لاہور: لاہور ہائی کورٹ نے بدھ کے روز پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے 43 ایم این ایز کے استعفے منظور کرنے کے سپیکر قومی اسمبلی کی کارروائی کو معطل کرتے ہوئے الیکشن کمیشن آف پاکستان کو ان حلقوں میں ضمنی انتخابات کرانے سے روک دیا۔

عدالت نے ریاض فتیانہ اور دیگر کی درخواست منظور کرتے ہوئے وفاقی حکومت، اسپیکر قومی اسمبلی اور الیکشن کمیشن کو نوٹس جاری کر دیئے۔

قبل ازیں درخواست گزاروں کے وکیل نے موقف اختیار کیا کہ تمام درخواست گزاروں نے اپنے استعفے واپس لے لیے ہیں اور اسپیکر سے ذاتی طور پر درخواست کی تھی کہ وہ انہیں ڈی نوٹیفائی نہ کریں۔ ان کا کہنا تھا کہ اسپیکر نے قانون کے مطابق عمل کیے بغیر استعفے منظور کر لیے۔

انہوں نے کہا کہ ای سی پی نے بھی اس معاملے کی انکوائری نہیں کی اور مذکورہ حلقوں پر ضمنی انتخابات کے لیے انتخابی شیڈول کا اعلان کیا۔ انہوں نے یہ بھی الزام لگایا کہ اسپیکر اور ای سی پی نے قانون پر عمل نہیں کیا بلکہ سیاسی اعلیٰ شخصیات سے ڈکٹیشن لی۔

انہوں نے مزید کہا کہ اسپیکر نے ایم این ایز کے استعفے منظور کرنے سے پہلے انہیں ذاتی سماعت کا لازمی موقع نہیں دیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ استعفے صرف سیاسی مفادات کی بنیاد پر حکومت کو انتخابات کرانے پر مجبور کرنے کے لیے تھے اور مزید کہا کہ اسپیکر کی جانب سے اس پہلو سے کبھی انکار نہیں کیا گیا اور تمام درخواست گزاروں کو پارلیمنٹ میں واپس آنے کو کہا گیا۔

ان کا کہنا تھا کہ جب درخواست گزاروں نے اپنی نشستیں سنبھالنے کا انتخاب کیا اور استعفے واپس لے لیے تو اسپیکر نے غیر قانونی اور بد نیتی سے استعفے قبول کر لیے۔

کاپی رائٹ بزنس ریکارڈر، 2023


Source link

By hassani

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *