئی تھی کہ جمع ہونے والے مقدمات کی ایک بڑی تعداد کو کیسے نمٹایا جائے۔ اس نے 1 مارچ 2022 کو ایک رپورٹ پیش کی۔ رجسٹرار نے ہمیں مطلع کیا کہ مذکورہ رپورٹ 22 جولائی 2022 کو چیف جسٹس کی منظوری کے لیے بھیجی گئی تھی اور ان کی لارڈ شپ کی منظوری کا انتظار ہے۔

جسٹس فائز نے لکھا کہ ضابطہ اخلاق کے تحت ججوں سے ‘عوام کے سامنے قوم کے انصاف کی تصویر’ اور ‘قوم کے قابل انصاف کے معیار کی تصویر پیش کرنے کی ضرورت ہے۔ یہ تجویز کرتا ہے کہ، ‘برابری ہر چیز میں غالب ہونی چاہیے’۔

کاپی رائٹ بزنس ریکارڈر، 2023


>Source link>

>>Join our Facebook page From top right corner. <<

By hassani

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *