Results 1 to 9 of 9

Thread: اردو حکایات واقعات

Share             
  1. #1
    Facebook Editor safriz's Avatar
    Join Date
    Jul 2012
    Posts
    5,658
    Thanks
    5027
    Pakistan Pakistan

    اردو حکایات واقعات

    اس تھریڈ میں آپ اپنی زندگی کے اچھے برے تجربات اور اچھی حکایات رقم کر سکتے هیں ـ
    یہاں اردو مقالات بھی لکھے جا سکتے ہیں
    The Following User Says Thank You to safriz For This Useful Post: Naveed HRitom


  2. #2
    Facebook Editor safriz's Avatar
    Join Date
    Jul 2012
    Posts
    5,658
    Thanks
    5027
    Pakistan Pakistan

    Re: اردو حکایات واقعات

    میں دنیا کے بیالیس ملکوں میں گیا ہوں ـ اور جب بھی مجھے اپنا تعارف کرانے کی ضرورت پڑی تو میں نے وہاں کے لوگوں کو بڑے فخر سے بتایا کہ میں پاکستانی ہوں ـ
    ایک دفعه میں یونان میں ایک ریسٹورینٹ میں بیٹھا کھانا کھا رہا تھا . میرے ساتھ والی میز پہ کچھ مقامی یونانی بیٹھے تھے اور ان میں سے ایک مجھے بڑے غور سے دیکھ رہا تھا ـ
    میں بھی اس کی طرف دیکھ کر مسکرایا . میرا یہ کرنا تھا کہ وہ اٹھا اور آ کر میرے سامنے والی کرسی پہ بیٹھ گیا. اور آتے ہی مجھ سے پوچھا کہ کیا میں پاکستان سے ہوں؟
    مجھے اس کی حرکت پہ تھوڑی حیرت ضرور ہوئي مگر میں نے اس کے سوال کا جواب دیا اور گفتگو جاری رکھنے کی خاطر اس سے پوچھا کہ وہ پاکستان اور پاکستانیوں کے بارے میں کیا جانتا ہے؟
    اس نے تھوڑے توقف کے بعد میری طرف دیکھا اور کہا کہ وہ بظاہر ایک بری بات کرنے والا ہے اور مجھ سے وعدہ لیا کہ جب تک وہ اپنی بات مکمل نہ کر لے میں تحمل سے اس کی پوری بات سنوں گا.
    میں نے اس کو یقین دہانی کرائی کہ میں غصہ نہیں ہوں گا ـ
    پھر اس نے مجھ سے جو کہا اس کی بات نے ایک لمحے کو مجھے منجمد کر دیا ـ

    اس نے کہا "تم پاکستانی کتے کی طرح ہو" ـ

    حیرت اور تجسس کے ملے جلے جذبات میرے چہرے پہ واضع دیکھ کر وہ مزید بولا ـ
    "تم اپنے آقاؤں کے وفادار ہو اور اپنے لوگوں سے نفرت کرتے ہو اور آپس میں ایک دوسرے کو کاٹنے دوڑتے ہو "
    You are like dogs. You bite your own kind,but very loyal to your masters.
    پھر اس نے تفصیل بتانا شروع کی ـ
    وہ ایک بڑی کمپنی کا مینیجر تھا اور اس کی کمپنی میں بہت سارے پاکستانی کام کرتے تھے ـ
    بقول اس کے اس نے کبھی کسی پاکستانی سے پاکستان کے بارے میں یا دوسرے پاکستانیوں کے بارے میں اچھی بات نہیں سنی ـ مگر وہی پاکستانی اس کی کمپنی میں کام کرنے والے یورپین لوگوں سے بڑے اخلاق سے پیش آتے ہیں ـ همیشه یورپیوں کی اور یورپ کی خوب تعریفیں کرتے ہیں ـ اور یہ کہ وہ پاکستان جائے بغیر پاکستان کی تمام خامیوں سے واقف ہے کیونکہ وہ ٹیوی اور میڈیا پہ همیشه پاکستان کی برائیاں سنتا ہے ـ اگرچه اس کا ذہن نہیں مانتا کہ اتنے بڑے ملک میں کوئي اچھائی نہیں مگر ـ اس کے ساتھ کام کرنے والے پاکستانی پوچھنے پہ کبھی پاکستان کے وقار کا دفاع نہیں کرتے بلکہ اور بھی برائی کرتے ہیں ـ
    وہ بولتا رہا ـ میں سنتا رہا ـ اس نے کہا کہ اس کے ملک یونان میں بھی بہت خرابیاں ہیں مگر یونانی ہونے کے ناطے وہ کبھی اپنے ملک کی برائیوں کی تشہیر نہیں کرتا اور اگر کوئي یونان کی برائی کرے تو وہ دلائل کے ذریعے اپنے ملکی وقار کا دفاع کرتا ہے ـ اور اگر ایسا نہ کر سکے تو کم از ہاں میں ہاں ملانے سے گریز کرتا ہے ـ

    میرا سر شرم سے جھک گیا اور میں نے اس کی بات کا کوئي جواب نہیں دیا ـاور مجھے نہیں معلوم وہ کب میرے سامنے والی کرسی سے اٹھا اور چلتا بنا ـ

  3. #3
    Facebook Editor safriz's Avatar
    Join Date
    Jul 2012
    Posts
    5,658
    Thanks
    5027
    Pakistan Pakistan

    Re: اردو حکایات واقعات

    یوں تو میں مزاروں پہ جانے کا زیادہ قائل نہیں مگر
    میں ایک دفعہ لعل شہباز قلندر کے مزار پر گیا ـ
    یہ اُن دنوں کی بات ہے جب مزار کا گنبد گر چکا تھا اور نیا زیر تعمیر تھا ـ
    میں ایک عالم سے پوچھ کر گیا تھا کہ مجھے کیا کرنا چاہیئے اور کیا نہیں ـ
    مزار کے گیٹ پہ پہنچتے ہی دو بندوں نے میرا راستہ روکا اور چند چھوٹی قبروں کی طرف اشارہ کر کہ کہا کہ میں ان قبروں کے گرد سات چکر لگاؤں. میں نے یہ کہ کر انکار کر دیا کہ طواف تو صرف کعبہ کا ہوتا ہے قبروں کا نہیں ـ
    ان دو آدمیوں نے میرا جواب سن کر کوئي بحث نہیں کی اور مجھ سے سو روپے مانگے جو میں نے صدقہ خیرات کی نیت سے انہیں دے دیئے ـ
    مجھے کسی نے بتایا تھا کہ اولیاء کے مزار میں اظہار عقیدت کے طور پہ قبر کے پاؤں کی طرف سے داخل ہونا بہتر ہے ـ اور مَردوں کو قبر کے دائیں طرف کھڑے ہو کر فاتحه پڑھنی چاہیئے.
    مگر یہ فرض سنت یا واجب نہیں صرف ایک اچھی روایت ہے ـ
    مجھے بتانے والے کی بات پسند آئ اور میں نے فرض سنت یا واجب کی نیت کیئے بغیر صرف اچھے آداب کے طور پہ ایسا ہی کیا ـ
    میں مزار کے دائیں طرف کھڑا فاتحه پڑھ رہا تھا کہ ایک ملنگ نے میرا بازو پکڑا اور کھینچا.
    مجھے عجیب لگا مگر میں بدتمیزی کرنا نہیں چاہتا تھا اور جدھر کو اُس نے کھینچا میں چل پڑا.
    مجھے ایک کونے میں لے جا کر اُس نے ایک تھیلا نکالا جس میں بھورے رنگ کا جیسا سفوف تھا ـ اس نے مجھے وہ سفوف کھانے کو کہا. میں نے پوچھا یہ کیا ہے ـ جواب میں أس نے کہا یہ تبرک ہے. میں نے ایک چٹکی بھر زبان پہ رکھی اور پتہ چلا کہ تھیلے میں ریت ہے اور ملنگ لوگوں کو ریت کھلاتا پھر رہا ہے ـ ساتھ ہی اس نے مجھ سے سو روپے مانگےـ میں نے ناراضگی کا اظہار کیا ـ تو أس نے صرف اتنا کہا "ہمارا گزارا ایسے ہی ہوتا ہے " ـ مجھے اس کا مجھے ریت کھلانا تو پسند نہیں آیا مگر اس کی صاف گوئ پسند آئ اور میں صدقہ خیرات کی نیت سے اسے سو روپے دے کر بولا کہ مجھے پچاس روپے واپس دے ـ
    وہ پیسے لے کرچلا گیا اور کچھ دیر بعد مجھے پچاس روپے لا کہ واپس دے دئیے.
    مجھے أس کی یہ بات بھی پسند آئ اور میں نے اس سے مزار کے بارے میں سوال کیئے.
    لعل شاہباز قلندر کے مزار کے ایک جانب پتھر زنجیر سے لٹکا ہوا ہے ـ
    پتھر دیکھنے میں بہت پرانا اور تقریباﹰ دس کلو وزنی لگ رہا تھا ـ
    میں نے ملنگ سے پتھر کے بارے میں پوچھا تو أس نے مجھے کہا کہ بابا کی کسی دیو سے جنگ ہوئی تھی اور یہ دیو کا دل ہے جو بابا نے نکال لیا تھاـ
    مجھے اس کی بات پہ یقین نہیں آیا مگر لگا کہ وہ خود اس واقعہ پہ یقین رکھتا ہے.
    میں نے بحث مناسب نہیں سمجھی اور اس کا شکریہ ادا کر کہ الوداع کہا ـ
    میں مزار پہ کچھ دیر رہا اور پھر واپس چلا گیا ـ
    مزار کا پتھر مجھے نہیں بھولا اور اس کے بارے میں میں نے تحقیق کی ـ
    پتہ چلا کہ لعل شہباز وسطی ایشیا کے رہنے والے تھے اور شکل و صورتسے گورے چٹے سرخ گالوں والے یورپین تھے ـ ساتھ ہی لمبے چوڑے اور مضبوط جسامت کے مالک تھے ـ
    ان وجوہات کی بناء پہ ان کی چال میں عاجزی نہ تھی اور دیکھنے والے کو لگتا کہ غرور اور تکبر میں سینه نکال کہ اکڑ کر چل رہے ہیں ـ
    قلندر کو یہ معلوم تھا کہ تکبر اسلام میں جائز نہیں اور عاجزی رب کو پسند ہے ـ
    اگرچہ قلندر کے دل میں تکبر نہیں تھا مگر جسامت کی وجہ سے ان کی چال ڈھال میں دیکھنے والوں کو تکبر محسوس ہوتا ـ
    چنانچہ قلندر نے اپنی پیٹھ کو جھکا کر چال میں عاجزی پہدا کرنے کی خاطر اپنے گلے میں ہار کی طرح ایک بھاری پتھر لٹکا لیا ـ
    اور یہ وہی پتھر ہے جو آج بھی ان کی قبر کے دائیں جانب لٹکا ہوا ہے ـ اور "گلوبند" کہلاتاہے.
    قلندر نے کسی دیو کے ساتھ نہیں بلکہ اپنے نفسی کے ساتھ جنگ میں یہ پتھر استعمال کیا اور جنگ جیت لی ـ
    پتھر کی حقیقت جان کر میرے دل میں لعل شاہباز قلندر کی تعظیم میں مزید اضافہ ہواـ
    اور میں نے بھی عاجزی کا سبق حاصل کیا اور اکڑ کر چلنے سے گریز کرنے لگا ـ
    اگر میں مزار پہ جا کہ قبروں کا طواف کرتا اور دیو والی کہانی مان لیتا ـ اور ریت کھا کر سمجھتا کہ میں نے کوئي تبرک کھا لیا ـ تو شاید میں اپنا ایمان خراب کر کہ آتا ـ
    مگر میرا مزار پہ جانا میرے اندر ایک مثبت تبدیلی لایا ـ
    اور یہ واقعہ لکھ کر میں هرگز یہ نہیں کہ رہا کہ مزار پہ جانا ضروری ہے ـ اور یہ بھی نہیں کہ رہا کہ بالکل منع ہے ـ
    صرف اتنا کہ جو بھی کریں ٹھیک علم کے ساتھ ـ دوسروں کی تعظیم کرتے هوئے اور صاف دل کے ساتھ کریں ـ
    جس ذات کے ذمے هدایت هے ـ جو ھادی ہے ـ وہ آپ کو سیدھا رستہ ضرور دکھا ئے گا ـ!

  4. #4
    Facebook Editor safriz's Avatar
    Join Date
    Jul 2012
    Posts
    5,658
    Thanks
    5027
    Pakistan Pakistan

    Re: اردو حکایات واقعات

    ابراھیم بن ادھم بلخ کے شاہی گھرانے کے شہزادے تھے اور بلخ کی بادشاہت کے وارث ـ
    اللہ نے انہیں ہدایت دی اور وہ تخت شاہی چھوڑ کر ویرانے میں جا بیٹھے اور اپنا تمام وقت رب کی عبادت میں گزارنے لگے ـ
    ایک دفعہ وہ دریا کے کنارے بیٹھے اپنے پھٹے پرانے کپڑوں میں پیوند لگا رہے تھے کہ ان کے دربار کے ایک وزیر کا قافلے کے ساتھ وہاں سے گزر ہوا ـ
    وزیر اپنے بادشاہ کے ولی عہد شہزادے کو دیکھتے ہی پہچان گیا ـ
    شہزادے کو پھٹے پرانے کپڑوں میں دریا کے کنارے بیٹھا دیکھ کر افسوس کرنے لگا اور بولا کاش آپ بلخ کی بادشاہت قبول کر لیتے تو آج آپ کی رعایا لاکھوں کی تعداد میں آپ کے حکم مانتی ـ اب اپنا حال دیکھیں. پھٹے پرانے پیوند لگے کپڑوں میں کوئي آپ سے بات کرنا پسند نہ کرے ـ
    ابراھیم بن ادھم نے تحمل سے وزیر کی بات سنی ـ پھر اپنا پیالہ اٹھا کر دریا میں پھینک دیا ـ
    پیالہ پانی میں بہ گیا اور نظروں سے اوجھل ہو گیا ـ
    پھر وہ دریا سے مخاطب هوئے اور دریا سے اپنا پیالہ واپس مانگا ـ
    پھر سب نے دیکھا کہ ابراھیم بن ادھم کا پیالہ دریا کی لہروں پہ بہتا ہوا الٹے رخ واپس آیا ـ اور دریا کی سطح بلند ہوئي اور پیالہ واپس ابراھیم بم ادھم کے سامنے آن موجود ہواـ
    وزیر اور اس کا قافله یہ سب دیکھ کر حیران ہو گئے ـ
    اباھیم بن ادھم نے وزیر کی طرف دیکھا اور بولے ـ اگر میں بادشاہ بن جاتا تو شاید چند لاکھ انسان میری بات مانتے ـ مگر میں نے بادشاہوں کے بادشاه سے دوستی کر لی اور اب اُس سب سے بڑے بادشاہ کے حکم سے دریا پہاڑ چرند پرند اور ایسی مخلوقات جن کا تجھے علم بھی نہیں ـ وہ سب میری بات مانتے ہیں ـ کیونکہ میں نے ان کے بنانے والے کی محبت حاصل کر لی ـ
    یہ کہ کر ابراھیم بن ادھم واپس اپنے کپڑے مرمت کرنے میں مشغول ہو گئے. اور وزیر کو سمجھ آ گئي کہ انہوں نے گھاٹے کا سودا نہیں کیا

  5. #5
    Facebook Editor safriz's Avatar
    Join Date
    Jul 2012
    Posts
    5,658
    Thanks
    5027
    Pakistan Pakistan

    Re: اردو حکایات واقعات



    بیرون ملک پاکستانیوں کے لیئے
    For Pakistanis Living Abroad
    اپنے بچوں کو پاکستان کے بارے میں تعلیم دیں ـ اردو لکھنا اور پڑھنا سکھائیں ـ
    آپ جتنے سال اور جتنی نسلیں باہر رہ لیں اور آپ چاہے پاکستان کے کسی بھی علاقہ کے ہوں ـ باہر کے لوگ آپ کو اور آپ کی نسلوں کو پاکستانی ہی بولیں گے اور پاکستان کے نام سے ہی پہچانیں گے ـ

  6. #6
    Facebook Editor safriz's Avatar
    Join Date
    Jul 2012
    Posts
    5,658
    Thanks
    5027
    Pakistan Pakistan

    Re: اردو حکایات واقعات

    بارھویں صدی عیسویں کے اختتام پہ چنگیز خان نے تقریباﹰ سارا چِین فتح کر لیا تھا ـ اور اب اس نے قریبی ملکوں کے ساتھ تجارت فروغ دینے کا ارادہ کیا ـ

    چنگیز خان کی حکومت کے جنوب میں بہت بڑی اور طاقتور مسلمان حکومت سلطنت خوارزم تھی ـ
    سنہ 1200 عیسوی میں سلطان قطبدین کے بیٹے علاودین نے تخت سنبھالا ـ
    چنگیز خان نے علاؤدین کی طرف تجارت کی غرض سے دوستی کا ہاتھ بڑھایا اور اپنا ایلچی علاؤدین کے دربار میں بھیجا ـ
    چنگیز کے ایلچی نے مسلمان سلطنت خوارزم اور چنگیزی سلطنت کے درمیان تجارت کا معاہدہ طے کیا ـ
    کچھ عرصے بعد چنگیزی حکومت کے تاجر معاہدے کے مطابق سامان لے کر مسلمانوں کی سلطنت خوارزم کی حدود میں داخل هوئے ـ جس علاقے میں وہ داخل ہوئے وہاں کا گورنر خلیفہ علاؤدین کا ماموں تھا اور انتہائ لالچی انسان تھا ـ
    منگولیا سے آنے والے چنگیزی حکومت کے تاجروں کا سامان دیکھ کر اسے لالچ آئ اور اس نے تاجروں کو بغیر ثبوت کے جاسوسی کے الزام میں گرفتار کر لیا ـ
    تاجروں کی گرفتاری کے بعد اس نے اپنا پیغام دارالحکومت بھیجا اور خلیفہ علاؤدین سے مشورہ مانگا کہ ان تاجروں کے ساتھ اب کیا سلوک کیا جائے.
    علاؤدین کا کام تھا کہ سلطنت میں انصاف کی بالاتری قائم رکھے اور مظلوم کا ساتھ دے ،
    مگر ماموں کی طرفداری کی اور کہ دیا کہ منگول قیدیوں کے ساتھ جو چاہو کرو ـ
    خلیفہ علاؤدین کے ماموں نے سارے قیدیوں کو مقدمہ چلائے بغیر اور جرم ثابت ہوئے بغیر قتل کروا دیا اور ان کا لایا ہوا تجارتی سامان رکھ لیا ـ
    ادھر چنگیز خان کو جب اپنے بھیجے هوئے تاجروں کے ساتھ ہونے والے سلوک کا پتہ چلا تو اسے حیرت ہوئ اور سوچا کہ شاید مسلمانوں کے حکمران سے غلطی ہوئ ہو اور اس نے اپنا ایلچی خلیفہ علاؤدین کے دربار میں بھیج کرانصاف کا مطالبہ کروایا ـ
    ایلچی نے خلیفہ کے سامنے چنگیز خان کا مطالبہ رکھا کہ چنگیزی تاجروں کے قاتل کو اس کے کیئے کی سزا دی جائے یا اسے چنگیز خان کے حوالے کر دیا جائے تاکہ وہ خود انصاف کر لے ـ اور تاجروں کا سامان واپس چنگیز خان کو بھیجا جائے ـ
    انصاف اور دانشمندی کا تقاضہ یہ تھا کہ خلیفہ کم از کم چنگیزی تاجروں کا سامان ہی واپس کروا دیتا اور اگر اپنے ماموں کو چنگیز خان کے حوالے کرنا ممکن نہ تھا تو ایک معافی نامہ لکھ کر چنگیزی ایلچی کے همراه کر دیتا ـ
    مگر خلیفہ علاؤدین خوارزمی نے طیش میں آ کہ چنگیزی ایلچی کو انصاف فراہم کرنے کے بجائے قتل کروا دیا ـ
    خلیفہ کے اس ظلم اور نا انصآفی کے عمل اور اس پہ اکڑ اور غلطی تسلیم نہ کرنے کی وجہ سے اب یہ اللہ کی نظروں میں گر چکا تھا اور اللہ کا غیض و غضب اس کی طرف متوجہ ہو گیا ـ
    اُدھر چنگیز خان کو جب خلیفہ کے رویّے کی اطلاع ملی تو اس نے ایک ایسا عمل کیا جو شاید تاریخ میں کسی کافر بادشاه نے نہ کیا ہو ـ
    غم.اور غصے کی حالت میں رات کی تاریکی میں وہ اکیلا ایک پہاڑ پہ چڑھا اور آسمان کی طرف منہ کر کہ بولا ـ
    اے مسلمانوں کے اللہ ـ تیرے ماننے والوں نے میریساتھ دھوکا اور میری رعایا کے ساتھ ظلم کیا ـ مجھے پتہ ہے کہ تو مظلوم کی دعا قبول رد نہیں کرتا چاہے وہ کافر ہی ہو ـچنانچہ میں ایک کافر ـ تموجن عرف چنگیز خان آج تجھ سے مدد مانگتا ہے تاکہ ظالموں کو ان کے کیئے کا مزہ چکھا سکوں ـ

    اس رات چنگیز خان کی دعا قبول ہو گئ ـ
    واقعات 1218 عیسویں میں هوئے.
    ***★★★★★★***
    پہاڑ سے اتر کر چنگیز خان اپنے سینے میں انتقام کی آگ لیئے واپس اپنے خیمے میں آیا ـ اسے کسی غیبی طاقت کا اپنے ساتھ ہونے کا گمان ہونے لگا ـ
    اس نے اپنے سپہ سالاروں سے سلطنت خوارزم پہ حمله کے لیئے مشورے شروع کر دیئے ـ
    مسلمان سلطنت کا بادشاہ علاؤدین شاہ خوارزم نے اپنی نو جوانی میدان جنگ میں گزاری تھی اور اپنی بہادری کی وجہ سے مشہور تھا ـ وہ سلجوقی نسل کا تھا اور سلجوقیوں نے یورپ اور مشرق وسطی میں صلیبی جنگوں کے دوران عیسائ افواج کو اس بُری طرح ہرایا تھا کہ یورپ میں مائیں اپنے بچوں کو سلجوقی مسلمان سپہ سالاروں کے ناموں سے ڈراتیں ـ

    بادشاہ کے کی سلطنت وسطی ایشیا ـ ایران اور افغانستان سمیت کافی بڑے رقبے پر محیط تھی ـ سلطنت کی افوج ساڑھے چار لاکھ تربیت یافتہ اور تجربہ کار سپاہ پہ مشتمل تھے ـ ان کے پاس اسلحہ کی کوئي کمی نہ تھی ـ
    دوسری جانب چنگیزی افواج بھی تجربہ کار تھے ـ مگر چھوٹے چھوٹے قبائلي گروہوں پہ مشتمل تھے اور تعداد میں صرف ڈھائی لاکھ کے قریب ـ
    علاؤدین کے مقابلے میں چنگیز خان کمزور تھا -
    مگر اب پانسہ پلٹ چکا تھا - آسمانوں پہ فیصلے ہو چکے تھے ـ جس ذات نے علاؤدین کو طاقت رعب اور دبدبے سے نوازا تھا اسی ذات عالی نے یہ سب کچھ واپس لینے کا ارادہ کر لیا تھا ـ
    چنگیز خان اپنے بیٹوں کو حکومت دت کر تاتاری لشکر تیار کرنے میں مشغول ہو گیا ـ ڈھائ لاکھ سپاہ مسلمانوں پہ حملے کے لیئے تیار تھے ـ
    چنگیز خان نے اپنے ایک بیٹے جوجی کی کمان میں ایک لاکھ کا لشکر آگے روانہ کیا ـ
    سلطان علاؤدین خوارزم شاہ اس لشکر کے ساتھ جنگ کے لیئے تیار بیٹھا تھا ـ
    جوجی کا لشکر مسلمانوں کے لشکر کے آمنے سامنے ہوا ـ تاتاریوں کے ساتھ اللہ کی مدد کی پہلی نشانی یہ تھی کہ ان کے دلوں سے مسلمانوں کی ہیبت اور خوف اٹھا لیا گیا ـ چنگیز خان کے بھیجے ہوئے اس لشکر نے مسلمانوں پہ بہت زوردار حملہ کیا ـ ان کی دلیری نے مسلمان سپہ سالاروں کو حیران کر دیا ـ تاتاریوں کی تلواریں لہراتی رہیں اور مسلمانوں کے سر اُڑتے رهے ـ مسلمان لشکر جو آج تک جنگیں جیتنے کا عادی تھا ـ اب خوف میں مبتلا ہو کر پیچھے ہٹنے لگا ـ علاؤدین خوارزم شاہ اپنے لشکر کی تباہی اپنی آنکھوں سے دیکھ رہا تھا ـ جوجی مسلمانوں کے بادشاه کو ڈھونڈتا پھر رہا تھا ـ
    مسلمانوں کو شکست ہونے ہی والی تھی کہ بادشاه کا بڑا بیٹا صلاح الدین ایک کئی گنا چھوٹے لشکر کے ساتھ آن پہچان اور چنگیزی افواج پہ ٹوٹ پڑا ـ
    ***★★★***
    ۔
    سلطان کا بڑا بیٹا ایک نیک اور بہادر شخص تھا اور اپنے باپ کے کئی غلط اور غیر منصفانہ فیصلوں کی مذمت کر چکا تھا ـ جنگ میں الله کے ایک پسندیدہ بندے کی موجودگی نے الله کی رحمت کو مسلمانوں کی طرف متوجہ ہونے کا جواز دیا اور صلاح الدین خوارزمی کے چند ہزار فوجیوں نے جنگ کا نقشہ تبدیل کرنا شروع کر دیا ـ مسلمان فوجیوں کے دلوں میں ایک بار پھر ہمت اور جیت کی امنگ پیدا ہوئ اور انہوں نے مل کر تاتاریوں پہ حملے شروع کر دیئے ـ بھاگتے ہوئے مسلمان سپاہی واپس لوٹ آئے اور وقتی طور پہ لشکر کی کمان بادشاہ سے ہٹ کر اس کے بیٹے صلاح الدین کے پاس آ گئ ـصلاحآلدین خوارزمی نے کمال بہادری اور جنگی حکمت عملی کا مظاہرہ کرتے ہوئے تاتاری لشکر کو گھیرے میں لے لیا اور اب تاتاری بوکھلا کر بھاگنا شروع ہو گئے ـ چنگیز خان کے بیٹے جوجی نے اپنےلشکر کو بھاگنے کا حکم دیا اور تاتاری اپنی ہزاروں لاشیں چھوڑ کر بھاگ گئے ـ مسلمانوں نے ہاری ہوئ جنگ جیت لی ـ
    اب مسلمانوں کے بادشاہ علاؤدین کو یہ ایک آخری موقع ملا کہ اپنے گریبان میں جھانکے اور سمجھنے کی کوشش کرے کہ اس پہ عذاب کی سے احوال کیوں آئے ہوئے ہیں ـ اُدھر چنگیز خان کا لشکر واپس پہنچا اور اسے شہزادہ صلاحآلدین خوارزمی کی بہادری کی خبر دی ـ اپنے لشکر کا نقصان دیکھ کر چنگیز خان وقتی طور پہ رک گیا ـ مگر مسلمانوں پہ نظر رکھنے اپنے جاسوس سلطنت خوارزم بھیج دیئے ـ اس وقت مشرق میں پاکستاں اور ہندوستان کے علاقوں پہ قطب الدین ایبک کی قائم کردہ سلطنت دہلی کی حکومت تھی اور یہ ایک طاقتور مسلمان ریاست تھی ـ
    مغرب میں مشہور کُرد مسلمان فاتح صلاح الدین ایوبی کی قائم کردہ سلطنت تھی ـ اگر بادشاہ علاؤدین خوارزمی عقلمندی سے کام لیتا تو مشرق و مغرب ایلچی بھیج کر مسلمان حکومتوں سے مدد طلب کرتا ـ مگر خوارزم کے اس بادشاہ کی عقل پہ پردے پڑ چکے تھے ـ
    منگولوں کے اوپر فاتح ہونے کے باوجود بادشاہ ہمت ہار چکاتھا.ہر چیز کی تاثیر اللہ کے حکم سے آتی ہے ـ وہی پانی کسی کی زندگی اور کسی کی موت کا موجب بنتا ہے ـ
    اسی طرح جیت ہار کی تاثیر بھی الله کے حکم سے ہوتی ہے ـ
    منگولوں پہ جیت کا بادشاہ پہ الٹا اثر ہوا اور وہ چنگیز خان کے خوف میں مبتلا ہو گیا ـ

    منگولوں کا خوف علاﺅ الدین خوارزم شاہ کے دل و دماغ اتنا حاوی ہو ا کہ وہ بجائے اس کے کہ چنگیز خان کے مزید حملوں سے نبرآزما ہونے کے لئے مزید جنگی منصوبہ بندی کرتا غلطیوں پر غلطیاں کرتا رہا۔ اس کی سب سے بڑی غلطی یہ تھی کہ چنگیز خان کے لشکر کو شکست دینے کے بعد وہ اپنے تمام لشکر کو لے سمرقند پہنچ گیاحالانکہ اس کے لشکر کی تعداد اسوقت چار لاکھ کے قریب تھی۔ دوسرے بڑی غلطی اس نے یہ کی کہ اپنے لشکر کو اس نے مختلف حصوں میں تقسیم کردیا۔ اپنے لشکر میں سے اس نے ساٹھ ہزار کا لشکر اپنے ماموں اینال کی طرف روانہ کردیا جسکی وجہ سے چنگیز خان اس کی سلطنت پر حملہ آور ہوا تھا۔ تیس ہزار کا لشکر اس نے بخارا کی طرف اور تقریبا دو لاکھ کا لشکر سمرقند کی حفاظت کے لئے متعین کرکے باقی لشکر اپنے پاس رکھا ۔ اس طرح سلطان علاﺅ الدین خوارزم شاہ نے اپنی جنگی طاقت کو کمزور اور متشرکرلیا۔

    چنگیز خان کے جاسوسوں نے ساری خبریں اسے دے دیں اور چنگیز بھانپ گیا کہ مسلمانوں پہ حمله کرنے کا وقت آچکا ہے ـ اور لشکر لے کر خود آگے بڑھا ـ
    اب ہر شہر نے اپنے دفاع کا خود انتظام کیا ـ کیونکہ بادشاہ نے چنگیز خان سے بھاگنے کا فیصلہ کر لیا تھا ـ چنگیز کا لشکر پیچھے اور علاؤدین دو لاکھ کے لشکر کے ساتھ آگےا آفت بھاگتا پھر رہا تھا ـ شہزادہ صلاح الدین نے بڑا اصرار کیا کہ لشکر کی کمان اس کو دے دی جائے اور بادشاه مملکت میں روپوش ہو جائے ـ مگر جب عقل اندھی ہو جائے تو ٹھیک فیصلہ کرنا ممکن نہیں رہتا ـ علاؤدین کی بزدلی دیکھ کر اس کے سپہ سالار اس کا ساتھ چھوڑ نا شروع ہو گئے. یہ وہی بادشاہ تھا جو سلجوقی تھا اور جوانی گھوڑے کی پیٹھ پہ گزاری تھی ـ

    چنگیز شہر پہ شہر فتح کرتا گیا اور لوگوں میں دھشت پھیلانے کی غرض سے قتل عام کیا اور چوراہوں میں کٹے ہوئے سروں کے مینار بنوائے ـ
    وہ بہ آواز بلند مسلمانوں کو للکار کہ کہتا کہ میں تمہارے اوپر مسلط شدہ الله کا عذاب ہوں ـ مجھ سے اس طرح چھٹکارا نہیں پا سکو گے ـ کم لوگوں کو چنگیز کی بات سمجھ آتی ـ
    مگر ایک بزرگ نے دل کی آنکھوں سے ایک عجیب منظر دیکھا ـ

    چنگیزی افواج نے ان کے شہر کا محاصرہ کیا اور یہ تلوار اور ڈھال پکڑ کر شہر کی فصیلوں سے باہر جہاد کے لیئے نکلے ـ
    دل کی آنکھوں نے دیکھا کہ منگول فوجوں کے ساتھ فرشتے کھڑے ہیں اور کہ رہے ہیں " يا ايهلذين كفرة. قتلتالفجره ". اے کافرو مارو ان منافقوں کو ـ
    بزرگ نے جب یہ حال دیکھا کہ اللہ اتنا ناراض ہے کہ عذاب کے طور پہ کافروں کے ہاتھوں مسلمانوں کا قتل عام کروا رہا ہے اور ان کے دلوں سے مسلمانوں کا خوف نکالنے اور جوش ولولہ دلانے کے لیئے فرشتے مقررہ کر رکھے ہیں ـ سمجھ گئے کہ کیوں چنگیزی فوجوں سے جنگجو سپہ سالار اور بادشاہ ڈر کر بھاگ رہے پیں کیوں شہر کے شہر خوف کے مارے لڑے بغیر ام کے سامنے ہتھیار ڈال دیتے ہیں ـ سمجھ گئے کہ لڑ کر بھی ام سے چھٹکارا پانا ممکن نہیں ـ سمجھ گئے کہ ان چنگیزیوں سے لڑنا بیکار ہے ـ کیونکہ الله کے عذاب سے کوئ نہیں لڑ سکتا ـ تلوار اور ڈھال پھینکی اور اپنے گھر کا رخ کیا ـ وضو کیا اور اپنے اور تمام مسلمانوں کے لیئے توبہ استغفار کرنے لگے ـ

    www.pakistanaffairs.pk
    www.pakistanaffairs.pk

  7. #7
    Facebook Editor safriz's Avatar
    Join Date
    Jul 2012
    Posts
    5,658
    Thanks
    5027
    Pakistan Pakistan

    Re: اردو حکایات واقعات

    خلافت راشدہ میں بیت المال کا نظام
    مولانا غیاث احمد رشادی

    حضرت ابوبکر صدیق ؓ کا زمانہ اور بیت المال کا نظام

    خلیفۂ اوّل حضرت ابوبکر صدیق ؓ کے دور میں آمدنی اور اخراجات کے اصول و ضوابط بالکل سادہ تھے، مسلمانوں سے زکوٰۃ اور صدقات کی جو رقم وصول ہوتی تھی وہ ضرورتمندوں میں تقسیم کردی جاتی تھی، مال غنیمت، خمس یا مال فئی کی اتنا زیادہ بہتات نہ تھی کہ اس کی تقسیم کے لئے مستقلاً کوئی باقاعدہ نظام قائم کیا جائے، حضرت ابوبکر صدیق ؓ کے زمانہ میں اگرچہ کہ بیت المال قائم ہوگیا تھا، اس کے لئے انہوں نے ایک معمولی سی عمارت بھی بنوائی تھی، لیکن آمدنی کا ذخیرہ نہیں کیا جاتا تھا بلکہ آپؓ کا معمول یہ تھا کہ جو آمدنی بھی آتی تھی اس کو ضروریات میں خرچ کرنے کے بعد جو کچھ بچ جاتا تھا اس کو مسلمانوں میں تقسیم کردیتے تھے۔

    حضرت عمر فاروق ؓ کا زمانہ اور بیت المال کا قیام

    جب مسلمانوں نے فارس و روم کے علاقے فتح کئے اور دولت و ثروت کی ریل پیل ہونے لگی اور اس دولت کو مستحقین پر محض اپنی رائے سے تقسیم کرنا مجلس شوریٰ کی بس کی بات نہ رہی تو اس کے لئے باقاعدہ محکمہ کی ضرورت محسوس ہوئی اور بیت المال کو متمدن ملکوں کے اصول پر ترتیب دینا ضروری سمجھا گیا اور حضرت عمر ؓ نے جب خلافت کا باقاعدہ نظام قائم کیا اور اس نظام کے استحکام کے لئے مختلف شعبہ جات قائم کئے گئے تو انہی کے ساتھ بیت المال کو بھی وسعت دی گئی اور تمام صوبوں اور مرکزی مقامات پر بیت المال قائم کئے گئے اور ان کے لئے وسیع و عریض عمارتیں بھی بنوائی گئیں اور ان پر نہایت ہی لائق اور دیانت دار افسر مقرر کئے گئے، دارالخلافہ کے بیت المال کے افسر حضرت عبداللہ بن ارقم ؓ ، کوفہ کے افسر حضرت عبداللہ بن مسعودؓ اور اصفہان کے افسر خالد بن حرثؓ تھے، کوفہ کے بیت المال کی عمارت نہایت وسیع اور شاندار تھی۔

    حضرت عمرؓ کے زمانہ میں بیت المال کی ضرورت شدت سے اس وقت محسوس ہوئی جب ۱۵/ سن ہجری کو بحرین سے پانچ لاکھ کی کثیر رقم آئی، حضرت عمرؓ نے مجلس شوریٰ طلب کی اور ان سے مشورہ کیا کہ یہ رقم کس طرح خرچ کی جائے؟ حضرت علیؓ نے فرمایا جو کچھ رقم آپ کے پاس جمع ہو وہ سال بہ سال خرچ کردی جایا کرے، حضرت عثمانؓ نے فرمایا:آمدنی کی کثرت ہے، اگر پانے والوں کے نام ضبط تحریر نہ کئے جائیں تو یہ معلوم نہ ہوسکے گا کہ کس نے لیا اور کیا لیا اور کس نے نہ لیا۔

    ولیدؓ بن ہشام نے کہا، میں نے شاہانِ شام کے ہاں دیکھا ہے کہ انہوں نے اسی کام کے لئے دفتر قائم کررکھے ہیں ، حضرت عمرؓ نے اس رائے کو پسند فرمایا اور بیت المال کا محکمہ قائم کرنے کا حکم دیا اور عقیل بن ابی طالب، مخرمہ بن نوفل اور جبیر بن مطعم رضی اللہ عنہم کو بلاکر اس کی تدوین کا کام ان کے سپرد کیا، بیت المال کا صدر دفتر مدینہ منورہ میں قائم کیا گیا اور اسی صدر دفتر کے ماتحت تمام اسلامی صوبہ جات کے صدر مقامات میں بیت المال کے دفاتر قائم کئے گئے، صوبائی دفاتر میں مقامی باشندوں کی سہولت کے لئے ملکی زبانوں میں کام ہوتا تھا، عبدالملک بن مروان نے ماتحت تمام دفاتر کو بھی عربی زبان میں منتقل کرادیا۔

    بیت المال کے مداخل و مخارج (آمدنی و اخراجات)

    خلافت ِ راشدہ کے محاصل کی دو بڑی قسمیں کی جاسکتی ہیں ۔

    ۱۔ وہ محاصل جو غیر مسلموں سے متعلق ہیں ۔

    ۲۔ وہ محاصل جو مسلمانوں سے متعلق ہیں ۔

    ۱۔ بیت المال کو جو محاصل غیر مسلموں سے حاصل ہوتے تھے ان کی تفصیل یہ ہے:

    (الف) خراج: جن ملکوں پر مسلمان جنگ کے بعد قابض ہوگئے وہاں کی تمام زمینیں اہل ملک ہی کے قبضہ میں رہنے دی گئیں ، البتہ پیدا وار کے لحاظ سے ان پر نہایت قلیل مال گزاری مقرر کردی گئی ، مال گزاری کی شرح کا اندازہ اس سے کیا جاسکتا ہے کہ عراق میں گیہوں پر فی جریب (پون بیگھ پختہ) دو درہم سالانہ اور جَو پر اس سے نصف وصول کیا جاتا تھا، کھجور جو عراق کی خاص پیداوار تھی اور وہاں کی تجارت کا دارومدار بھی اسی پر تھا اس پر کوئی مال گزاری نہ تھی ، اس خفیف شرح مال گزاری کے باوجود عہد فاروقی میں صرف ملک عراق کا خراج دس کروڑدرہم تھا اور اس رقم میں ان زمینوں کی آمدنی شامل نہیں ہے جو شاہی خاندان کی جاگیریں یا مفرور باغیوں کی جائیدادیں تھیں اور جنہیں حضرت عمر ؓ نے "خالصہ" قرار دے کر بیت المال کے لئے مخصوص کردیا تھا، ان زمینوں کی آمدنی سترلاکھ درہم علیحدہ تھی، خالصہ نامی اراضی کی آمدنی رفاہِ عام کے کاموں پر خرچ ہوتی تھی اور کبھی کبھی ان ہی زمینوں میں سے اسلامی خدمات کے صلہ میں جاگیریں بھی دی جاتی تھیں ۔

    (ب) جزیہ: مسلمانوں نے جن ممالک کو فتح کرلیا یا جن ملکوں نے اسلامی نظام سے اپنا الحاق قبول کرلیا ، وہاں کے غیر مسلم باشندوں کو ذمی کہا جاتا تھا ، یعنی ایسے لوگوں کے جان و مال کی حفاظت اسلامی حکومت کے ذمہ فرض ہوجاتی تھی، اس حفاظت کے معاوضہ میں مسلمان غیرمسلموں سے سالانہ ایک قلیل رقم "جزیہ" کے نام سے وصول کیا کرتے تھے۔ جزیہ صرف ان لوگوں سے وصول کیا جاتا تھا، جو ۲۰/سال سے ۵۰/سال کی عمر کے لوگ ہوتے تھے، بوڑھوں ، بچوں ، عورتوں اور معذوروں پرجزیہ معاف تھا، ناداروں سے بھی جزیہ نہیں لیا جاتا تھا۔

    (ج) مال ِغنیمت: جنگ کے دوران مسلمانوں کو دشمنوں سے جو کچھ ہاتھ لگتا تھا وہ مال غنیمت کہلاتا تھا، مال غنیمت کا پانچواں حصہ جس کو خمس کہا جاتا ہے بیت المال کے حوالے ہوتا تھا اور چار حصے مجاہدین میں تقسیم کردیئے جاتے تھے۔

    ۲۔ بیت المال کو جو محاصل مسلمانوں سے حاصل ہوتے تھے ان کی تفصیلات یہ ہیں :

    (الف) زکوٰۃ: مسلمانوں کے مال، سامانِ تجارت اور مویشی کی ایک معین مقدار پر اس کا چالیسواں حصہ بطور محاصل کے مقرر کیا گیا ، جو سالانہ وصول کیا جاتا تھا

    (ب) عشر : مسلمانوں کی زمینوں پر پیداوار کا دسواں حصہ مقرر ہوا اور عشر ہر فصل پر وصول کیا جاتا ہے نہ کہ سالانہ

    (ج) صدقات : صدقۃ الفطر، قربانی اور کفارہ وغیرہ کی رقوم اور ملی اور قومی ضرورتوں کے وقت عام چندوں کی رقوم سب صدقات میں شامل ہیں ۔

    (د) عشور : مسلمان سود اگر جب اپنا مال تجارت دوسرے ملکوں میں لے جاتے تو وہاں ان سے چنگی وصول کی جاتی تھی۔

    قابل توجہ بات : غیر مسلموں سے محاصل کی وصولی کے سلسلہ میں خلافت راشدہ کے اسلامی نظام حکومت میں مسلمانوں کے مقابلہ میں غیر مسلموں پر محاصل کا بوجھ بہت کم ڈالا گیا اور ان محاصل کی وصولی میں بھی بڑی احتیاط برتی جاتی تھی ، تاکہ ذمیوں پر ظلم نہ ہونے پائے۔

    قاضی ابو یوسفؒ نے کتاب الخراج میں لکھا ہے کہ جب عراق سے سالانہ خراج وصول ہوکر آتا تو حضرت عمرؓ ریاستوں کے معززین کو شہادت میں طلب کرتے ، انہیں اللہ کی قسم کھاکر اقرار کرنا پڑتا کہ خراج کی وصولیابی میں کسی مسلم یا غیر مسلم پر ظلم نہیں کیاگیا ہے اور جو کچھ وصول ہوا ہے وہ بخوشی خاطر ہوا ہے، امام ابو الفرج ابن جوزی نے مناقب عمر میں لکھا ہے کہ عمر بن میمون کی حضرت عمرؓ سے ان کی شہادت سے چند دن قبل ملاقات ہوئی، انہوں نے دیکھا کہ حضرت عمررضی اللہ عنہ حذیفہ بن یمان اور عثمان بن حنیف رضی اللہ عنہما سے متفکرانہ انداز میں فرمارہے ہیں ۔

    تم نے عراق میں محاصل کی وصولیابی میں کیا طریقہ اختیار کیا ہے ؟ مجھے خوف ہے کہ تم نے مقررہ شرح سے زیادہ وصول نہ کرلیا ہو، ان دونوں نے عرض کیا، امیرالمومنین ایسا نہیں ہوسکتا، حضرت عمرؓ نے فرمایا، اگر زندگی بخیر رہی تو میں ایسا انتظام کرجاؤں گا کہ عراق کی کوئی بیوہ عورت کسی کی محتاج نہ رہے گی، اس واقعہ کے چار روز بعد حضرت عمرؓ شہید ہوگئے۔

    بیت المال کے مداخل و مخارج کا یہ انتظام تھا کہ ہر صوبہ کی آمدنی وہاں کے بیت المال میں آتی تھی، یہاں کی حکومت کے مصارف سے جو رقم بچتی تھی وہ صدر خزانہ یعنی مدینہ منورہ کے بیت المال بھیج دی جاتی تھی، حضرت عمرؓ اس کے متعلق عمال کے نام احکام بھیجتے رہتے تھے ، چنانچہ مصر کے والی حضرت عمرو بن العاصؓ کے نام ان کا یہ فرمان ملتا ہے کہ خزانہ میں جو آمدنی جمع ہوتی ہو اس میں سے مسلمانوں کے وظائف اور ضروری اخراجات سے جو کچھ بچ جائے اس کو دارالخلافہ بھیج دو۔

    حساب کتاب

    بیت المال میں جو کچھ آمدنی آتی تھی اس کا حساب و کتاب نہایت صحیح طور پر مرتب کیا جاتا تھا، اکثر اوقات خود حضرت عمر فاروق ؓ زکوٰۃ اور صدقات کے مویشیوں کو شمار فرماتے تھے اور ان کا رنگ، حلیہ دیکھ کر لکھاتے تھے ، ایک مرتبہ صدقہ کے اونٹ آئے ہوئے تھے، حضرت فاروق اعظمؓ، حضرت علی ؓ اور حضرت عثمانؓ کے ساتھ ان اونٹوں کو دیکھنے کے لئے گئے، حضرت عثمانؓ سایہ میں بیٹھ کر لکھ رہے تھے اور حضرت علی ؓ ، حضرت عثمان ؓ کے پاس کھڑے جو کچھ فاروق اعظمؓؓ کہتے تھے وہ حضرت عثمان ؓ کو بتاتے اور لکھاتے جاتے تھے اور خود فاروق اعظمؓؓ دوپہر کے وقت دھوپ میں کھڑے ہوئے ایک سیاہ چادر پہنے اور دوسری چادر سر پر ڈالے ہوئے صدقہ کے اونٹوں کو شمار کرتے تھے۔

    بیت المال کی حفاظت

    بیت المال میں موجود ساری چیزیں مسلمانوں کی امانت ہوتی ہیں ، خلافت ِ راشدہ کے دور میں بیت المال کی حفاظت کا اس قدر اہتمام تھا کہ آج شائد اس کے واقعات افسانہ معلوم ہوں گے، بیت المال کا ایک ایک حبہ بے محل صرف نہ ہونے پاتا تھا، حضرت عمر فاروق ؓ بیت المال کی ایک ایک امانت کی حفاظت بہ نفس نفیس فرماتے تھے، ایک مرتبہ بیت المال کا ایک اونٹ بھاگ گیا ، حضرت عمرؓ اس کی تلاش میں نکلے عین اسی وقت ایک رئیس حضرت احنف بن قیسؓ آپ سے ملنے کے لئے آئے، دیکھا تو حضرت عمرؓ دامن چڑھائے اِدھر اُدھر دوڑ رہے ہیں ، حضرت احنف ؓ کو دیکھا تو فرمایا:

    آؤ تم بھی میرا ساتھ دو! بیت المال کا ایک اونٹ بھاگ گیا ہے، تم جانتے ہو ایک اونٹ میں کتنے غریبوں کا حق ہے؟ ایک شخص نے عرض کیا: امیرالمؤمنین!آپ کیوں تکلیف اٹھاتے ہیں ؟کسی غلام کو حکم دیجئے، حضرت عمرؓ نے فرمایا، مجھ سے بڑھ کر کون غلام ہوسکتا ہے؟

    فاروق اعظمؓ کی احتیاط

    فاروق اعظمؓ کے دور میں قیصر و کسریٰ کے خزانے لدے چلے آرہے تھے، لیکن اس میں حضرت عمرؓ کا حصہ صرف بقدر کفاف روزینہ تھا، اس کے علاوہ اس سے ادنیٰ فائدہ اٹھانا بھی اپنے لئے حرام سمجھتے تھے، ایک مرتبہ بیمار پڑے لوگوں نے دوا میں شہد تجویز کیا، بیت المال میں شہد موجود تھا، نہایت معمولی سی چیز تھی ، لیکن بغیر مسلمانوں سے اجازت لئے ہوئے اسے لینا،آپ کی طبیعت نے گوارا نہ کیا، مسجد نبوی میں جاکر مسلمانوں سے کہا کہ اگر آپ لوگ اجازت دیں تو تھوڑا سا شہد لے لوں ۔

    ایک مرتبہ مال غنیمت آیا،آپ کی بیٹی حضرت حفصہ ؓ نے آکر عرض کیا: امیرالمؤمنین!میرا حق مجھ کو دیجئے، میں ذوی القربیٰ ہوں ، حضرت عمرؓ نے جواب دیا: جانِ پدر! تیرا حق تیرے ذاتی مال میں ہےیہ تو غنیمت کا مال ہے ، یہ خشک جواب سن کر حضرت حفصہؓ لوٹ گئیں۔

    حضرت عمرؓ کو اپنے مرحوم بھائی زید ؓ کی بچی سے والہانہ محبت تھی، ایک دن اس نے بیت المال کے زیورات سے ایک معمولی انگوٹھی اٹھاکر پہن لی، آپ اسے آزردہ کرنا نہ چاہتے تھے، اس لئے پیار کرکے بہلاتے رہے اور چپکے سے انگوٹھی نکال کر زیورات کے ڈھیر میں ڈال دی ، ایک مرتبہ حضرت ابو موسیٰ اشعری ؓ نے بیت المال کا جائزہ لیا تو اس میں صرف ایک دینار نکلا، انہوں نے اس خیال سے کہ ایک درہم کیوں پڑا ہے؟ حضرت عمرؓ کے ایک بچہ کو دے دیا، حضرت عمرؓ کو معلوم ہوا تو آپ نے فوراً بیت المال میں داخل کردیا اور ابو موسیٰ اشعریؓ کو بلا کر فرمایا کہ تم کو مدینہ میں آل عمرؓ کے سوا کوئی کمزور نظر نہ آیا؟ تم چاہتے ہو کہ قیامت کے دن تمام امت محمدیہ کا مطالبہ میری گردن پر رہے۔

    ایک مرتبہ تجارت کے سلسلہ میں کچھ روپیوں کی ضرورت پڑی، حضرت عبدالرحمن بن عوفؓ سے قرض مانگا ، انہوں نے کہا: آپ امیرالمومنین ہیںڈ بیت المال سے قرض لے سکتے ہیں، آپ نے فرمایا: میں بیت المال سے نہیں لوں گا، کیونکہ اگر میں ادا کرنے سے پہلے مرگیا تو تم لوگ میرے وارثین سے مطالبہ نہ کرو گے اور یہ بار میرے سر جائے گا، اس لئے ایسے شخص سے قرض لینا چاہتا ہوں جو میرے متروکہ سے وصول کرنے پر مجبور ہو۔

    بیت المال اور حضرت ابوبکر ؓ کی احتیاط

    جب حضرت ابوبکر صدیق ؓ کی وفات کا وقت آیا تو انہو ں نے کہا کہ بیت المال کا جو کچھ سامان میرے پاس ہو سب واپس کردو، کیونکہ میں اس مال میں سے اپنے ذمہ کچھ رکھنا نہیں چاہتا، میری وہ زمین جو فلاں مقام پر واقع ہے، وہ اس رقم کے معاوضہ میں دے دو ، جو آج تک میں نے بیت المال سے لی ہے، چنانچہ وہ زمین ایک اونٹنی ، ایک قلعی گر غلام اور کچھ غلہ جس کی قیمت پانچ درہم ہوگی،یہ سب چیزیں حضرت عمرؓ کو دے دی گئیں ، حضرت عمر ؓ نے کہا کہ ابو بکرؓ نے اپنے بعد والوں کو کس قدر مشکل میں مبتلا کردیا ہے، ایک روایت میں ہے کہ حضرت ابوبکر صدیق ؓ نے لوگوں سے کہا کہ حساب لگاؤ کہ جب سے میں خلیفہ ہوا ہوں میں نے بیت المال کی کتنی رقم خرچ کی ہے، جو کچھ میزان نکلے اس کو میری جائیداد سے وصول کرلو، چنانچہ حساب لگایا گیا تو پورے زمانہ ٔ خلافت کی رقم آٹھ ہزار درہم نکلی۔

    حضرت ابوبکر صدیق ؓ کی رفاہی خدمات

    حضرت ابوبکر صدیق ؓ نے ایسے سات آدمیوں کو خرید کر آزاد کردیا جن کو کفار دین اسلام قبول کرنے کی وجہ سے ایذاء دیتے تھے، جن میں حضرت بلالؓ، حضرت عامر بن فہیرہؓ ، زنیرہؓ ، نہدیہؓ وغیرہ شامل ہیں ۔

    سردی کے دنوں میں حضرت ابوبکر ؓ کمبل اور کپڑے خرید کر بیوہ عورتوں اور یتیم بچوں میں تقسیم فرماتے تھے، ہر روز بازار جاکر مجبور عورتوں اور مردوں کی ضروریات کی اشیاء خرید کر لادیتے تھے، بکریوں کا دودھ خود اپنے ہاتھوں سے دوہ کر غریبوں میں تقسیم فرماتے تھے، حضرت ابوبکر ؓ کے خلیفہ بن جانے کے بعد ایک عورت نے کہا کہ اب تو تم خلیفہ بن گئے ہو، اب ہم ہمارے گھر میں دودھ کہاں سے لے آئے گا؟ حضرت ابوبکرؓ نے فرمایا:بخدا! میں تم لوگوں کے لئے ضرور دودھ دوہوں گا، میں اس خلافت کی وجہ سے اپنی عادت کو نہ بدلوں گا، چنانچہ جب تک زندہ رہے بکریوں کا دودھ دوہ کر غریبوں کو دیتے رہے ۔

    حضرت عمرؓ کی رفاہی خدمات

    کھانا کھلانا : حضرت سلمہ بن قیسؓ کے قاصد جب مدینہ منورہ پہنچے تو حضرت عمر ؓ مسلمانوں کو کھانا کھلارہے تھے اور خود اس کی نگرانی فرما رہے تھے ، باربار اپنے خادم کو حکم دیتے کہ وہ ان کے لئے مزید روٹی اور گوشت کا انتظام کرے، جب لوگ کھانا کھا کر فارغ ہوئے تب آپؓ نے کھانا تناول فرمایا۔

    تقسیم وظائف: وظائف کی تقسیم کے سلسلہ میں آپ کا معمول تھا کہ آپ نے ایک رجسٹر تیار کر رکھا تھا اور ہر مستحق تک اس کا معینہ وظیفہ پہنچاتے تھے۔

    ہنگامی امداد: قبیلۂ محارب میں جب قحط سالی ہوئی اور وہ لوگ بھنی ہوئی کھالیں کھانے پر مجبور ہوئے تو حضرت عمرؓ نے خود وہاں پہنچ کر ان کے حالات کا جائزہ لیا اور اپنے اسلمؓ نامی غلام کو ساتھ لیا اور خود ضروری سامان اپنے کاندھے پر لاد کر وہاں پہنچایا اور آپؓ کا یہ عمل وہاں کی قحط سالی کے ختم ہونے تک جاری رہا۔

    اسی طرح سن ۱۸ھ میں سرزمین عرب میں بڑا سخت قحط پڑا، اس موقع پر حضرت فاروق اعظمؓ ؓ نے عجیب و غریب سرگرمی کا مظاہرہ کیا اور مختلف ممالک اسلامیہ سے بڑے پیمانہ پر غلہ منگوایا، قحط زدہ افراد کی تحقیق کے لئے حضرت زید بن ثابتؓ کو مقرر کیا اور باقاعدہ ہر ایک کے لئے غلہ جاری کیا، پھر اہل مدینہ کو لیکر نماز استسقاء کا اہتمام کیا اور حضرت عباس ؓ کے وسیلہ سے بڑی دیر تک دعاء مانگتے رہے، مؤرخین نے لکھا ہے کہ آپؓ کی دعاء ختم نہ ہوئی تھی کہ حق تعالیٰ نے ایسی بارش کا انتظام کیا جس سے بہت جلد قحط سالی کی شکایت دور ہوگئی۔

    بوڑھوں کی مدد : ایک موقع پر حضرت عمرؓ نے ایک بوڑھے کو بھیک مانگتے دیکھا تو پوچھا، کیا تم بھیک مانگتے ہو ؟ اس نے کہا کہ مجھ پر جزیہ لگایاگیا ہے ، حالانکہ میں بالکل مفلس ہوں ، حضرت عمر ؓ فوراً اسے اپنے گھر لے آئے اور کچھ نقد دے کر ذمی مساکین کے لئے وظیفہ مقرر کردیا جائے، خدا کی قسم یہ بات بالکل انصاف کے خلاف ہے کہ ان کی جوانی میں یہ ہمارے کام آئیں اور ان کے بڑھاپے میں ہم ان کی خبر گیری نہ کریں ۔

    غلاموں کا خیال: حضرت عمر ؓ نے جب اسلامی فوج کے لئے تنخواہیں مقرر کیں تو اسی قدر تنخواہ ان کے غلاموں کی بھی مقرر کی تاکہ ان علاقوں کو تنگی نہ ہو۔

    پریشان حال مسافروں کی امداد: ایک رات حضرت فاروق اعظمؓ گشت کررہے تھے کہ خیمہ سے ایک دیہاتی کے رونے کی آواز آئی، معلوم ہوا کہ اس کی اہلیہ درد زہ میں مبتلا ہے، فوراً گھر واپس آئے اور اپنی اہلیہ حضرت ام کلثوم ؓ کو ساتھ لیا، تھوڑی دیر بعد جب بچہ پیدا ہوا تو آپ کی اہلیہ نے اندر سے بچہ کی پیدائش کی خبر دی اور کہا ائے امیرالمؤمنین اپنے دوست کو مبارکباد دیجئے، اس دیہاتی نے جب امیرالمومنین کا نام سنا تو حیران ہوگیا، حضرت نے فرمایا: کچھ خیال نہ کرو، کل میرے پاس آنا میں بچے کے لئے وظیفہ مقرر کردو ں گا۔

    ان کے علاوہ آپؓ اپنی خلافت کی مصروفیات میں ضرور کچھ وقت نکالتے تھے اوراندھوں ، معذوروں اور ضعیفوں کی اس طرح خدمت کرتے تھے کہ ان حضرات کو پتہ تک نہ چلتا تھا کہ کونسا فرشتہ صفت انسان ہمارے کام کرجاتا ہے؟ آپ خود مجاہدین کے گھر جاتے اور ان کے لئے ضروریات اور سودا سلف خرید لاتے اگر مجاہدین کے خطوط آتے تو خود ان کے گھروں تک پہنچاتے تھے اور اگر گھر میں کوئی پڑھا لکھا نہ ہوتا تو خود ہی چوکھٹ پر بیٹھ کر خطوط سنادیتے۔

    حضرت عثمان غنی ؓ کی رفاہی خدمات

    حضرت عثمان غنی ؓ ابتداء ہی سے بڑے ہمدرد تھے اور موقع بموقع رفاہی خدمات میں حصہ لیتے رہتے تھے، مدینۃ المنورہ میں جب مسلمان میٹھے پانی کے سلسلہ میں پریشان تھے تو حضرت عثمان ؓ نے بیر رومہ کا کنواں بیس ہزار درہم میں ایک یہودی سے خرید کر مسلمانوں کے لئے وقف کردیا، غزوۂ تبوک کے موقع پر جب جہاد کے لئے مال و اسباب کی ضرورت ہوئی تو آپ نے دینار و درہم اور جنگی ساز و سامان کے ذریعہ مسلمانوں کی مدد کی، اس کے علاوہ ایثار و ہمدردی آپ کی طبیعت میں فطرتاً شامل تھی، بیواؤں اور یتیموں کی خبر گیری کرتے تھے، ہر جمعہ ایک غلام ضرور آزاد کرتے تھے، ایک مرتبہ حضرت طلحہؓ نے ایک بڑی رقم بطور قرض لی ، کچھ دنوں بعد واپس دینے آئے تو حضرت عثمانؓ نے لینے سے انکار کردیا اور فرمایا کہ یہ تمہاری مروت کا صلہ ہے۔

    حضرت علی ؓ کی رفاہی خدمات

    حضرت علیؓ رسولِ رحمت صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ میں کاتب وحی تھے اور آپ ﷺکے فرامین تحریر فرمایا کرتے تھے، رسول رحمت ﷺنے یمن میں اشاعت ِ اسلام کے بعد حضرت علیؓ کو وہاں کا قاضی مقرر فرمایا، عوام کے عائلی، سماجی اور ملی مسائل کے فیصلے کرنا بھی رفاہی خدمات میں شامل ہے، حضرت علیؓ نے اس اہم فریضہ کو بڑی لیاقت اور ذہانت کے ساتھ انجام دیا، حضرت عمرؓ فرمایا کرتے تھے: "ہم میں سب سے بہتر مقدمات کا فیصلہ کرنے والے علیؓ ہیں "۔
    https://www.facebook.com/pakistanPKa...type=1&theater

  8. #8
    Junior Member m9maken's Avatar
    Join Date
    Jan 2015
    Posts
    1
    Thanks
    0
    Pakistan Pakistan

    Re: اردو حکایات واقعات

    <بابا فرید>
    پتا یار دی یاری دا انج لگدا,
    جدوں یار نوں یار دی کھچ ہو وے,
    ادھروں میں نکلاں تے ادھروں توں نکلیں,
    ملاپ دواں دا گلی دے وچ ہو وے,
    وجے تیر جدائی دا وچ سینے,
    زخم 2 ہوون تے درد 1 ہووے,
    !! غلام فریدا !!
    یاری دا مزا تاں آوندا,
    لاشاں 2 ہوون تے قبر 1 ہوو ..

  9. #9
    Facebook Editor safriz's Avatar
    Join Date
    Jul 2012
    Posts
    5,658
    Thanks
    5027
    Pakistan Pakistan

    Re: اردو حکایات واقعات

    1050 عیسویں کے قریب خراسان میں دو بچے پیدا ہوئے ـ ایک کا نام عمر خیّام اور دوسرے کا نام حسن الصباح پڑا ـ دونوں نے بڑے ہو کر سمرقند و بخارا کی درسگاہوں سے ریاضی کیمیا گری قرآن و حدیث اور کئی طرح کے علوم حاصل کیئے ـ دونوں اپنے اساتذہ کے چہیتے طالبعلم رہے اور وقت کے تمام علوم میں کمال حاصل کیا ـ
    عمر خیام کا نام آج بھی علمی حلقوں میں تعظیم سے لیا جاتا ہے اور ان کے ہم عصر عالم حسن الصباح رہتی دنیا تک موت قتل و غارت کا نشان اور اسلامی دنیا کی پہلی اور سب سے خوفناک دھشتگرد تنظیم Assassins کا بانی بنا ـ آج کے زمانے کے طالبان ـ ٹی ٹی پی اور دوسری دھشتگرد تنظیمی حسن بن صباح کی حشیشین تنظیم کے نقشہ پہ.قائم.ہیں.اور انہی اصولوں پہ چلتی ہیں

    2حسن.الصباح سترہ سال کی عمر میں ایک عالم بن چکا تھا اور انتھائ شعلہ بیان اور بحث کرنے میں ماہر تھا ـ سلطنت خوارزم کے سنی مدرسوں میں تعلیم کے بعد اس کا رابطہ مصر کے سلطنت فاطمید کے اسماعیلی شیعہ حکمراں سے ہوا اور ان کے عقائد میں اسے اپنی طاقت اور حکومت کی غرض پوری کرنے کی امید نظر آئ ـ
    حسن بن صباح ایک مغرور اور ضدی انسان تھا جس میں عاجزی اور مصلحت پسندی نہ تھی ـ(جیسے آج کے طالبان میں کوئ مصلحت پسندی نہیں ) ہر جگہ بحث کے ذریعے اپنی جگہ بنانے یبنانے کوشش کرتا اور علماء اکتا کر اس سے قطع تعلق کرتے رہے ـ اور اس کے سینے میں نفرت اور انتقام کی آگ بھڑکتی رہی ـ
    جب عالم دین غرور میں مبتلا ہو جائے تو فتنے کا ذریعہ بن جا تا ہے ـ جیسے ابلیس عالم تھا مگر غرور میں مبتلاء ہو کر مردود ہو گیا ـ
    حسن الصباح کا حال بھی ایسا ہی تھا ـ علم بہت تھا مگر خوف خدا نہ تھا ـ اور علم کو لوگوں کو اپنا پرستار اور تابع بنانے کے ذریعے کے.طور پہ استعمال کرتا ـ
    جب علماء نے اس کے عجیب و غریب عقائد کو رد کر دیا تو اس نے براہ راست عوام پہ تبلیغ شروع کی (جیسے ملا ریڈیو عوام کو براہ راست اپنی عجیب و غریب عقائد کی تبلیغ کرتا تھا) ـ
    گاؤں گاؤں گھوما اور کئی سال لگا کہ اپنے ہزاروں ماننے والے بنائے ـ
    اسلام.اور تبلیغ کی آڑ میں یہ دراصل طاقت شہرت اور شخصی حکومت کی جدوجہد تھی ـ
    اب حسن صباح نے اپنا الگ فرقہ بنانے کی ٹھان لی اور ایسے مناسب علاقے کی تلاش میں نکل پڑا جہاں چھپنا آسان ہو اور لوگ کم.علم مگر جنگجو ہوں اور وقت کے حکمرانوں سے ناراض -

    3
    آخر کئ سال کی تلاش کے بعد اٹھتیس سالہ حسن الصباح شمالی ایران کے علاقے الموت پہنچا ـ علاقہ البرز پہاڑی سلسلے کے درمیان میں تھا اور انتھائ دشوار گزار ـ آنے جانے کے لیئے چند درے اور گھاٹیاں تھیں جن پہ باآسانی نظر رکھی جا سکتی تھی ـ
    باقی تمام اطراف سے پہاڑوں نے گھیر رکھا تھا ـ
    علاقے میں ایک پرانا قلعہ تھا جو ایک پہاڑ کی چوٹی پہ تھا اور ناقابل تسخیر تھا ـ علاقے کے لوگ انتہائ سخت جان اور جنگجو تھے اور وقت کی حکومت خوارزم سے ناراض. دین.اسلام چاہتے تھے مگر اپنی مرضی کا ـ حسن الصباح کو وہ تمام حالات اس جگہ مل.گئے جن کی وہ تلاش میں تھا اور اس نے اس علاقے کو اپنا گھر بنانے کا کام شروع کر دیا ـ

    5علاقے کے لوگ جنگجو تھے اور اسلام کے ساتھ ساتھ اپنی پرانی قبائلي روایات کے بھی پابند تھے ـ انھیں اسلام پسند تھا مگر ایسا اسلام جس میں نرم دلی ـ معافی اور درگزر نہ ہو بلکہ خوب جنگ و جدال اور ایک خون کا بدلہ کئی خون ہو ـ کیونکہ ایسی تعلیمات ان کے پرانے قبائلی طور طریقوں میں تھیں ـ
    حسن الصباح نے ان کو بالکل ایسا ہی اسلام دیا جس میں صرف سختی تھی ـ بدلہ لینا فرض اور معافی بزدلی تھی ـ ایسا اسلام جس میں حشیشین کے علاوہ تمام مسلمان منافق اور واجب القتل تھے ـ (جیسے آج طالبان کے اسلام میں کوئي نرمی نہیں اور اُن کے علاوہ تمام مسلمان منافق اور واجب القتل ہیں ) ـ
    امام یا حکمران کی خاطر خودکشی جائز تھی اور دشمنوں کو تڑپا تڑپا کر مارنا دلیری تھی ـ

    4 حسن الصباح کو وہ تمام حالات اس جگہ مل.گئے جن کی وہ تلاش میں تھا اور اس نے اس علاقے کو اپنا گھر بنانے کا کام شروع کر دیا ـ 1088 میں الصباح نے الموت کے علاقے کے لوگوں میں اپنے طرز کی مسخ شدہ اسلامی تبلیغ شروع کی جو اس کے دعوے کے مطابق اسماعیلی شیعت تھی اور وہ اسماعیلی شیعت کا تیرہواں امام تھا ـ مگر دراصل اس نے طاقت اور حکومت بغز و عناد کی اپنی ذاتی خواہشات کی تکمیل کے لیئے ایک نیا طریقہ بنایا اور اسے ہشیشین کا نام دیا -

    6
    دو سال کے قلیل عرصے میں خراسان کے علاقے الموت کے لوگ حسن بن صباح پہ جان چھڑکنے لگے ـ
    1090 میں چالیس سالہ حسن بن صباح نے پہاڑ کی چوٹی پہ بنا قلع الموت خرید لیا اور اسے اپنی مستقل رہائشگاہ اور پایہ تخت ٹھرایا ـ قلعے کے سات برج بنائے گئے جو سات زمیں آسمان کی نمائندگی کرتے ـ ہر برج پہ سونے کی چادر چڑھائی گئی جو وادی میں موجود شہر پہ چمکتے اور لوگوں کو یہ باور کراتے کہ قلعے میں موجود حسن بن صباح انھیں دیکھ رہا ہے ـ
    حسن نے اپنے لیئے "شیخ الجبل" کا لقب چنا ـ
    شہر میں عین شریعت نافذ کی گئی مگر شراب کو جائز قرار دیا گیا ـ نمازوں میں مسجدیں بھری ہوتیں ـ مگر اکثر لوگ اپنی خوشی کے بجائے سزاؤں کے ڈر سے اسلامی احکامات پورا کرتے ـ گنہگاروں کو سر عام سخت اذیت دی جاتی (جیسے طالبان سرعام سزائیں دیتے ہیں) ـ

    7
    قلعہ ملنے کے بعد حسن بن سباح نے اپنی طب اور کیمیا گری کے علوم استعمال کرتے ہوئے خاص معجون اور مرکبات بنائے جن سے وہ لوگوں کی نفسیات میں تبدیلی پیدا کرتا-
    قلعہ کے ایک خفیہ حصے کو جنت کے طرز پہ بنایا گیا جھاں صاف پانی کی نہروں میں مخصوص مرکبات ڈالے جاتے تاکہ پانی پینے والوں کو نشہ چڑھ جائے اور ان نہروں کو جنت کی شراب کی نہر کا نام دیا.
    اسی طرح وسیع باغ میں سفید سنگ مرمر کے کمرے اور برآمدے بنا کر اسے جنت کے محلات کا نام دیا ـ اور یورپ سے سفیدفام اور کم عمر لڑکیاں منگوا کر انھیں اس باغ میں گھمایا جاتا تاکہ دیکھنے والے کو حور کا شائبہ ہو ـ
    حسن الصباح چنے ہوئے نوجوانوں کو خاص مشروب پلاتا جس سے وہ نیم غنودگی کی حالت میں آ جاتے ـ اس حالت میں انھیں یہ مصنوعی جنت دکھائ جاتی اور وہاں کی حوروں کا دیدار کرایا جاتا ـ
    یہاں تک کہ دیکھنے والا یقین کر بیٹھتا کہ اس نے جنت دیکھ لی ـ پھر اسے بیہوش کر کہ حسن بن صباح کے دربار میں لایا جاتا ـ اور کوئ مشروب پلایا جاتا جس سے اس کے ہوش و حواس واپس آجاتے ـ

    8 پھر حسن بن صباح اس شخص کو اور "Brain wash" کرتا اور اپنا علم اور بحث کی صلاحیت استعمال کر کہ اس کو باور کرا دیتا کہ حسن بن صباح زمین میں خدا کا خلیفہ ہے (جیسے ملا عمر اور طالبان زمین میں خدا کا خلیفہ ہونے کے دعوے کرتے ہیں) ـ
    اور کہتا کہ اس کے علاوہ کسی اور کی حکومت ناجائز حکومت ہے (جیسے طالبان اپنی حکومت کے علاوہ تمام حکومتیں غیر اسلامی اور ناجائز قرار دیتے ہیں) ـ
    اور تمام حکومتوں کو یا تو حشیشین کی حکومت ماننی ہوگی یا انھیں ختم کرنا ہوگا.
    اس کے بعد وہ اس شخص سے وفاداری کی بیعت لیتا اور اسے "فدائی" کا لقب ملتا ـ اور کہا جاتا کہ جنت میں واپس جانا ہے تو حسن الصباح کی من و عن اطاعت کرے چاہے جان دینی پڑے ـ
    فدائ کا کام جاسوسی سے لے کر خودکش حملے تک کچھ بھی ہو سکتا تھا ـ
    اس طریقے پہ تیار کیئے گئے فدائ عموماً نوجوان ہوتے جو جعلی حوریں دیکھنے کے بعد اور جعلی جنت کی شراب و عیش دیکھنے کے بعد اس میں واپس جانے کے شدید خواہشمند ہوتے اور نوجوانی کے باعث ان کی شہوت اور عیش کی خواہش جنون کی صورت اختیار کر لیتی ـ
    فدائین کے جنون کو دیکھ کر حسن بن صباح انھیں کام دیتا ـ کچھ کو صرف جاسوسی پہ لگایا جاتا ـ اور کچھ ایسی مشکل مہم پہ بھیجے جاتے جہاں سے زندہ لوٹ آبا ممکن نہ ہوتا ـ جیسے بادشاہوں کے محل میں ان پہ قاتلانہ حملہ کرنا جس کے بعد بج نکلنا نا ممکن ہوتا ـ (آج کے خودکش بمبار بھی انھی وجوہات کی بناء پہ کم عمر نوجوان ہوتے ہیں) ـ Extracts from Sir Henry Sharp's book "The Assassins" written in 1927

    https://www.facebook.com/pakistanPKa...type=1&theater

Similar Threads

  1. Replies: 0
    Last Post: 2nd December 2013, 22:28
  2. Replies: 0
    Last Post: 5th November 2013, 01:29
  3. Replies: 6
    Last Post: 24th December 2012, 19:45
  4. Replies: 0
    Last Post: 15th December 2012, 12:42
  5. Replies: 1
    Last Post: 15th September 2012, 09:31

Bookmarks

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •  
Join us on twitter Follow us on twitter