پیر کو پاکستان آٹو موٹیو مینوفیکچررز ایسوسی ایشن (PAMA) کے جاری کردہ اعداد و شمار کے مطابق، پاکستان میں آٹوموبائل کی فروخت جون 2020 کے بعد سے کم ترین سطح پر آگئی کیونکہ جنوری 2023 میں ان میں ماہانہ 36 فیصد کی کمی واقع ہوئی اور یہ 10,867 یونٹس رہ گئی۔

ایک سال کی بنیاد پر، کاروں کی فروخت میں 47 فیصد کمی واقع ہوئی۔

پاک سوزوکی نے ایک ماہ میں دوسری بار گاڑیوں کی قیمتوں میں اضافہ کر دیا۔

پاک سوزوکی، جو کہ مارکیٹ میں سب سے زیادہ حصہ رکھتی ہے، نے جنوری 2023 میں اپنی فروخت میں ماہ بہ ماہ 74 فیصد کمی دیکھی۔ کمپنی دسمبر 2022 میں 6,898 یونٹس کے مقابلے میں مقبول آلٹو ماڈل کے صرف 44 یونٹس فروخت کرنے میں کامیاب رہی۔

کمپنی کی طرف سے کی گئی کل فروخت 2,946 یونٹس رہی جو کہ دسمبر 2022 میں 11,342 یونٹس تھی۔

دریں اثنا، انڈس موٹر کمپنی (ٹویوٹا) اور ہونڈا نے اپنی فروخت میں بالترتیب 26% اور 30% ماہ بہ ماہ بہتری دیکھی جو 3,570 یونٹس اور 2,704 یونٹس تک پہنچ گئی۔

دو ہفتوں میں دوسرا اضافہ: ہونڈا اٹلس نے کاروں کی قیمتوں میں 550,000 روپے تک اضافہ کر دیا

سال بہ سال کی بنیاد پر، دونوں کمپنیوں کی فروخت میں بالترتیب 47% اور 33% کی کمی واقع ہوئی۔

دریں اثنا، Hyundai نشاط موٹر نے ماہانہ اور سالانہ بنیادوں پر فروخت میں نمایاں اضافے کی اطلاع دی۔ فرم کی بکنگ میں 81% ماہ بہ ماہ اور 86% سال بہ سال اضافہ ہوا۔ کوریائی کار ساز کمپنی جنوری میں 1,140 یونٹس فروخت کرنے میں کامیاب رہی۔

صنعت کے ماہرین نے بزنس ریکارڈر کو بتایا کہ بڑے کار مینوفیکچررز کی فروخت میں کمی کی سب سے بڑی وجہ لیٹرز آف کریڈٹ (ایل سی) کھولنے سے متعلق مسئلہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ کار کمپنیاں اس مسئلے کی وجہ سے مکمل طور پر ناکڈ ڈاؤن (CKDs) یونٹس درآمد کرنے سے قاصر ہیں۔

آٹو سیکٹر مشہود خان کا کہنا تھا کہ ’’ایک کار میں تقریباً 3000 سے 3500 پارٹس ہوتے ہیں اور اگر کوئی کمپنی صرف ایک پرزہ درآمد کرنے میں ناکام رہتی ہے تو وہ کار تیار نہیں کر سکے گی۔‘‘

پاکستان نے درآمدات پر پابندیوں کے ذریعے ڈالر کے اخراج کو روکنے کی کوشش کی ہے۔ آٹوموبائل سمیت معیشت کے بہت سے سیکٹروں نے ایل سی کھولنے میں فرموں کی نااہلی کی وجہ سے یا تو کم کر دیا ہے یا کام بند کر دیا ہے۔

ملک کا زرمبادلہ کے ذخائر 2.92 بلین ڈالر کی نازک سطح پر ہیں جو کہ فروری 2014 کے بعد سب سے کم ہے جبکہ پاکستان روپے کی قدر گر گئی ہے نمایاں طور پر یہ ملک میں ریکارڈ مہنگائی کی ایک بڑی وجہ ہے۔ حال ہی میں، کار مینوفیکچررز نے بھی قیمتوں میں نمایاں تناسب سے اضافہ کیا۔

تجزیہ کار کا خیال تھا کہ گاڑیوں کی قیمتوں میں غیر معمولی اضافہ ناقابل برداشت ہے۔

انہوں نے کہا کہ “صارفین کی قوت خرید بھی کم ہو گئی ہے کیونکہ معیشت سست روی کی وجہ سے مشکلات کا شکار ہے۔” “جہاں تک میں دیکھ رہا ہوں، اس سال گاڑیوں کی فروخت کم رہے گی۔”

انہوں نے کہا کہ تاریخی طور پر بلند شرح سود کے ساتھ ساتھ اسٹیٹ بینک آف پاکستان کی جانب سے 30 لاکھ روپے اور اس سے زیادہ کی فنانسنگ کی حد بھی طلب کو ختم کر رہی ہے۔


Source link

By hassani

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *