پاکستان اسٹاک ایکسچینج (PSX) میں حصص نے جمعرات کو اس توقع پر اپنی تیزی کا سلسلہ جاری رکھا کہ حکومت اور بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (IMF) جلد ہی کسی معاہدے پر پہنچ جائیں گے، جس سے نقد رقم کی کمی کے شکار ملک کو ڈیفالٹ سے بچنے میں مدد ملے گی۔

ان توقعات سے مقامی کرنسی کو بھی متاثر کیا گیا، جس نے گزشتہ چند ہفتوں میں شدید دھڑکن اٹھائی ہے، بازیافتی ہورہی انٹربینک مارکیٹ میں

بینچ مارک KSE-100 انڈیکس 743.27 پوائنٹس یا 1.78 فیصد اضافے کے ساتھ 42,466.59 پوائنٹس پر بند ہوا۔ یہ سہ پہر 3:28 پر 844.43 پوائنٹس یا 2.02pc کی انٹرا ڈے اونچائی پر پہنچ گیا۔

عارف حبیب کارپوریشن کے ڈائریکٹر احسن مہانتی نے کہا کہ آئی ایم ایف ڈیل اور مضبوط کارپوریٹ نتائج سے قبل روپے کی مضبوط بحالی پر اسٹاک نے تیزی کی سرگرمی دکھائی۔

انہوں نے مزید کہا کہ آئی ایم ایف پروگرام کے دوبارہ شروع ہونے کے بعد گردشی قرضوں کے تصفیہ کے لیے کمپنیوں کو مضبوط ادائیگیوں اور قرضوں کی ادائیگیوں کی تنظیم نو کی قیاس آرائیوں نے بھی ایک عمل انگیز کردار ادا کیا۔

ابا علی حبیب سیکیورٹیز کے ریسرچ کے سربراہ سلمان نقوی نے کہا کہ انڈیکس میں اضافے کی بنیادی وجہ آئی ایم ایف کے ساتھ متوقع معاہدہ تھا۔ انہوں نے کہا کہ “ہم بہتری دیکھ رہے ہیں،” انہوں نے مزید کہا کہ سرمایہ کار توقع کر رہے تھے کہ آئی ایم ایف معاہدے سے ملک کے کچھ معاشی مسائل حل ہو جائیں گے۔

نقوی نے کہا کہ مارکیٹ میں رعایت دی گئی ہے اور کمائی سے قیمت کا تناسب بہت پرکشش ہے۔

آئی ایم ایف کے ساتھ معاملات خوش اسلوبی سے طے پا گئے تو سٹاک مارکیٹ مزید بڑھے گی اور روپے کی قدر مزید بڑھے گی۔

آئی ایم ایف کا ایک وفد جس کی سربراہی نیتھن پورٹر کررہے ہیں، اس وقت 7 بلین ڈالر کے قرضہ پروگرام کے نویں جائزے کی تکمیل پر بات چیت کے لیے اسلام آباد میں ہے۔ جائزے کی تکمیل سے نہ صرف آئی ایم ایف سے 1.2 بلین ڈالر کی ادائیگی ہوگی بلکہ دوست ممالک اور دیگر کثیر جہتی قرض دہندگان کی جانب سے آمدن کو بھی غیر مقفل کیا جائے گا جس کی پاکستان کو ڈیفالٹ روکنے کی ضرورت ہے۔

وزیر مملکت برائے خزانہ و محصولات عائشہ غوث پاشا بتایا بدھ کے روز صحافیوں نے کہا کہ حکومت اور عالمی قرض دہندہ اقتصادی اور مالیاتی پالیسیوں کی یادداشت (MEFP) کو حتمی شکل دینے کے بہت قریب ہیں۔

انہوں نے کہا کہ تمام معاملات طے پا جانے کے بعد MEFP کو IMF پاکستان کے حوالے کر دے گا۔ انہوں نے کہا کہ بہت سی چیزیں طے ہو چکی ہیں جبکہ قرض دہندہ کو کچھ پہلوؤں پر وضاحت درکار ہے، جنہیں حکومتی ٹیم حل کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔

اس کی تصدیق وزارت خزانہ نے بھی کی ہے۔ ایک تحریری بیان میں، وزارت نے کہا کہ بدھ کو آئی ایم ایف کے ساتھ بات چیت جاری رہی اور “مالیاتی میز، فنانسنگ وغیرہ پر توجہ مرکوز کی گئی۔ اصلاحاتی اقدامات اور اقدامات پر وسیع اتفاق رائے ہے”۔


Source link

By hassani

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *