کراچی: سابق وزیراعظم اور پاکستان مسلم لیگ (ن) کے سینئر رہنما شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ سیاسی نظام میں اب ملکی مسائل حل کرنے کی صلاحیت نہیں رہی۔

ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ پاکستان کے جاری معاشی بحران کو “ایک دوسرے” کو سلاخوں کے پیچھے ڈال کر بہتر نہیں کیا جا سکتا۔ سابق سینیٹر اور پاکستان پیپلز پارٹی کے رکن مصطفی نواز کھوکھر بھی ان کے ہمراہ تھے۔

انہوں نے کہا کہ موجودہ معاشی بدحالی کے ذمہ دار عناصر کی نشاندہی کے لیے ایک کمیشن تشکیل دیا جانا چاہیے۔ مسلم لیگ (ن) کے اقتدار سنبھالنے تک انہیں معیشت کی کس حد تک گراوٹ کا اندازہ نہیں تھا۔

سابق وزیر اعظم نے مزید کہا کہ “ملکی مسائل کا حل تلاش کرنے کی ہم سب کی ذمہ داری ہے کیونکہ ہمارا تعلق مختلف سیاسی جماعتوں سے ہے۔”

سیاست میں ’’اسٹیبلشمنٹ‘‘ کی مداخلت رہی ہے جس نے جمہوری نظام میں عدم استحکام پیدا کیا۔

شاہد خاقان عباسی نے اپنی پارٹی کی اعلیٰ قیادت کے ساتھ اپنے ممکنہ اختلافات کے معاملے کی طرف رجوع کرتے ہوئے اس بات کا اعادہ کیا کہ ان کے اور پارٹی کے درمیان سب کچھ ٹھیک ہے کیونکہ ملکی مفاد ان کی اولین ترجیح ہے۔

ملک کے سب سے بڑے انسداد بدعنوانی ادارے پر تنقید کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ قومی احتساب بیورو (نیب) کے نظام کی موجودگی کی وجہ سے حکومتیں اپنی مدت پوری نہیں کرتیں۔ انہوں نے سوال کیا کہ نیب نے کتنے سیاستدانوں کا احتساب کیا؟

کراچی پولیس آفس پر حالیہ دہشت گردانہ حملے کے بارے میں سابق وزیر اعظم نے کہا کہ ملک کو اس سے قبل بھی ایسے افسوس ناک واقعات اور چیلنجز کا سامنا کرنا پڑا۔ ہمیں اب (دہشت گردی) کا بھی مقابلہ کرنا ہو گا۔

اپنی طرف سے، سابق سینیٹر مصطفی نواز کھوکھر نے کہا کہ “دہشت گردی سر اٹھا رہی ہے، جو سیاسی جماعتوں کی ناکامی ہے”۔

انہوں نے مزید کہا کہ پشاور کی ایک مسجد پر ہونے والے دلخراش خودکش حملے کے بعد بھی آل پارٹیز کانفرنس منعقد نہیں ہو سکی جس میں 100 کے قریب افراد جاں بحق ہوئے۔


Source link

By hassani

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *