لاہور: وزیراعلیٰ پنجاب محسن نقوی اور آئی جی پولیس ڈاکٹر عثمان انور نے پاکستان سپر لیگ (پی ایس ایل) کے میچز کے لیے حفاظتی اقدامات کا معائنہ کرنے کے لیے پنجاب سیف سٹیز اتھارٹی (PSCA) کا اچانک دورہ کیا۔ انہوں نے خاص طور پر پی ایس ایل کے راستوں میں سی سی ٹی وی مانیٹرنگ سسٹم کا جائزہ لیا اور ڈیجیٹل وال پر شہر کے علاقوں کا مشاہدہ کیا۔

وزیراعلیٰ نے سٹاف کو جوش و جذبے سے کام کرنے اور پی ایس ایل کی نگرانی کے لیے راولپنڈی اور ملتان میں سی سی ٹی وی کیمروں کو پی ایس سی اے لاہور سے منسلک کرنے کی ہدایت کی۔ مزید برآں، انہوں نے شہریوں کے لیے ایک منظم ٹریفک مینجمنٹ سسٹم اور پی ایس ایل ڈیوٹی پر موجود پولیس اور عملے کو کھانا اور چائے فراہم کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔

ایم ڈی پی ایس سی اے محمد کامران خان نے بتایا کہ لاہور میں 550 خصوصی کیمروں کے ذریعے پی ایس ایل کی مانیٹرنگ کی جا رہی ہے جبکہ روٹس، ہوٹلز اور سٹیڈیم کی مانیٹرنگ کے انتظامات بھی مکمل کر لیے گئے ہیں کیونکہ پی ایس سی اے کی ٹیکنیکل ٹیمیں فیلڈ میں چوبیس گھنٹے کام کریں گی۔

علاوہ ازیں وزیراعلیٰ نے اجلاس میں لاہور اور بڑے شہروں میں جشن بہاراں منانے اور صوبائی شہر میں ہارس اینڈ کیٹل شو منعقد کرنے کی ہدایت کی۔ اجلاس کو بتایا گیا کہ جشن بہاراں کی تقریبات لاہور کے مختلف پارکوں اور مقامات پر منعقد کی جائیں گی۔

پی ایس ایل میچز کے باعث جیلانی پارک کے علاوہ مختلف پارکوں اور مقامات پر تقریبات کا اہتمام کیا جائے گا۔ شہریوں کی زیادہ سے زیادہ شرکت کو یقینی بنانے کے لیے یہ تقریبات منفرد انداز میں منعقد کی جائیں گی۔ سرکس کے تہوار کے ساتھ ساتھ روایتی کھانوں کے سٹال بھی لگائے جائیں گے۔

اسی طرح عوامی تفریح ​​کے لیے موسیقی، فلاور شو، کہانی سنانے اور پینٹنگ کے مقابلے، پرندوں، کیٹ اور ڈاگ شو اور دیگر تقریبات کا انعقاد کیا جائے گا۔ اجلاس کو بتایا گیا کہ اس کے علاوہ نہر اور بڑی سڑکوں کو خوبصورت روشنیوں سے روشن کیا جائے گا۔

مزید برآں، رجب طیب اردگان ہسپتال ٹرسٹ کے بورڈ کے 45ویں اجلاس میں ترکی اور شام میں زلزلے کے متاثرین کے لیے فاتحہ خوانی کی۔

اجلاس میں انڈس ہسپتال جوبلی ٹاؤن کو رجب طیب اردگان ہسپتال ٹرسٹ کے زیر انتظام فعال کرنے کی تجویز پر غور کیا گیا۔

لاہور، گوجرانوالہ، فیصل آباد اور رحیم یار خان میں پولیس لائنز کی ڈسپنسریوں کا انتظام رجب طیب اردگان ہسپتال ٹرسٹ کے ذریعے کرنے کی تجویز بھی زیر بحث آئی۔

کاپی رائٹ بزنس ریکارڈر، 2023


Source link

By hassani

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *